آئین اورقانون کے مطابق اپنا کردارادا کرنے کیلیے پرعزم ہیں،چیف جسٹس

چیف جسٹس آصف سعید کھوسہ نے کہا ہے کہ ہم آئین اور قانون کے مطابق اپنا کردار ادا کرنے کیلیے پر عزم ہیں ، اپنے گھرکودرست کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے،

باغی ٹی وی کی رپورٹ کے مطابق چیف جسٹس آصف سعید کھوسہ نے نئے عدالتی سال کی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ہم آئین اور قانون کے مطابق اپنا کردار ادا کرنے کیلیے پر عزم ہیں،عدالتی عمل میں دلچسپی رکھنے والے درخواست دائر کریں جسے سن کر فیصلہ ہوگا،ازخود نوٹس کا اختیار قومی اہمیت کے معاملے پر استعمال کیا جائے گا،جوکسی کے مطالبے پر لیا گیا ہووہ ازخود نوٹس نہیں ہوتا .

چیف جسٹس نے مزید کہا کہ گزشتہ سال زیرالتوا مقدمات کی تعداد 18 لاکھ تھی، گزشتہ سال 19 ہزار 751 مقدمات کااندراج ہوا، گزشتہ سال 57 ہزار 684 مقدمات نمٹائے،سپریم کورٹ نےپہلی بارای کورٹ سسٹم متعارف کرایا،

جعلی اکاؤنٹس کیس ، خورشید انور جمالی نے پلی بارگین کی درخواست واپس لے لی

چیف جسٹس کا مزید کہنا تھا کہ سوسائٹی کاایک طبقہ جوڈیشل ایکٹوازم میں عدم دلچسپی پرناخوش ہے، سوسائٹی کاوہ طبقہ چند ماہ پہلےجوڈیشل ایکٹوازم پرتنقید کرتاتھا ،ہم یہ سمجھتےہیں کہ سوموٹوپرعدالتی گریززیادہ محفوظ ہےاورکم نقصان دہ ہے ، جوڈیشل ایکٹوازم کی بجائے سپریم کورٹ عملی فعل،جوڈیشل ازم کوفروغ دے رہی ہے ،

چیف جسٹس نے مزید کہا کہ کونسل کسی بھی قسم کے خوف، بدنیتی یا دباؤ کے بغیر اپنا کام جاری رکھے گی، قانون کے مطابق انصاف کی فراہمی کے علاوہ کونسل سے کوئی بھی توقع نہ رکھی جائے،

بند کمروں میں ہونیوالے واقعات کی حقیقت؟ باغی ٹی وی اور کھرا سچ لا رہے ہیں انکشافات سے بھرپورویڈیو سیریز

واضح رہے کہ پاکستان کی سب سے بڑی عدالت سپریم کورٹ میں عدالتی سال دوہزار اٹھارہ انیس اپنے اختتام کو پہنچا ،نیا عدالتی سال دوہزار انیس بیس آج سے شروع ہے ، گذشتہ عدالتی سال میں سترہ جنوری کو سابق چیف جسٹس ثاقب نثار ریٹائر جبکہ اگلے ہی روز جسٹس آصف سعید خان کھوسہ نے ذمہ داریاں سنبھالیں تھی، دو ججزاپنے عہدے سے سبکدوش ہوئے جبکہ جسٹس قاضی محمد امین نئے جج تعینات ہوئے .

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.