fbpx

اقلیتی حقوق کے تحفظ کے لئے تمام تر کوششوں کی جائیں گی،ریاض حسین پیرزادہ

وفاقی وزیر میاں ریاض حسین پیرزادہ نے وزارت انسانی حقوق اسلام آباد میں سندھ صوبائی اسمبلی کے رکن انتھونی نوید کی سربراہی میں قومی لابنگ برائے اقلیتی حقوق کے وفد سے ملاقات کی۔شرکا نے وفاقی وزیر کو حالیہ تحقیقات جو ملک میں مختلف اقلیتی برادریوں کو درپیش مسائل پر کی گئی ہیں کے ذریعے جمع کئے گئے اعداد و شمار کے بارے میں بتایا۔

انہوں نے اقلیتی حقوق کے تحفظ کو یقینی بنانے کے لئے ایک چار نکاتی ایجنڈا پیش کیا جس میں پورے ملک میں سینٹری ورکرز کو سماجی تحفظ کے فوائد کی فراہمی، ان کی ملازمتوں کو باقاعدہ بنانے کے مسائل کو حل کرنا، آجروں کے ذریعہ ضروری حفاظتی تربیت، اوزار اور سامان فراہم کرنے کا طریقہ کار وضع کرنا اور مذہب کی بنیاد پر مریضوں کے ساتھ امتیازی سلوک کو روکنے کے لئے تمام سرکاری اور نجی اسپتالوں میں ایک ضابطہ اخلاق آویزاں کرنا شامل تھا۔وفاقی وزیر انسانی حقوق نے ممبران کو اقلیتی حقوق کے تحفظ کے لئے اپنی تمام تر کوششوں کی یقین دہانی کرائی۔

انہوں نے صوبائی حکام کو لکھنے کے لئے وزارت کے متعلقہ سیکشن کو ہدایات دیں اور اقلیتوں کی مذکورہ شکایات کو دور کرنے کے لئے صوبائی حکام، خاص طور پر لیبر اور صحت کے محکموں سے سفارشات کے ساتھ رپورٹیں حاصل کرنے کے لئے ہدایات دیں۔وفاقی وزیر نے سندھ میں ہندو برادری کےساتھ ظلم و ستم اور امتیازی سلوک کی مذمت کی۔ انہوں نے کہا کہ شعور اور تعلیم سے لوگوں کی ذہنیت بدلنے کی اشد ضرورت ہے۔ انہوں نےکہا کہ عدم برداشت نے ہمارے سماجی بناوٹ کو شدید نقصان پہنچایا ہے جسے ہم روشن خیالی اور درس و تدریس کی مدد سے ہی ٹھیک کرسکتے ہیں۔

وفاقی وزیر نے اقلیتی حقوق کی حفاظت اور سربلندی کے لئے جو بھی ممکن ہو اکرنے کے عزم کا اعادہ کیا۔ انہوں نے کہا کہ ہم ذمہ دار ہیں کہ اقلیتوں کو ان حقوق اور آزادیوں کی فراہمی کو یقینی بنائیں جن کو آئین کے آرٹیکل 36 میں شامل کیا گیا ہے اور جو ہمارے قائد کے رہنما اصولوں سے بھی ہم تک پہنچے ہیں۔
C