fbpx

ڈیڑھ سال سے ایک خاتون مسلسل، ہراساں اور بلیک میل کر رہی ہے عثمان مختار

پاکستانی اداکار عثمان مختار نے ایک خاتون پر مسلسل ڈیڑھ سال سے ہراسانی، بلیک میلنگ اور ڈرائے دھمکائے جانے کا الزام عائد کرتے ہوئےخاتون کی وجہ سے مسلسل ہراسانی اور بلیک میلنگ کی کہانی مداحوں کے ساتھ شئیر کردی۔

باغی ٹی وی : اپنے تصدیق شدہ انسٹاگرام اکاونٹ پر ’میری کہانی‘ کے عنوان سے طویل پوسٹ شئیر کرتے ہوئے اداکار نے لکھا کہ پچھلے ڈیڑھ سالوں سے ایک خاتون انہیں ڈرا دھمکا رہی ہیں، ان کے گھر والوں اور دوستوں کو بھی اس ہراسانی کے ذریعے نشانہ بنایا گیا ہے اور ان سے متعلق تکلیف دہ تبصرے کیے گئے ہیں۔

عثمان مختار نے اپنی پوسٹ میں کہا کہ انہوں نے اس کے متعلق وفاقی تحقیقاتی ادارے (ایف آئی اے) میں شکایت بھی درج کرا رکھی ہے، لیکن ڈیڑھ سال کا عرصہ گزر جانے کے بعد بھی کچھ کیا نہیں جا سکا، جس سے ان کی ذہنی حالت پر بہت برا اثر پڑا ہے۔

انہوں نے اپنے مداحوں سے معافی بھی مانگی اور کہا کہ وہ خواتین کی عزت کرتے ہیں اور ان کے حقوق کے لیے ہمیشہ کھڑے رہیں گے،میں چاہتا تھا کہ یہ معاملہ خاموشی سے حل ہوجائے اور ایک خاتون کا منفی تاثر لوگوں تک نہ پہنچے لیکن اب میں تھک چکا ہوں اور بولنے کا فیصلہ کیا ہے۔

عثمان مختار نے بتایا کہ انہوں نے 2016 میں ایک خاتون آرٹسٹ کے ساتھ ایک میوزک ویڈیو پر کام کیا تھا اور اس پورے شوٹ کے دوران ان کے ویڈیو سے متعلق تخلیقی بنیادوں پر اختلافات رہے اور ان کی کئی مرتبہ بحث بھی ہوئی تاہم وہ خاتون کے پروجیکٹ سےعلیحدہ ہوگئے تھے۔

انہوں نے بتایا کہ خاتون نے ویڈیو میں ہدایت کار کے طور پر انہیں کریڈٹ بھی نہیں دیا تھا اور انہیں اس پر بھی مسئلہ نہیں تھا کچھ برسوں بعد خاتون آرٹسٹ نے سوشل میڈیا پر ان سے متعلق جھوٹے دعوے کرنا شروع کردیے جس سے ان کی ذہنی صحت متاثر ہوئی ہے۔

اداکار نے خاتون آرٹسٹ کا انہیں کیا گیا میسج کا اسکرین شوٹ تو شیئر کیا لیکن نام اور شناخت کے حوالے سے کچھ نہیں بتایا۔

عثمان مختار کا ساتھ دینے نامور ساتھی اداکار بھی میدان میں آگئے تارہ محمود، ماہرہ خان، کبریٰ خان، رابعہ چوہدری اور دیگر نے ان کی پوسٹ کے نیچے کمنٹس کے ذریعے انہیں ہمت اور حوصلہ دیا-

یاد رہے کہ عثمان مختار ہم ٹی وی کے نئے میگا سیریل “ہم کہاں کہ سچے تھے” میں ماہرہ خان کے ساتھ جلد نظر آئیں گے۔ اسی ڈرامے کے ذریعے ماہرہ خان پانچ سالوں بعد ٹی وی سکرین پر دوبارہ جلوہ گر ہوں گی۔