بلوچستان بدلنے لگا، بلوچ اب خون لینے والے نہیں‌ بلکہ خون دینے والے بن گئے، کوئٹہ میں بلوچستان بلڈ بینک کا افتتاح

0
67

کوئٹہ:بلوچستان بھی بدلنے لگا. امن وامان کی صورت حال بہتر ہونے لگی،بلوچستان میں‌اب کوئی خون لے گا نہیں بلکہ خون دینے کا جزبہ پیدا ہوگیا ہے. اس سلسلے میں بلوچستان کے صوبائی دارالحکومت کوئٹہ میں بلوچستان بلڈ بینک کا افتتاح کردیا گیا ، اس بلڈ بینک کے افتتاح پر صوبائی وزیر صحت میر نصیب اللہ مری کا کہنا تھا کہ یہ صدقہ جاریہ ہے۔

صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے صوبائی وزراء، سیاسی و سماجی شخصیات نے بلوچستان بلڈ بینک کے قیام کو انقلابی اقدام قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ ایک انسان کی جان بچانا پوری انسانیت کو بچانے کے مترادف ہے ، بلوچستان بلڈ بینک نہ صرف ایک فلاحی ادارہ ہے بلکہ یہ قومی ورثے کی حیثیت رکھتا ہے جس کی دیکھ بھال معاشرے کے تمام طبقات کی ذمہ داری ہے ، صحت کا شعبہ حکومت کی اولین ترجیحات میں شامل ہے جس پر کوئی کمپرومائز نہیں کیا جائے گا ،

بلوچستان بلڈ بینک کوئٹہ کے عوام کے لئے ایک ایسا تحفہ ہے جس سے نہ صرف کوئٹہ بلکہ پورے صوبے کے عوام مستفید ہوں گے۔ ان خیالات کااظہار صوبائی وزیر سماجی بہبود ، نان فارمل ایجوکیشن و انسانی حقوق میر اسد بلوچ، صوبائی وزیر صحت میر نصیب اللہ مری ،سیکرٹری صحت بلوچستان حافظ عبدالماجد ، بلوچستان نیشنل پارٹی ( عوامی ) کے مرکزی سیکرٹری اطلاعات ڈاکٹر ناشناس لہڑی و دیگر مقررین نے بدھ کے روز بلوچستان بلڈ بینک کی افتتاحی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔

صوبائی وزیر صحت میر نصیب اللہ مری نے کہا کہ بلوچستان بلڈ بینک کا قیام صدقہ جاریہ ہے جس کا افتتاح کر کے دلی مسرت ہورہی ہے عوام کو صحت کی سہولیات کی فراہمی کو یقینی بنانے کی بھر پور کوشش کررہے ہیں میر اسد اللہ بلوچ کی جانب سے بلوچستان بلڈ بینک کا قیام نہ صرف خوش آئند ہے.انہوں نے کہا کہ امید ہے کہ بلوچستان بلڈ بینک کی انتظامیہ ضرورت مندوں کو احسن طریقے سے خون عطیہ کر کے انسانیت کی خدمت میں پیش پیش ر ہے گی ۔

کوئٹہ میں صحافیوں سےگفتگو کے دوران صوبائی سیکرٹری صحت حافظ عبدالماجد نے کہا کہ جس قدر ممکن ہوگا بلوچستان بلڈ بینک کو سپورٹ کرینگے محکمہ صحت حکومت بلوچستان کی یہ اولین کوشش ہے کہ وہ عوام کو صحت کی یکسر سہولیات فراہم کرے بلوچستان بلڈ بینک ایک مثالی ادارہ ہوگا جہاں انسانیت کی خدمت ہوگی۔

Leave a reply