3 سال کی عمر میں جنسی ہراسانی کا شکار ہوئی بھارتی اداکارہ فاطمہ ثناء شیخ

بھارتی اداکار عامر خان کی فلم ’دنگل‘ میں مرکزی کردار ادا کرنے والی اداکارہ فاطمہ ثناء شیخ نے انکشاف کیا ہے کہ اُنہیں تین سال کی عمر میں جنسی ہراسانی کا شکار بنایا گیا تھا۔

باغی ٹی وی :شوبز ویب سائٹ پنک ولا کی رپورٹ کے مطابق 28 سالہ اداکارہ فاطمہ ثناء شیخ نے اپنے ایک انٹرویو میں پہلی مرتبہ جنسی ہراسانی سے متعلق بات کرتے ہوئے کہا کہ اُنہیں کئی بار فلم انڈسٹری میں کام کے حصول کے لیے جنسی تعلقات قائم کرنے کی پیشکش کی گئی۔

فاطمہ ثناء شیخ نے بتایا کہ دیگر اداکاراؤں کی طرح وہ بھی جنسی ہراسانی کا شکار ہونے سے نہیں بچ سکیں اُنہیں بھی تین سال کی عمر میں جنسی ہراسانی کا سامنا کرنا پڑا۔

دنگل گرل نے مزید کہا کہ جنسی استحصال ایک دھبہ ہے جس کی وجہ سے خواتین اس بارے میں بات نہیں کرتیں پہلے آپ کو اس حوالے سے بات کرنےسے روک دیا جاتا تھا لیکن اب دنیا بدل گئی ہے لوگوں میں آگاہی اور شعور آگیا ہے۔

اداکارہ نے اپنے انٹرویو میں بالی وڈ میں کی جانے والی ناانصافیوں سے پردہ اُٹھاتے ہوئے بتایا کہ اُن سے جنسی تعلقات قائم نہ کیے جانے کے باعث متعدد بار کام واپس لے لیا گیا تھا۔

واضح رہے کہ فاطمہ ثناءشیخ نے سال 1997 میں چائلڈ آرٹسٹ کے طور پر اداکاری کا آغاز کیا تھا انہوں نے فلم ’چاچی 420‘ میں کمال ہاسن کی بیٹی کا رول بخوبی نبھایا تھا فلم دنگل سے انہیں پہچان ملی علاوہ ازین ٹھگز آف ہندوستان میں بھی اداکاری کی لیکن یہ فلم شائقین کے دل جیتنے میں ناکام رہی-

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.