fbpx

امریکی عوام کی جانب سے پاکستان کو یوم آزادی مبارک، ڈونلڈ بلوم

سیاست میں اتحاد ضروری ہے، برطانوی ہائی کمشنر کا یوم آزادی پر خط

امریکی سفیر ڈونلڈ بلوم نے کہا ہے کہ گزشتہ 75 برسوں میں پاکستان اور امریکا نے عوام کے درمیان پائیدار شراکت داری اور مضبوط تعلقات قائم کیے ہیں، تیزی سے بدلتی ہوئی اس دنیا میں ہم تمام بڑے چیلنجز سے نمٹنے کیلئے شانہ بشانہ کام کرتے رہیں گے۔


پاکستان کے 75 ویں یوم آزادی پر پاکستان میں امریکی سفیر ڈونلڈ بلوم نے ویڈیو پیغام جاری کیا جس میں انہوں نے پاکستان میں امریکی مشن اور امریکی عوام کی جانب سے پاکستان کو یوم آزادی کی مبارکباد دی۔

انہوں نے کہا کہ گزشتہ 75 برسوں میں دونوں ممالک نے عوام کے درمیان پائیدار شراکت داری اور مضبوط تعلقات قائم کیے، ہم نے ہزاروں پاکستانی طلبا کو امریکا بھیجا، وہ طلبا اب پاکستان میں37 ہزار سابق طلبا پر مشتمل ایلومنائی نیٹ ورک کا حصہ ہیں۔

امریکی سفیر نے کہا کہ گزشتہ2 برسوں میں ہم نے دنیا کی سب سے مؤثر کووڈ 19 کی ویکسین کی 77 ملین سے زیادہ خوراکیں پاکستان کو عطیہ کیں، اس بات پر فخر ہے کہ اس تعلق نے دونوں اقوام کے درمیان کاروباری اور معاشی تعلقات کو مضبوط کیا۔

انہوں نے کہا کہ امریکا بدستور پاکستان کی سب سے بڑی برآمدی منڈی ہے، صرف گزشتہ مالی سال کے دوران پاکستان میں امریکی براہ راست سرمایہ کاری میں 50 فیصد اضافہ ہوا، یہ اضافہ ایک دھائی کے دوران بلند سطح ہے۔

ڈونلڈ بلوم نے مزید کہا کہ تیزی سے بدلتی ہوئی اس دنیا میں ہم تمام بڑے چیلنجز سے نمٹنے کیلئے شانہ بشانہ کام کرتے رہیں گے۔

علاوہ ازیں برطانوی ہائی کمشنر کرسچن ٹرنر نے پاکستان کے 75 ویں یوم آزادی پر لکھے گئے اپنے خط میں کہا ہے کہ پاکستان کی مشکلات سے ابھرنے کی قوت افسانوی شہرت کی حامل ہے، پاکستان کی مشکلات پر قابو پانے کے لیے قائد اعظم کے فرمان کے مطابق سیاست میں اتحاد ضروری ہے۔پچھترویں یوم آزادی پر برطانوی ہائی کمشنر کرسچن ٹرنر نے ہاکستان کے نام خط لکھا ہے،خط میں کرسچن ٹرنر نے کہا کہ پاکستان اور برطانیہ ایک ساتھ ہیں۔

انہوں نے کہا کہ پچھترویں سالگرہ مبارک ہو،یہ جشن آزادی پاکستان اور برطانیہ کے سفارتی تعلقات کے پچھتر سال مکمل ہونے پر بھی منایا جا رہا ہے۔

برطانوی ہائی کمشنر نے کہا کہ پاکستان کے بارے میں لوگوں کو تین تجاویز دینا چاہتا ہوں، سب سے پہلے پاکستان کے بارے میں فرسودہ تصورات کو بدلنا ہو گا، زیادہ سے زیادہ آبادی کو ملکی ترقی کے راستے میں شمولیت اختیار کرنا ہو گی،انہوں نے مزید کہا کہ چند ہفتوں میں انگلینڈ کی کرکٹ ٹیم بھی 17 سال بعد پاکستان آنے والی ہے۔