fbpx

عام لوگوں کو آبادی میں اضافےبارےآگاہی دینے کی ضرورت ہے،وفاقی وزراء

پاکستان سمیت دنیا بھر میں پیر 11جولائی کو منائے جانے والے عالمی یوم آبادی کے موقع پر حکومتی وزرا نے آبادی میں مسلسل اضافے اور پاکستان میں دستیاب محدود وسائل پر اپنی تشویش کا اظہار کیا ہے۔ وفاقی وزرا نے اپنے پیغامات میں عام لوگوں کو آبادی میں اضافے کے منفی اثرات کے بارے میں ت پر زور دیا جو نہ صرف انسانی صحت بالخصوص ماں اور بچے کی صآگاہی دینے کی ضرورحت بلکہ قومی ترقی پر منفی اثرات مرتب ہوتے ہیں۔

وفاقی وزیر صحت عبدالقادر پٹیل نے عالمی یوم آبادی کے موقع پر اپنے پیغام میں کہا کہ ایک غلط فہمی ہے کہ خاندانی منصوبہ بندی کا مقصد بچوں کی پیدائش کو کنٹرول کرنا ہے۔ انہوں نے کہا کہ درحقیقت یہ اقدام ماں اور بچے کی بہتر صحت کو یقینی بنانے کے لیے شروع کیا گیا ہے۔وفاقی وزیر برائے منصوبہ بندی و ترقی احسن اقبال نے کہا کہ پاکستان میں تقریبا 60 فیصد آبادی30 سال سے کم عمر پر مشتمل ہے جو بہتر تعلیم اور معقول روزگار کی خواہاں ہے۔ تاہم، ملک بھر میں دستیاب وسائل کے ساتھ، بہترین تعلیم کی سہولیات اور ملازمتوں کی دستیابی ایک مشکل کام تھا۔

وفاقی وزیر برائے تخفیف غربت شازیہ مری نے پاکستان میں ترقیاتی منصوبہ بندی کے لیے زیادہ آبادی کو ایک بڑا مسئلہ قرار دیا۔ انہوں نے کہا کہ بڑھتی ہوئی آبادی کی شرح کے بارے میں عوام میں شعور بیدار کرنے کی اشد ضرورت ہے۔ انہوں نے کہا کہ اگر ہم قومی آبادی اور وسائل کے درمیان توازن برقرار رکھیں گے تو یہ لوگوں خصوصا ماں اور بچے کی بہتر صحت کو یقینی بنائے گا۔ اعداد و شمار سے پتہ چلتا ہے کہ پاکستان میں زچگی کے دوران شرح اموات فی سال 186 ہے۔ پاکستان میں فیملی پلاننگ کی ضرورت بہت زیادہ ہے۔

غلط تاثرات، تربیت یافتہ صحت کے عملے کی کمی، شراکت داروں کے درمیان کمیونیکیشن گیپ جیسے دیگر نچلی سطح پر چیلنجز موجود ہیں۔ اس علاقے میں حقیقی تبدیلی لانے اور عوام کے درمیان خاندانی منصوبہ بندی کو معمول پر لانے کے لیے، میڈیا ٹولز کے استعمال کے ذریعے طرز عمل کی تبدیلی کی مہمات کو ڈیزائن اور ان پر عمل درآمد کرنے کی ضرورت ہے جو دیہی اور پسماندہ کمیونٹیز سمیت معاشرے کے ہر فرد تک پہنچیں۔

خاندانی منصوبہ بندی کے اقدامات کو اپنانے کی اہمیت کے بارے میں بیداری پیدا کرنے کی کوششوں کے ایک حصے کے طور پر، خیرخواہ مہم کے نامسے عالمی یوم آبادی کے موقع پر حکومتی اہلکاروں کی تعریفی ویڈیوز کے ساتھ مہم کا آغاز کیا گیا ہے۔

ان ویڈیوز میں پاکستان کی تیزی سے بڑھتی آبادی اور پاکستان کو درپیش معاشی بحران، بے روزگاری، صحت کی دیکھ بھال وغیرہ جیسے مسائل کا مفصل احاطہ کیا گیا ہے اور لوگوں کو خاندانی منصوبہ بندی کے اقدامات کی ترغیب دی گئی ہے۔ اس مہم کا مقصد سرکاری اہلکاروں کو متحرک کرنا اور اس بڑھتے ہوئے مسئلے کو حل کرنے کے لیے عہد و عزم کرنا ہے۔