fbpx

بلدیاتی الیکشن اور بلدیاتی اداروں کی کارکردگی تحریر : اسامہ خان

بلدیاتی ادارے وہ ادارے ہیں جہاں لوگوں کو ہر دوسرے دن کام پڑتا رہتا ہے ایک کسی کی وفات کسی کی پیدائش کا اندراج کروانا پورے شہر کو صاف ستھرا رکھنا اور ایسے بہت سے کام بلدیاتی اداروں میں کیا جاتے ہیں لیکن عوام کو جو سب سے بڑی مشکلات کا سامنا کرنا پڑتا ہے وہ ہے صفائی ستھرائی کا نظام بڑے شہروں میں تو بلدیاتی اور پرائیویٹ ادارے ایکٹو
 رہتے ہیں اور صفائی ستھرائی کا کام بہت اچھے طریقے سے نبھاتے ہیں لیکن چھوٹے شہروں کا کوئی پرسان حال نہیں ہے ان کو کوئی پوچھنے والا نہیں ہے اور کوئی پوچھے گا بھی کیوں کیونکہ وزیروں نے تو بڑا شہر میں داخل ہوتا ہے نہ چھوٹے شہر میں کوئی داخل ہوگا نہ کسی کو اس چیز کی خبر ہوگی اور غلطی سے کوئی اگر چھوٹے شہروں میں صفائی ستھرائی کے لیے کمپلین بھی کر دیتا ہے تو تب بھی صفائی ستھرائی نہیں کی جاتی کیونکہ ان سے جواب طلب کرنے والا کوئی نہیں ہوتا ان سے پہلے تک جتنی حکومتی گزری انہوں نے کبھی اس چیز پر غور نہیں کیا بڑے شہروں میں تو سب غور کر لیتے ہیں لیکن چھوٹے شہروں کی فریاد کوئی نہیں سنتا سن 2018 میں پاکستان تحریک انصاف کی حکومت بنی اور یہ سلسلہ شروع ہوا اس وقت سے سنتے آرہے ہیں کہ بلدیاتی الیکشن ہوں گے کب ہوں گے یہ کسی کو نہیں پتا لیکن اس حکومت سے بھی میرا وہی گلا ہے جو پچھلی حکومتوں سے رہا ہے پاکستان تحریک انصاف بھی بڑے شہروں کی صفائی ستھرائی کا خیال رکھتی ہے یا ان کے نمائندے رکھتے ہیں لیکن چھوٹے شہروں کے فریاد سننا ان کے لئے باعث شرم ہے آج اگر ان میں کوئی لاہور سے کمپلین کرتا ہے تو یہ بھاگ کر اس کمپلین کو رجوع کرتے ہیں لیکن اگر کوئی وہی کمپلین چھوٹے شہر سے کرتا ہے تو یہ صرف اس کو نظر انداز کر دیتے ہیں صرف اس لئے کہ ہمارا اس شعر سے کیا مطلب کیونکہ ان کو مقبولیت تو بڑے شہروں سے مل نہیں ہوتی ہے چھوٹے شہروں کے ان کا کیا لینا دینا سننے میں آرہا ہے کہ جنوری دو ہزار بیس میں بلدیات کے الیکشن ہوں گے میں امید کرتا ہوں اس سے پہلے پہلے ہر شہر میں بلدیات کے لیے فوکل پرسن تعینات کر دیا جائے گا حکومت پنجاب کی طرف سے تاکہ چھوٹے شہروں کے بھی معاملات کو حل کیا جا سکے اگر حکومت پنجاب یہ اقدام سر انجام دیتی ہے تو مجھے امید ہے لوگوں کے 80 فیصد معاملات یہی پر حل ہو جائیں گے اور جب حکومت پنجاب فکر پرسنٹ کائنات کر دے گی بلدیات کے لیے ہر شہر میں تو فوکل پرسن ہر بلدیات کا سوشل میڈیا اکاؤنٹ ٹیوٹر اکاؤنٹ بنوائے گا جس سے اس شہر کی عوام گھر بیٹھے اپنے مسئلے ٹوئٹر پر شیئر کریں گے فوکل پرسن کو اور بلدیات کے اداروں کو ٹھیک کرتے ہوئے اور فوکل پرسن ان مسلوں کو جلد از جلد حل کروانے کی کوشش کرے گا اس طرح سے ہر شہر کی کاردگی بہتر سے بہتر ہوتی چلی جائیگی کیونکہ لاہور میں بیٹھے گورنمنٹ پنجاب کے افسروں  کو نہیں پتا  کے چھوٹے شہروں میں کہاں پر کام نہیں ہو رہا اور کہاں پر توجہ کی ضرورت ہے یہ کام صرف اسی شہر کے نمائندے ہی کر سکتے ہیں اور یہ کام حکومت پنجاب کو کرنا چاہیے اگر وہ بلدیات کا الیکشن جیتنا چاہتے ہیں تو اگر ایسا نہ کیا گیا تو بہت سے شہروں میں بہت سے معاملات ہیں جن کی بنا پر بہت سے شہروں سے تحریک انصاف الیکشن ہار سکتی ہے لیکن اگر یہ اقدام اٹھایا جائے تو عوام کے لیے بھی سہولت ہو جائے گی اور حکومت پنجاب کی کارکردگی بھی  بہتر ہو جائے گی
Twitter: @usamajahnzaib

Facebook Notice for EU! You need to login to view and post FB Comments!