fbpx

عدالت کے حکم پر اسلام آباد سے لاپتہ شہری بازیاب،عدالت کا پولیس پر اظہار برہمی

اسلام آباد سے 17نومبر کو لاپتہ شہری کی بازیابی اور بھتہ مانگنے سے متعلق کیس کی سماعت ہوئی

ہائیکورٹ کے حکم پر اسلام آباد کے سیکٹر جی ایٹ میں 17 نومبر کو لاپتہ شہری بازیاب کروا لیا گیا،دوران سماعت عدالت پولیس کے رویے پر برہم ہو گئی، اسلام آباد ہائیکورٹ کے چیف جسٹس عامر فاروق نے ریمارکس دیتے ہوئے کہا کہ کیس میں آبزرویشن دینگے،اسلام آباد ہائیکورٹ کے چیف جسٹس عامر فاروق نے بازیاب ہونے والے شہری سے سوال کیا کہ آپ کو کس نے اور کب اٹھایا ؟ بازیاب شہری نے جواب دیا کہ مجھے 17 نومبر کو اسلام آباد سے اٹھایا گیا ، عدالت نے شہری سے استفسار کیا کہ آپ کو کہاں لے کر گئے تھے ؟ بازیاب شہری نے عدالت میں جواب دیا کہ نہیں معلوم کہاں لے گئے

اسلام آباد ہائیکورٹ کے چیف جسٹس عامر فاروق نے پولیس سے استفسار کیا کہ کیا بازیاب شہری کو سمجھا کر لائے ہیں ؟ سرکاری وکیل نے عدالت میں کہا کہ ہم نے گزشتہ شام کو انہیں گرفتار کیا ان پر کیس ہے، اسلام آباد ہائیکورٹ کے چیف جسٹس عامر فاروق نے ریمارکس دیتے ہوئے کہا کہ شام کو اچانک کیا معجزہ ہوا؟ ہم نے کہا آئی جی آئے گا اور ساتھ بندہ ہی آگیا ، یہ پرچہ آپ نے اس کے خلاف درج کیا ہے ،میں آبزرویشن دونگا ، اس میں ضمانت دے سکتا ہوں نہ کوئی آرڈر ،آبزرویشن دونگا ،

سندھ ہائیکورٹ کا تاریخی کارنامہ،62 لاپتہ افراد بازیاب کروا لئے،عدالت نے دیا بڑا حکم

انسان کی لاش مل جائے انسان کو تسلی ہوجاتی ہے،جبری گمشدگی کیس میں عدالت کے ریمارکس

عمران خان لاپتہ، کیوں نہ نواز شریف کیخلاف مقدمے کا حکم دوں، عدالت کے ریمارکس

لاپتہ افراد کا سراغ نہ لگا تو تنخواہ بند کر دیں گے، عدالت کا اظہار برہمی

لاپتہ افراد کی عدم بازیابی، سندھ ہائیکورٹ نے اہم شخصیت کو طلب کر لیا

 لگتا ہے لاپتہ افراد کے معاملے پر پولیس والوں کو کوئی دلچسپی نہیں