fbpx

طیش میں آکرکمپنی کا سارا ڈیٹا بیس اڑانے والے آئی ٹی ایڈمنسٹریٹر کو سات برس قید کی سزا

بیجنگ: چین کے ایک آئی ٹی ایڈمنسٹریٹر نے غصے میں آکر اپنی کمپنی کا سارا ڈیٹا بیس ضائع کر دیا جس پر انہیں سات برس قید کی سزا سنائی گئی ہے۔

باغی ٹی وی :چینی میڈیا کے مطابق چین کی مشہور ریئل اسٹیٹ کمپنی لیانجا کےسابقہ ڈیٹا بیس ایڈمنسٹریٹر، ہین بِنگ نے یہ کام جون 2018 میں کیا تھا کمپنی کے دو ڈیٹابیس اور دو ایپلیکیشن سرورز کے وہ واحد نگراں تھے اور اپنے اختیارات کے ناجائز استعمال کیا۔

دبئی میں ناقابل یقین حد تک مہنگی اشیاء

انہیں ادارے کی جانب سے نوکری سے ہٹایا گیا تھا اور اسی کے پاداش میں ہین نے کمپنی کو نقصان پہنچانے کا منصوبہ بنایا تھااس کام پر نہ صرف کمپنی کے تمام کام ٹھپ ہوگئےبلکہ ہزاروں ملازمین تنخواہوں سےبھی محروم ہوگئےتھےبعد میں لگ بھگ 30 ہزار ڈالر خرچ کرکے کمپنی کا ڈیٹا بیس بحال کیا گیا اس طرح کمپنی کو 6 ارب ڈالر کا نقصان ہوا تھا۔

ڈیٹا بیس تباہ کرنے پر پانچ افراد پر الزام عائد کیا گیا اور اس کے بعد ہین بِنگ کا نام اس وقت سامنے آیا جب انہوں نے تفتیش کے دوران اپنے لیپ ٹاپ کا پاس ورڈ دینے سے انکار کردیا تفتیش کاروں کے مطابق اگر وہ ڈیٹا کو نقصان پہنچانے میں ملوث ہیں تو ان کے کچھ آثار لیپ ٹاپ میں مل سکتے ہیں۔

آخرکار تحقیق کاروں نے الٹا عمل شروع کیا اور ڈیٹا بیس تک آنے والی ہدایات کا سراغ لگایا اس کےعلاوہ سی سی ٹی وی فوٹیج سےبھی مدد لی گئی تحقیقی عملے نے “shred” اور “rm” کی کمانڈز تلاش کی جو بڑے ڈیٹا بیس کو تباہ کرنے کے لیے دی جاسکتی ہیں اس کے بعد ہین بِنگ کو گرفتار کیا گیا اور اب انہیں سات برس کی قید سزا دی گئی ہے۔

جرمن چانسلر نے برطانیہ پرجوہری حملے کی دھمکی کوروسی پاگل پن کا مظہر قرار دے دیا