بینکوں کو غیرملکی کرنسی کی خریدوفروخت کی اجازت نہیں دی، سٹیٹ بنک کی وضاحت

اسٹیٹ بینک نے فارن ایکس چینج مینویل کے باب گیارہ میں ترمیم کی وضاحت کردی اور کہا ہے کہ بینکوں کو غیرملکی کرنسی کی خریدوفروخت کی اجازت نہیں دی،

باغی ٹی وی کی رپورٹ کے مطابق ترمیم سے قبل مجاز شاخوں کو کرنسی نوٹس، سکوں، ڈپازٹس، کریڈٹ، ڈرافٹس، ٹریولر چیک اور لیٹر آف کریڈٹ اور بلز اف ایکس چینج کی ادائیگی کی اجازت حاصل ہے، فارن ایکس چینج مینویل کے باب 11 میں ترمیم کرکے سکوں اور غیرملکی کرنسی کے لین دین میں اینٹی منی لانڈرنگ اور کسٹمر کی شناخت کے قواعد پر سختی سے عمل درآمدپر زور دیا گیا ہے،

اسٹیٹ بینک کی جانب سے کہا گیا ہے کہ ملک میں غیرملکی کرنسی کا لین دین بدستور فارن ایکس چینج ریگولیشنز ایکٹ 1947 کے تحت جاری رہے گا، فارن ایکس چینج پالیسی تبدیل نہیں کی گئی

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.