fbpx

سپریم کورٹ بارسمیت ملک بھر کی بارکونسل حکومتی رویے کے خلاف میدان میں آگئیں

اسلام آباد :سپریم کورٹ بارسمیت ملک بھر کی بارکونسل حکومتی رویے کے خلاف میدان میں آگئیں ،اطلاعات کے مطابق سپریم کورٹ بارسمیت پاکستان کی تمام بڑی بارکونسلوں نے حکومت کی طرف سے وکلا کے خلاف پکڑ دھکڑ اورپاکستان بھر میں غیرقانونی رکاوٹیں کھڑی کرنے کے خلاف احتجاج کیا ہے،

 

پاکستان بارکونسل نے وکلاء کے گھروں میں پولیس چھاپوں کی مذمت کی۔ پاکستان بار کونسل نے خبردار کیا کہ اگر گرفتاریاں نہ رکیں تو وکلا کے شدید ردعمل کیلئے تیار رہیں۔

چیئرمین ایگزیکٹو کمیٹی پاکستان بار پیر مسعود چشتی نے مطالبہ کیا کہ وزیراعظم اور وزیر داخلہ فوری طور پر گرفتار وکلاء کو رہا کریں۔ اگر وکلاء کی گرفتاریاں نہ رکیں تو پھر وکلاء برادری کا رد عمل آئے گا۔

پیر مسعود چشتی کا کہنا تھا کہ بابر اعوان کے گھر کے باہر پولیس کو فوری ہٹایا جائے۔ وکلاء نے عدالتوں میں پیش ہونا تھا مگر گرفتاریوں کی وجہ وہ عدالتوں میں پیش نہیں ہوئے۔

چیئرمین ایگزیکٹو کمیٹی پاکستان بار کونسل پیرمسعود چشتی نے مزید کہا کہ کسی بھی سیاسی جماعت کا احتجاج کرنا اس کا آئینی حق ہے اسے اس حق سے محروم نہیں کیا جا سکتا۔

اسلام آباد ہائیکورٹ بارایسوسی ایشن نے تحریک انصاف کالانگ مارچ روکنے کیلئے کی گئی راستوں کی بندش اور چھاپوں کیخلاف سپریم کورٹ میں درخواست دائر کردی۔

اسلام آباد ہائیکورٹ بار کے وکلا کی جانب سے سپریم کورٹ میں دائر کی گئی درخواست میں موقف اپنایا گیا ہے کہ راستوں کی بندش سے عدالتوں، اسپتالوں اور دفاتر جانے والے شہری مشکلات کا شکار ہیں۔ درخواست میں کہا گیا ہے کہ پولیس وکلا کے گھروں پر پولیس چھاپے مار رہی ہے جبکہ سیاسی ورکرز اور اراکین اسمبلی کو غیر قانونی طور پر ہراساں کیا جا رہا ہے۔

درخواست گزاران نے عدالت سے استدعا کی ہے کہ سپریم کورٹ حکومت اور اداروں کو تمام رکاوٹوں کو فوری طور پر ہٹانے کا حکم دے اور ریاستی اداروں کو کوئی بھی غیرآئینی قدم اٹھانے سے روکا جائے۔

دوسری جانب تحریک انصاف کے لانگ مارچ پر سپریم کورٹ بار ایسوسی ایشن نے بھی اعلامیہ جاری کرتے ہوئے کہا کہ سیاسی گرسرمیاں اور احتجاج ہر شہری کا بنیادی حق ہے، حکومت کسی بھی سیاسی جماعت کی سرگرمیوں میں رکاوٹیں کھڑی نہ کرے۔

اعلامیے میں کہا گیا ہے کہ سینئر وکیل بابر اعوان، فواد چوہدری کو اپنی ذمہ داریاں ادا کرنے سے روکنے اور وکلا کی گرفتاریوں کی شدید مذمت کرتے ہیں۔