ورلڈ ہیڈر ایڈ

بیگم زیب النسا حمید اللہ کا یومِ وفات

بیگم زیب النسا حمید اللہ کا یومِ وفات

آج معروف صحافی اور انگریزی زبان کی شاعرہ زیب النساء حمید اللہ کی برسی ہے.
بیگم زیب النسا حمید اللہ 25 دسمبر 1921ء کو تیجور کلکتہ میں پیدا ہوئی تھیں۔ انہوں نے اپنی صحافتی زندگی کا آغاز روزنامہ ڈان سے کیا۔ اکتوبر 1951ء میں انہوں نے کراچی سے مشہور انگریزی جریدے مرر کا اجرا کیا جو اپنے گیٹ اپ اور خبروں اور مضامین کی خوب صورت پیشکش کی وجہ سے بہت جلد پاکستان کا ایک مقبول جریدہ بن گیا۔ یہ جریدہ اپریل 1972ء تک جاری رہا۔ اس دوران اسے ایک مرتبہ بندش کا بھی سامنا کرنا پڑا مگر بیگم زیب النسا حمید اللہ نے اس بندش کو سپریم کورٹ آف پاکستان میں چیلنج کردیا۔ جہاں فیصلہ ان کے حق میں ہوا اور یوں مرر کی اشاعت دوبارہ بحال ہوگئی۔بیگم زیب النسا حمید اللہ انگریزی کی شاعرہ بھی تھیں ان کے شعری مجموعے The Indian Bouqet، The Lotus Leaves اور The Flute of Memory کے نام سے شائع ہوئے تھے۔
تقسیم ہند سے پہلے وہ انڈیا کے متعدد اخبارات میں لکھتی تھیں اور پہلی مسلمان خاتون تھیں جنہوں نے انڈین نیوز پیپرز میں کالم لکھے۔ قیام پاکستان کے بعد انہوں نے کراچی کے ایک انگریزی اخبار میں لکھنا شروع کیا۔ نیز انہیں پاکستان کی پہلی خاتون پولیٹیکل کمنٹیٹر کا اعزاز حاصل ہوا۔ 1940 میں زیب النساء کی شادی محمد حمید اللہ سے ہوئی جو جوتوں کی ایک کمپنی میں اعلیٰ عہدے پر فائر تھے
10 ستمبر 2000ء کو ممتاز انگریزی شاعرہ، ادیبہ اور صحافی بیگم زیب النسا حمید اللہ کراچی میں وفات پاگئی تھیں وہ کراچی میں آسودۂ خاک ہیں۔۔!!!!

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.