موسمیاتی بحران ہر گھنٹے 1 کروڑ 16 لاکھ ڈالر نقصان کا سبب بن رہا ہے،تحقیق

سال 2000 سے 2019 تک اوسطاً 140 ارب ڈالر کا نقصان ہوا
0
73

لندن: ایک نئی تحقیق میں لگائے گئے اندازے کے مطابق شدید موسم کی وجہ سے پیدا ہونے والا موسمیاتی بحران گزشتہ 20 سالوں سے ہر گھنٹے 1 کروڑ 16 لاکھ ڈالر نقصان کا سبب بن رہا ہے۔

باغی ٹی وی : "دی گارڈین”میں شائع تحقیق کے مطابق حالیہ دہائیوں میں طوفان، سیلاب، ہیٹ ویو اور خشک سالی کے سبب ہزاروں اموات اور بڑے پیمانے پر عمارتیں تباہ ہوئیں اور وقت کے ساتھ عالمی تپش ان وقوعات میں شدت کا سبب بن رہی ہے۔

اپنی نوعیت کی اس پہلی تحقیق میں سائنس دانوں نے انسانی سرگرمیوں کی وجہ سے ہونے والی عالمی تپش کے براہ راست مالی نقصان کا تخمینہ لگایا تحقیق میں معلوم ہوا کہ سال 2000 سے 2019 تک اوسطاً 140 ارب ڈالر کا نقصان ہوا، اگرچہ سال بہ سال یہ ہندسے مختلف ہیں۔ تازہ ترین ڈیٹا کے مطابق 2022 میں موسمیاتی بحران 280 ارب ڈالر کے نقصان کا سبب بنا۔

کینیڈین حکومت نئی دہلی کے ساتھ کشیدہ سفارتی صورتحال کو حل کرنے کی کوششیں کر …

محققین کے مطابق ڈیٹا میں کمی (بالخصوص کم آمدنی والے ممالک کا ڈیٹا) کا مطلب نقصان کے تخمینے میں کمی ہے۔ جبکہ فصل کی پیداوار میں کمی اور سطح سمندر میں اضافہ اس تخمینے میں شامل نہیں کیے گئےمحققین نے حاصل کیے گئے ڈیٹا کی مدد سے شدید موسمیاتی وقوعات کے سبب ہونے والے مالی نقصان کا ڈیٹا مرتب کیاتحقیق میں یہ بات بھی معلوم ہوئی کہ دو دہائیوں سے زیادہ کے عرصے میں موسمیاتی بحران کے سبب 1.2 ارب لوگ متاثر ہوئے۔

نقصان کے اخراجات کا دو تہائی حصہ جانوں کے ضیاع کی وجہ سے تھا، جبکہ ایک تہائی جائیداد اور دیگر اثاثوں کے تباہ ہونے کی وجہ سے تھا، طوفان، جیسے کہ سمندری طوفان ہاروی اور سائیکلون نرگس، آب و ہوا کے اخراجات کے دو تہائی کے لیے ذمہ دار تھے، جن میں 1فیصد ہیٹ ویوز اور 10 فیصد سیلاب اور خشک سالی سے آئے۔

حیدرآباد،دکن:بابر اعظم نے گراؤنڈ سٹاف کو اپنی شرٹ تحفے میں دیدی

محققین نے کہا کہ ان کے طریقوں سے یہ اندازہ لگایا جا سکتا ہے کہ 2022 میں اقوام متحدہ کے موسمیاتی سربراہی اجلاس میں قائم کیے گئے نقصان اور نقصان کے فنڈ کے لیے کتنی فنڈنگ ​​کی ضرورت تھی، جس کا مقصد غریب ممالک میں شدید موسمی آفات سے بحالی کے لیے مدد کرنا ہے یہ انفرادی آفات کی مخصوص آب و ہوا کی قیمت کا بھی تیزی سے تعین کر سکتا ہے، جس سے فنڈز کی تیز تر فراہمی ممکن ہو سکتی ہے۔

نیوزی لینڈ کی وکٹوریہ یونیورسٹی آف ویلنگٹن کے پروفیسر ایلان نوئے نے کہا کہ ہیڈ لائن نمبر 140 بلین ڈالر سالانہ ہے اور، سب سے پہلے، یہ پہلے سے ہی ایک بڑی تعداد ہے”دوسرا، جب آپ اس کا موازنہ موسمیاتی تبدیلی کی لاگت کی معیاری مقدار (کمپیوٹر ماڈلز کا استعمال کرتے ہوئے)سے کرتے ہیں، تو ایسا لگتا ہے کہ یہ مقداریں موسمیاتی تبدیلی کے اثرات کو کم کر رہی ہیں۔

افغانستان میں ایک بار پھر شدید زلزلے کے جھٹکے محسوس کیے گئے

نوئے نے کہا کہ بہت سارے شدید موسمی واقعات ہوئے جن کے لیے لوگوں کی ہلاکتوں یا معاشی نقصان کے بارے میں کوئی اعداد و شمار موجود نہیں ہیں، اس سے ظاہر ہوتا ہے کہ ہماری 140 بلین ڈالر کی سرخی کی تعداد ایک اہم بات ہے، مثال کے طور پر، انہوں نے کہا، گرمی کی لہر سے ہونے والی اموات کا ڈیٹا صرف یورپ میں دستیاب تھا، ہمیں اس بات کا کوئی اندازہ نہیں ہے کہ سب صحارا افریقہ میں ہیٹ ویو سے کتنے لوگ ہلاک ہوئے۔

Leave a reply