fbpx

25 سالہ لڑکی سے آٹھ افراد کی اجتماعی زیادتی

25 سالہ لڑکی سے آٹھ افراد کی اجتماعی زیادتی

باغی ٹی وی کی رپورٹ کے مطابق پنجاب کے شہر گجرات میں 25 سالہ لڑکی سے آٹھ افراد کی اجتماعی زیادتی، واقعہ کا مقدمہ درج، خاتون پرچہ کروانے کے بعد غائب ہو گئی

گجرات میں افسوسناک واقعہ پیش آیا ہے، گجرات میں 25 سالہ لڑکی کے ساتھ آٹھ افراد نے اجتماعی زیادتی کی، پانچ روز ہو گئے پولیس نے مقدمہ تو درج کر لیا لیکن ملزمان کو گرفتار نہیں کر سکی، پولیس نے دعویٰ کیا ہے کہ خاتون جو کیس میں مدعی ہے اور جس کے ساتھ زیادتی ہوئی ہے وہ خود پرچہ درج کروانے کے بعد غائب ہو چکی ہے، اسکے موبائل نمبر بھی بند ہیں،ترجمان پولیس نے گجرات تھانہ کنجاہ کے علاقے میں لڑکی سے مبینہ اجتماعی زیادتی کے معاملے پر تحقیقات سے متعلق کہا ہے کہ متاثرہ لڑکی کی درخواست پر پولیس نے چارروز قبل مقدمہ درج کیا ، لڑکی دارالامان جانے کی بجائے اپنے وکلا کے ساتھ چلی گئی مقدمے کے بعد لڑکی اپنے تمام نمبرز بند کر کے روپوش ہو گئی ہے مقدمہ میں لکھوائے گئے ملزمان کے نام و ایڈریس بھی نامکمل ہیں، لڑکی نے میڈیکل آفیسر سے تعاون نہیں کیا جس کے باعث میڈیکل مکمل نہیں ہوا

کل کہیں گے افغانستان سے سگنل آرہے ہیں تو ہم کیا کرینگے؟ دعازہرہ کیس میں عدالت کے ریمارکس

والدین سے نہیں ملنا چاہتی،دعا زہرہ کا عدالت میں والد کے سامنے بیان

دعا کیجیے گا ہماری دعا ظالموں کے چنگل سے آزاد ہو،دعا زہرہ کے والدین کی اپیل

دعا زہرہ کیس،عمر کے تعین کیلئے ایک بار پھر میڈیکل بورڈ بنانے کا حکم

پولیس حکام کے مطابق لڑکی نے بیان دیا تھاکہ ملزمان نے زیادتی کی اور اسکے بعد سڑک پر پھینک کر فرار ہو گئے تھے ،خاتون کو نشہ آور چیز کھلا کر زیادتی کی گئی، واقعہ پر آئی جی پنجاب نے نوٹس لیا اور ڈی پی او گجرات سے رپورٹ طلب کر لی ہے،ڈی پی او کا کہنا ہے کہ خاتون کے ساتھ ایک ملزم کی دوستی تھی اور اسکو ایک ملزم نے شادی کا جھانسہ دے رکھا تھا

پنجاب میں زیادتی کے بڑھتے واقعات نے خواتین کو گھروں سے نکلنے کو غیر محفوظ بنا دیا ہے، خواتین کہیں بھی محفوظ نہیں رہیں، اسی طرح بچوں کے ساتھ زیادتی کے واقعات بھی پنجاب میں مسلسل بڑھ رہے ہیں