کلین مہم نے کراچی کو مزید گندا کر دیا،وفاق ڈرامے بند کرے،سعید غنی

سندھ کے صوبائی وزیر اطلاعات سعید غنی نے کہا ہے کہ وزیراعظم کو کلین کراچی کی حقیقت کا پتہ چلےتوعلی زیدی کو برطرف کردیں،

باغی ٹی وی کی رپورٹ کے مطابق سعید غنی نے کراچی میں شہلا رضا اور راشد ربانی کے ہمراہ پریس کانفرنس سے خطاب  کرتے ہوئے کہا کہ کراچی میں کلین کراچی مہم شروع کی گئی ،کلین کراچی مہم نے کراچی کو مزید گندا کر دیا،وفاق نے ایک کمیٹی بنائی جس کے سربراہ گورنرسندھ تھے،پی ٹی آئی کے پاس کراچی کی 14 نشستیں ہیں،وفاق کراچی کے لیے کتنا سنجیدہ ہے،سمجھ سے بالاترہے،کراچی کیلیےبنائی گئی کمیٹی پر سندھ حکومت سے مشاورت نہیں کی گئی،

سعید غنی کا مزید کہنا تھا کہ کراچی صفائی مہم کہاں ہے اور صفائی کرنے والے کہاں گئے؟ تحریک انصاف نے کراچی میں300 آر او پلانٹ لگانے کا اعلان کیاتھا،کراچی کے لیے وفاق نے کمیٹی بنائی اور سربراہ گورنرکو بنایا ،حالیہ دنوں میں کلین کراچی مہم شروع کی گئی جس کے لیےچندہ اکٹھا کیا گیا،وزیراعظم نے کراچی کے لیے 162 ارب روپے کا اعلان کیا تھا،پی ٹی آئی حکومت نے جنوری میں چمکتا دمکتا کراچی مہم بھی شروع کی تھی،وفاقی حکومت کمیٹیوں کا ڈرامہ بندکرے،وفاق 162ارب روپےکےپروجیکٹس شروع کرے،

کراچی میں مکھیاں اور گندگی، عدالت نے میئر کراچی سے ایکبار پھر جواب طلب کر لیا

کراچی کے مسائل،اراکین کے وزیراعظم کو شکوے،خود کراچی جاؤں گا ،وزیراعظم

سندھ کے صوبائی وزیر اطلاعات سعید غنی نے مزید کہا کہ وزیراعظم نے کراچی کے لیے ایک اورکمیٹی بنادی ہے ،فروغ نسیم توکہتےہیں کمیٹی کچرے،پانی ودیگرمسائل بھی حل کرےگی، وزیراعظم کی بنائی گئی کمیٹی سفارشات مرتب کرے گی، وزیراعظم کوکلین کراچی کی حقیقت کاپتہ چلےتوعلی زیدی کوبرطرف کردیں،

وزیراعظم کمیٹی پر کمیٹی بنانے کی بجائے کراچی کو 162 ارب دیں،سعید غنی بھی میدان میں آ گئے

کراچی کے مسائل بے شمار،مستقل بنیادوں پر حل کرنا ہوں گے، وفاقی وزیر قانون

 

کراچی کو کمیٹیاں نہیں وسائل چاہیے، میئرکراچی وسیم اختر کا مطالبہ

سعید غنی نے مزید کہا کہ پنجاب حکومت فریال تالپور کو سندھ اسمبلی اجلاس میں نہیں آنے دے رہی ،ٹرائل شروع نہیں ہو پیشہ ورمجرموں جیسا سلوک کیا جارہاہے،فریال تالپور کے خلاف کوئی الزام ثابت نہیں ہواہے،13ستمبرکوفریال تالپورکوسندھ اسمبلی نہیں آنے دیا گیا توہم پنجاب جائیں گے .

وزیراعظم عمران خان نے کلین کراچی مہم جاری رکھنے کی ہدایت کرتے ہوئے مسائل کے حل کے لیے وزیر قانون کی سربراہی میں کمیٹی تشکیل دے دی۔ کمیٹی وزیر قانون، وزیر بحری امور، وزیر منصوبہ بندی، ڈی جی ایف ڈبلیو اور دیگر ممبران پر مشتل ہوگی۔ کمیٹی کو مجوزہ لائحہ عمل کے بارے میں سفارشات جلد از جلد پیش کرنے کی ہدایت کی گئی ہے

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.