fbpx

جو فلم سنسر بورڈ سے پاس نہیں کرائے گا وہ جیل جائے گا ، فلم انڈسٹری کے لیے ضابطہ آگیا

کراچی:جو فلم دکھائے جانے سے پہلے سنسر بورڈ سے تصدیق نہیں کرائے گا وہ جیل جائے گا ، قانون پرانا ہی ہے مگر عمل درآمد نہ ہوسکا اطلاعات کے مطابق سنسر بورڈ نے ضروری قرار دیا ہے کہ فلم کو دکھائے جانے سے پہلے سنسر بورڈ کو ضرور چیک کروالیں

ذرائع کے مطابق رواں ماہ عید الاضحی کے موقع پر پرے ہٹ لو اور سپر اسٹار جیسی فلمیں ریلیز کی گئیں تاہم اس دوران سندھ میں تین پشتو اور ایک پنجابی فلم بغیر سنسر کے سنیما گھروں میں دکھائی گئی جس پر سنسر بورڈ نے فوری کارروائی کرتے ہوئے سنیماؤں اور ڈسٹری بیوٹرز کو قانونی نوٹس جاری کردیئے۔

سنسر بورڈ کو فلمیں دکھانے جانے کے حوالے سے چیئرمین سندھ سنسر بورڈ خالد بن شاہین کا کہنا ہے کہ عید کے دوران مجھے بتایا گیا کہ چار فلمیں بغیر سنسر کے سنیماؤں میں دکھائی جا رہی ہیں جب اس بارے میں مکمل حقائق ہمارے علم میں آئے تو ہم نے فوری طور پر ان سب کو قانونی نوٹس جاری کئے۔

دوسری طرف چیئرمین سندھ سنسر بورڈ کا کہنا تھا کہ اس معاملے پر سنیما مالکان کو سخت تنبیہ جاری کرتے ہوئے کہا گیا کہ آئندہ مالکان اس قسم کی کارروائی کے مرتکب پا ئے گئے تو ان کے سینماؤں کو سربمہر اور ڈسٹری بیوٹرز کو بلیک لسٹ کردیا جائے گا۔ انہوں نے کہا کہ ہمارا ادارہ قوائد و ضوابط کے تحت کام کر رہا ہے جس کا کام سنیما گھروں میں فلموں کو نمائش سے قبل مانیٹر کرنا ہے