چیف الیکشن کمشنرحکومت کی غلطیوں میں شامل نہیں ہوئے ،شیری رحمان

پیپلز پارٹی کی رہنما سینیٹر شیری رحمان نے کہا ہے کہ حکومت اداروں کو اپنی انتقامی سیاست کے نظر نہ کرے

باغی ٹی وی کی رپورٹ کے مطابق سینیٹر شیری رحمان کا کہنا تھا کہ اب چیف الیکشن کمشنر سردار رضاخان کو ہٹانے کی کوشش کی جارہی ہے،چیف الیکشن کمشنرحکومت کی غلطیوں میں شامل نہیں ہوئے،حکومت اداروں کو تباہ کررہی ہے،سندھ کو بھی تقسیم کرنے کی ناکام کوشش ہو رہی ہے، حکومت اداروں کو اپنی انتقامی سیاست کے نظر نہ کرے ،ادارے کسی سیاسی جماعت کےنہیں ملک و عوام کی امانت ہیں،

 

حکومت نے چیف الیکشن کمشنر سردار رضا کے خلاف ریفرنس دائر کرنے کا فیصلہ کیا ہے ,سربراہ الیکشن کمیشن سردار رضا نے نئے الیکشن کمیشن اراکین سے حلف نہیں لیا تھا ،گزشتہ روز اجلاس میں ریفرنس دائر کرنے کےلیےقانونی مشاورت کی گئی ،حکومتی ریفرنس میں سردار رضا کو عہدے سے ہٹانے کی استدعا کی جائے گی.

 

الیکشن کمیشن کے 2 نئے اراکین کی تقرری غیر آئینی، الیکشن کمیشن حکومت کیخلاف ڈٹ گیا

واضح رہے کہ چیف الیکشن کمشنر نے 2 نئے ارکان الیکشن کمیشن سے حلف لینے سے معذرت کرتھی ،چیف الیکشن کمشنرنےوزارت پارلیمانی امورکو فیصلے سے آگاہ کردیا،چیف الیکشن کمشنر کا کہنا ہے کہ نئےممبران کی تقرری آرٹیکل 213 اور 214 کےمطابق نہیں ہوئی،نئےممبران کی تقرری آئین کی خلاف ورزی ہے،

افسوس، پارلیمنٹ پر حملہ کر دیا گیا، رضا ربانی نے ایسا کیوں کہا؟

بلوچستان سے منیراحمدکاکڑ اور سندھ سے خالد محمود صدیقی کوالیکشن کمیشن کا ممبر لیا گیا ہے ،صدرمملکت کی جانب سےدونوں نئےارکان کی الیکشن کمیشن میں تقرری کی گئی ہے .

الیکشن کمیشن کی اراکین کی تقرری، مسلم لیگ ن بھی میدان میں آگئی، مریم اورنگزیب کا بڑا اعلان

واضح رہے کہ وزارت پارلیمانی امور نے بلوچستان اور سندھ کے الیکشن کمیش کے ممبران کی تقرری کا نوٹی فکیشن جاری کردیا۔ وزارت پارلیمانی امور نے بلوچستان اور سندھ کے ممبران کی تقرری کا نوٹی فکیشن جاری کردیا۔ منیر احمد کاکڑ کو بلوچستان سے جبکہ خالد محمود صدیقی کو سندھ سے الیکشن کمیشن کے ممبرمقرر کیا گیا ہے

الیکشن کمیشن کے دو ممبران کی تقرری، خورشید شاہ کا قانونی کاروائی کا اعلان

الیکشن کمیشن کے دو ممبران کی تقرری پرمسلم لیگ ن اور پیپلز پارٹی نے بھی شدیداحتجاج ریکارڈ کروایا تھا

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.