خیبرپختو نخوا میں9 اور 10 محرم الحرام کو موبائل سگنلز بند رکھنے کے حوالے سے خط وزارت داخلہ کو ارسال

0
50

ملک بھر میں محرم الحرام کے موقع پر سکیورٹی کے سخت انتظامات کیے جا رہے ہیں۔ صوبہ خیبرپختونخوا حکومت نے 9 اور 10 محرم کو موبائل سگنلز بند رکھنے کی تجویز دی ہے، جبکہ پنجاب میں دفعہ 144 نافذ کر دی گئی ہے۔خیبرپختونخوا کے پولیس حکام نے تصدیق کی ہے کہ انہوں نے وزارت داخلہ کو ایک خط ارسال کیا ہے جس میں 9 اور 10 محرم الحرام کو صوبے بھر میں موبائل سگنلز بند کرنے کی درخواست کی گئی ہے۔ یہ اقدام سکیورٹی خدشات کے پیش نظر اٹھایا جا رہا ہے۔ایک سینئر پولیس افسر نے نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پر بتایا، "ہم نے محرم کے دوران صوبے بھر میں فول پروف سکیورٹی کو یقینی بنانے کے لیے کئی اقدامات اٹھائے ہیں۔ موبائل سگنلز کی بندش ان اقدامات کا ایک اہم حصہ ہے۔”دوسری جانب، پنجاب حکومت نے بھی سخت حفاظتی اقدامات اٹھائے ہیں۔ محکمہ داخلہ پنجاب کے ترجمان نے بتایا کہ صوبے بھر میں دفعہ 144 نافذ کر دی گئی ہے۔ اس کے تحت، اتھارٹی کی اجازت کے بغیر عوامی مقامات پر ہتھیار اور آتش گیر مواد کی نمائش پر پابندی عائد کر دی گئی ہے۔ترجمان نے مزید کہا، "یہ اقدامات محرم الحرام کے دوران امن و امان کو برقرار رکھنے کے لیے ضروری ہیں۔ ہم تمام شہریوں سے تعاون کی اپیل کرتے ہیں۔”

ماہرین کا کہنا ہے کہ یہ اقدامات معمول کے مطابق ہیں، لیکن اس سال خصوصی توجہ دی جا رہی ہے۔ سکیورٹی تجزیہ کار ماجد علی نے کہا، "موجودہ صورتحال کو دیکھتے ہوئے یہ احتیاطی تدابیر ضروری ہیں۔ تاہم، حکومت کو یہ یقینی بنانا چاہیے کہ ان اقدامات سے عام شہریوں کی زندگی متاثر نہ ہو۔”وزارت داخلہ کے ایک اعلیٰ افسر نے بتایا کہ خیبرپختونخوا کی جانب سے موصول ہونے والی درخواست پر غور کیا جا رہا ہے اور جلد ہی اس پر فیصلہ کیا جائے گا۔شیعہ علماء کونسل کے نمائندے علامہ ساجد نقوی نے کہا، "ہم حکومت کے تمام اقدامات کی حمایت کرتے ہیں جو محرم کے دوران امن قائم رکھنے کے لیے ضروری ہیں۔ ہمارا مطالبہ ہے کہ جلوسوں اور مجالس کے راستوں پر خصوصی سکیورٹی فراہم کی جائے۔”حکومتی ذرائع کے مطابق، وزیراعظم اور وزیر داخلہ روزانہ کی بنیاد پر صورتحال کا جائزہ لے رہے ہیں اور ضرورت پڑنے پر مزید اقدامات اٹھانے کی ہدایات جاری کی جائیں گی۔یہ واضح رہے کہ محرم الحرام کے دوران ملک بھر میں سکیورٹی کے سخت انتظامات کیے جاتے ہیں۔ اس سال بھی پولیس، رینجرز اور دیگر سکیورٹی اداروں کے اہلکاروں کو مختلف مقامات پر تعینات کیا جائے گا.

Leave a reply