تھرپارکر بچوں کی ہلاکت نہ رک سکی مزیدچار بچے مختلف وبائی امراض سے جان کی بازی ہار گئے

تھرپارکر۔مٹھی۔ (اے پی پی)تھرپارکر میں گزشتہ روز چار بچے مختلف وبائی امراض کی وجہ سے فوت ہوئے،116 بچے مختلف ہسپتالوں میں زیر علاج ہیں، سرکاری ہسپتالوں میں صحت کی سہولیات موجود ہیں، ان خیالات کا اظہار ڈپٹی کمشنر تھرپارکر ڈاکٹر شہزاد طاہر تھیم نے تھرپارکر ضلع میں زوزانہ کی بنیاد پر جاری صحت و علاج معالج کی سہولیات کی فراہمی کے متعلق آگاہ کرتے ہوئے کیا، انہوں نے کہا ہے کہگزشتہ روز 190 بچے ضلع بھر کی سرکاری اسپتالوں میں علاج کے لئے لائے گئے، جس میں سے67بچوں کو صحت کی بہترین سہولیات فراہم کرتے ہوئے صحتیاب کرکے ڈسچارج کردیا گیا جبکہ116بچے اس وقت ضلع بھر کی مختلف اسپتالوں میں زیر علاج ہیں جن کو صحت کی بہترین سہولیات فراہم کی جارہی ہیں اس کے علاوہ ضلع کی تمام سرکاری اسپتالوں میں 890بچوں کا او پی ڈی میں علاج کیا گیا۔ جبکہ 4بچے مختلف وبائی امراض کی وجہ سے فوت ہوگئے۔ میڈیکل سپریٹینڈنٹ سول ہسپتال مٹھی کی پورٹ کے مطابق گاؤں اوٹھا آباد تعلقہ مٹھی کے رہائشی فضل الدین کا 45دن کا بچہ جس کا وزن 1.2کلوگرام گیسپنگ اور مختلف وبائی امراض کے باعث، گاؤں سنتورو فارم تعلقہ کلوئی کے رہائشی عبدالحمید کی 9ماہ کی بچی حسینہ جس کا وزن 1.7کلوگرام سیوئر نمونیا اور دیگر وبائی امراض کی وجہ سے، ممہراج کالونی مٹھی کی رہائشی جیرام بھیل کا 5دن کا نومولود بچہ گوتم جس کا وزن 2کلو گرام نیونیٹل اور سیپسز بیماری کے باعث اور رزاق ڈنو تعلقہ جھڈو ضلع میرپورخاص کے رہائشی عبدالمجید چانڈیو کا نو مولود بچہ جس کا وزن 1.3کلوگرام وقت سے پہلے پیدائش کم وزن اور برتھ ایسفگزیا کے باعث فوت ہو گئے۔

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.