امریکہ میں بینکوں اور نجی کمپنیوں سے بھتہ و تاوان لینے میں غیر معمولی اضافہ

0
70

واشنگٹن: امریکہ میں بینکوں اور نجی کمپنیوں سے بھتہ و تاوان لینے میں غیر معمولی اضافہ ہو گیا ہے-

باغی ٹی وی : امریکی نشریاتی ادارے سی این این کی رپورٹ کےمطابق اعداد و شمار کے تحت گزشتہ ایک سال کے دوران امریکی اداروں نےتقریباً ایک ارب 20 کروڑ ڈالرز بطور بھتہ و تاوان ادا کیے ہیں امریکی بنکوں اور نجی کمپنیوں کی منعقدہ کانفرنس میں یہ انکشافات کیے گئے ہیں-

امر یکہ ومغر بی مما لک چین کےاستحکام کو نقصان پہنچانا چاہتے ہیں:چین

اس ضمن میں کانفرنس میں پیش کی جانے والی رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ 2021 کے دوران مجموعی طور 1489 ایسے واقعات ہوئے جن میں نجی کاروباری کمپنیوں اور بنکوں کو جرائم پیشہ افراد کو بھتہ و تاوان ادا کرنا پڑا۔

اعداد و شمار کے تحت دیے جانے والے بھتے و تاوان کی رقم 2020 کے مقابلے میں تقریباً تین گنا زائد ہے۔ 2020 میں اس طرح کے کل 487 واقعات ہوئے تھے جب کہ اب یہ تعداد بڑھ کر 1489 ہو گئی ہے۔

کانفرنس میں پیش کی جانے والی رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ پانچ بڑے بھتہ لینے والے گروہوں میں روسی سائبر کرائم والے ہیں۔

ٹریژری کے فنانشل کرائمز انفورسمنٹ نیٹ ورک (FinCEN) کی رپورٹ کے مطابق، 2021 کے آخری نصف کے دوران سب سے زیادہ ادائیگیاں کرنے والے پانچ ہیکنگ ٹولز روسی ہیکرز سے جڑے ہوئے ہیں۔

روسی ہیکرز کا امریکی وزارت خزانہ کے سسٹم پر سائبر حملہ

رپورٹ میں قومی سلامتی کے ایک اہم چیلنج کو روشن کیا گیا ہے جسے بائیڈن انتظامیہ نے مئی 2021 میں رینسم ویئر کے حملے کے بعد سے ہیل لانے کی کوشش کی ہے جس نے ایک بڑے امریکی پائپ لائن آپریٹر کو دنوں تک بند رہنے پر مجبور کیا۔

یہ اس وقت سامنے آیا ہے جب بائیڈن انتظامیہ نے اس ہفتے واشنگٹن میں تین درجن اتحادی حکومتوں کا اجلاس طلب کیا ہے تاکہ تاوان کی ادائیگیوں کے غیر قانونی بہاؤ سے نمٹنے اور تنظیموں کو ہیک کے لیے مزید لچکدار بنانے کے طریقوں پر تبادلہ خیال کیا جا سکے۔ روس خاص طور پر اس ہفتے کے مذاکرات میں غیر حاضر ہے۔

ٹریژری کے مطابق، رپورٹ کردہ بھتوں اور تاوان کی ادائیگیوں میں تیزی سے اضافہ بینکوں کے ادائیگیوں کو ٹریک کرنے اور رپورٹ کرنے میں بہتر ہونے کی وجہ سے ہو سکتا ہے، بلکہ صنعتوں میں رینسم ویئر حملوں کی بلند شرح کا ایک وسیع رجحان بھی ہے۔

روسی ہیکرز کا امریکی وزارت خزانہ کے سسٹم پر سائبر حملہ

محکمہ خزانہ کا تجزیہ ان رپورٹس پر مبنی ہے کہ منی لانڈرنگ کو روکنے کے لیے امریکی بینکوں کو ریگولیٹرز کے پاس فائل کرنے کی ضرورت ہے۔ اس میں امریکی بینکوں اور امریکی صارفین کے ساتھ بین الاقوامی بینکوں کا ڈیٹا شامل ہے۔ اس میں بینکوں یا ان کے صارفین کے ذریعے بھتہ کی رقم اور تاوان کی کوشش کی گئی ادائیگیوں جیسی چیزوں کا احاطہ کیا گیا ہے۔

ٹریژری کے فنانشل کرائمز انفورسمنٹ نیٹ ورک کے قائم مقام ڈائریکٹر ہماولی داس نے ایک بیان میں کہا کہ اعداد و شمار سے پتہ چلتا ہے کہ "رینسم ویئر بشمول روس سے منسلک اداکاروں کے حملے ہماری قومی اور اقتصادی سلامتی کے لیے سنگین خطرہ بنے ہوئے ہیں۔

کالونیل پائپ لائن، ایندھن کی پائپ لائن آپریٹر جسے مئی 2021 میں ہیک کیا گیا تھا، نے مشرقی ساحل پر ایندھن کی کھیپ منتقل کرنے کے لیے مایوسی سے $4.4 ملین تاوان ادا کئے محکمہ انصاف نے بعد میں تقریباً نصف رقم ہیکرز سے برآمد کر لی۔

برازیل : بولسونارو انتظامیہ نے الیکشن میں شکست تسلیم کرلی،اقتدارنومنتخب صدر لولا…

واضح ہے کہ مارچ میں امریکی صدر جوبائیڈن نے سائبر سکیورٹی قانون پر دستخط کیے تھے، نئے قانون کے تحت جن کمپنیوں سے کوئی تاوان طلب کرے گا ان کمپنیوں کو 72 گھنٹوں کے اندر امریکی ہوم سکیورٹی ڈیپارٹمنٹ کو رپورٹ کرنا ہو گی اور اگر وہ تاون ادا کر چکی ہوں گی تو 24 گھنٹوں میں اطلاع دینا لازم ہو گا۔

Leave a reply