اللہ تعالیٰ بہت رحیم وکریم ہیں مگرجس نے شرک کیا اسے معاف نہیں کریں گے ،علامہ حقانی اورعلامہ موسوی کی باغی ٹی وی میں علمی گفتگو

لاہور:باغی ٹی وی کی رمضان ٹرانسمیشن الحمدللہ جاری وساری ہے اورآج اس سلسلے میں پانچویں پارے کی تفسیر اورخاص خاص موضوعات پرجید علما کرام کی طرف سے بہت مفید علمی گفتگو بھی جاری ہے، اس سلسلے میں باغی ٹی وی کے مہمان علما کرام علامہ عبدالشکورحقانی اورعلامہ سید حسنین موسوی بلاناغہ اپنے سننے والوں کو قرآن وسنت کی تعلیمات پہنچا رہے ہیں

رمضان ٹرانسمشن کے آج کے موضوع پرگفتگو کرتے ہوئے علامہ عبدالشکورحقانی نے بتایا کہ پانچویں پارے میں‌اللہ تعالیٰ نے سب سے پہلے رحمت کا ذکرکیا ہے اللہ تعالیٰ‌اپنے بندوں کواپنی رحمت کی لپیٹ میں لینا چاہتے ہیں اللہ تعالیٰ چاہتے ہیں کہ میرے بندے میری تابعداری کرتے ہوئے رحمتوں کے حقدار بن سکیں‌

علامہ حقانی نے مزید کہا کہ اس پارے میں اللہ تعالیٰ نے مسلمان مرد اورعورتوں سے مخاطب ہوتے ہوئے کہا کہ جس کو اللہ تعالیٰ نے جو فضیلت دی ہے دوسرا اس کے بارے میں اعتراض نہ کرے ،اللہ تعالیٰ نے کہا کہ میں نے مردوں کو عورتوں‌پرفضیلت دی ہے ،

 

 

انہوں نے کہا کہ اللہ تعالیٰ نے اس پارے میں یہ بھی فرمایا ہے کہ اللہ تعالیٰ یہ چاہتے ہیں‌کہ مرد عورت پرقائم خاندانی نظام چلتا رہے ، اس کے لیے معاشرے کے دیگرافراد کے کردار کو بھی اہمیت دی گئی ہے ،

علامہ حقانی نے کہا کہ اللہ تعالیٰ نے یہ بھی فرما دیا ہے کہ اللہ تعالیٰ شرک کو معاف نہیں کرے گا اس کے علاوہ جو چاہے گا معاف کردے گا. اس کے ساتھ ساتھ اللہ تعالیٰ نے یہ بھی فرمایا کہ اللہ اور اس کے رسول کے فرمودات کے ساتھ ساتھ اپنے حکمران کی بات بھی ماننا تم پرفرض ہے ، لیکن یہاں یہ ضروری ہےکہ ملکی معاملات میں حاکم وقت کی بات ماننا اوردین کے معاملے میں اپنے مفتی اورمذہبی رہنما کی بات کو ماننا بہت ضروری ہے

علامہ عبدالشکور حقانی نے کہا کہ اللہ تعالیٰ اوراس کے رسول کے فرمودات سے انکارنہیں کیا جاسکتا ، انہوں‌نے ایک یہودی اورایک مسلمان کے واقعہ کا ذکرکیا جس میں ایک مسلمان اورایک یہودی اللہ کے رسول صلی اللہ علیہ والٰہ وسلم کے پاس گئے تو آپ نے فیصلہ یہودی کے حق میں کردیا ، وہاں سے آنے کے بعد مسلمان نے کہا کہ میں تو اس فیصلے کونہیں مانتا ، یہ کیس حضرت عمر رضی اللہ عنہ کے پاس گیا تو یہودی نے بتایا کہ اللہ کے رسول پہلے میرے حق میں فیصلہ فرما چکے ہیں

علامہ حقانی نے اس موقع پربہت خوبصورت بات کرتے ہوئے کہا کہ حضرت عمر نے اس موقع پرتلوار کے ساتھ مسلمان کا سرقلم کردیا اورساتھ یہ کہا کہ جواللہ کے رسول کافیصلہ نہیں مانتا اس کی سزا یہ ہے ،انہوں نے کہا کہ جو لوگ جس کےساتھ محبت کریں گے قیامت کے دن اللہ تعالیٰ ان کےساتھ ان کو اٹھائیں گے

علامہ سید حسنین موسوی نے کہا کہ اللہ تعالی نے اس مہینے کو اتنی فضیلت دی ہے کہ جو اس مہینے میں ایک آیت تلاوت کرتا ہے اوراس رمضان کے مہینے کے علاوہ جو قرآن پڑھتا ہے اس ایت والے کو بہت زیادہ فضیلت دی ہے ، اس لیے ہمیں چاہیے کہ ہم اس مہینے میں قرآن کی تلاوت کریں اورزیادہ سے زیادہ نیک کام کریں‌تاکہ اللہ تعالیٰ راضی ہوجائیں‌

علامہ موسوی نے کہا کہ اللہ تعالیٰ نے اس مہینے کو بہت زیادہ فضیلت بخشی ہے ، انہوں نے کہاکہ جس شخص نے کسی دوسرے مسلمان کی افطاری کروائی اس پرجنت واجب ہوگئی ، انہوں نے اس واقعہ کا بھی ذکرکیا جس میں ایک صحابی نے عرض کی کہ اگرکوئی افطاری نہ کرواسے اپنی غربت کی وجہ سے تو آپ نے فرمایا ایک کھچورسے روزہ افطارکروانے والے کو بھی اتنا ہی اجرملے گا

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.