fbpx

ضمنی انتخابات : میڈیا کے لیے ضابطہ اخلاق جاری کردیا گیا

اسلام آباد:ضمنی انتخابات : میڈیا کے لیے ضابطہ اخلاق جاری کردیا گیا ، اس پالیسی کے مطابق (1) کوئی ریڈیو یا ٹیلی ویژن چینل نشر/ٹیلی کاسٹ یا پرنٹ میڈیا ایسی کوئی چیز شائع نہیں کرے گا جس سے کسی مخصوص سیاسی جماعت یا امیدوار کے خلاف رائے عامہ پر منفی اثر پڑے۔

(2) پرنٹ اور الیکٹرانک میڈیا کسی سیاسی جماعت یا امیدوار کے بارے میں ایسی کوئی بھی معلومات پھیلانے سے گریز کرے گا جس کی الیکشن سے متعلق کسی سرگرمی کے بارے میں ٹھوس شواہد کی حمایت نہ ہو۔ کسی سیاسی جماعت یا امیدوار سے متعلق کسی بھی معلومات یا خبر کے ٹیلی کاسٹ، نشر یا اشاعت سے پہلے اس کی سچائی کا پتہ لگانے کے لیے بھی ان کی طرف سے مناسب احتیاط برتی جائے گی۔

(3) پرنٹ اور الیکٹرانک میڈیا صرف مستند انتخابی نتائج نشر، ٹیلی کاسٹ یا شائع کرے گا۔

باضابطہ طور پر پریذائیڈنگ آفیسر، ریٹرننگ آفیسر یا الیکشن کمیشن کے ذریعے جاری کیا جاتا ہے۔

(4) پرنٹ اور الیکٹرانک میڈیا میں کسی بھی امیدوار کی ذاتی زندگی کے بارے میں کسی قسم کے ریمارکس سے گریز کیا جائے گا۔ (5) تمام سیاسی جماعتوں اور امیدواروں کو ان کی انتخابی مہم کے دوران نیشنل ریڈیو/ٹی وی چینلز پر متوازن کوریج فراہم کی جائے گی۔

(6) پیمرا سیاسی جماعتوں اور امیدواروں کو ان کی انتخابی مہم کے لیے سرکاری/نجی ریڈیو/ٹی وی چینلز کے ذریعے دی جانے والی کوریج کی نگرانی کرے گا اور اس مقصد کے لیے ٹرانسمیشن سرٹیفکیٹ، سیاسی جماعتوں اور امیدواروں کی جانب سے کی گئی ادائیگیوں کی تفصیلات اور اس کی کاپیاں حاصل کرے گا۔ الیکشن کمیشن کو بھجوایا جائے۔

(7) پاکستان الیکٹرانک میڈیا ریگولیٹری اتھارٹی ("پیمرا”) اس کی تعمیل کو یقینی بنائے گی۔

ہر ایک ریڈیو/ٹی وی چینل کے ذریعہ کوڈ۔

(8) پرنٹ اور الیکٹرانک میڈیا کے نمائندوں کو پولنگ کے عمل کے مشاہدے کے لیے الیکشن کمیشن یا اس کے مجاز افسر سے ایکریڈیٹیشن کارڈ حاصل کرنا ہوگا اور اگر سنگین خلاف ورزی کا ارتکاب پایا جاتا ہے تو متعلقہ نمائندے سے اس کی منظوری واپس لی جا سکتی ہے۔ اس بات کا تعین کرنے کا اختیار کہ آیا کوئی خلاف ورزی ہوئی ہے یا نہیں وہ الیکشن کمیشن آف پاکستان کے پاس ہے۔

(9) پرنٹ اور الیکٹرانک میڈیا کے نمائندوں کو انتخابی عمل کے کسی بھی عنصر میں رکاوٹ نہیں ڈالنی چاہیے اور جب بھی پریذائیڈنگ یا ریٹرننگ آفیسر کی ضرورت ہو الیکشن کمیشن کی طرف سے فراہم کردہ اپنی شناخت ظاہر کرنا چاہیے۔

(10) اگر کوئی امیدوار کسی دوسرے امیدوار کے خلاف الزام لگاتا ہے تو جہاں تک ممکن ہو میڈیا کو چاہیے کہ

اس طرح کے الزام کو شائع یا نشر کرنے/ٹیلی کاسٹ کرنے سے پہلے دونوں طرف سے رائے طلب کریں۔ (11) ایسے وحشیانہ الزامات اور بیانات سے سختی سے گریز کیا جائے جو قومی یکجہتی کو نقصان پہنچا سکتے ہیں یا امن و امان کی صورتحال پیدا کر سکتے ہیں۔

(12) پرنٹ اور الیکٹرانک میڈیا واقعات کی رپورٹنگ میں ایسی زبان استعمال نہیں کرے گا جو تشدد کو ہوا دے سکے۔

نسل، جنس، زبان، مذہب سمیت کسی بھی بنیاد پر۔ (13) تسلیم شدہ میڈیا والوں کو صرف ایک بار کے لیے ووٹنگ کے عمل یا گنتی کے عمل کی فوٹیج بنانے کے لیے کیمرے کے ساتھ پولنگ اسٹیشن میں داخل ہونے کی اجازت ہوگی۔ تاہم، وہ بیلٹ کی رازداری کو برقرار رکھنے کے لیے اسکرین شدہ کمپارٹمنٹ کی فوٹیج نہیں بنائیں گے۔

(14) میڈیا پولنگ اسٹیشن کا کوئی غیر سرکاری نتیجہ اس وقت تک نشر نہیں کرے گا جب تک کہ پولنگ اسٹیشن بند ہونے کے بعد ایک گھنٹہ نہ گزر جائے۔

رائے شماری کے (15) براڈکاسٹرز کوئی حتمی، رسمی اور قطعی انتخابی نتائج نشر نہیں کریں گے اور/یا انہیں صرف واضح اعلان کے ساتھ نشر کیا جائے گا کہ یہ غیر سرکاری، نامکمل اور جزوی نتائج ہیں، جنہیں حتمی نتائج کے طور پر نہیں لیا جانا چاہیے جب تک کہ ریٹرننگ آفیسر نتائج کا اعلان نہ کر دے۔