fbpx

کورونا شاید اب کورونا نہ رہے:یورپین ممالک میں‌ ایک بحث:ماسک کی پابندی ختم

لندن:کورونا شاید اب کورونا نہ رہے:یورپین ممالک میں‌ ایک بحث:ماسک کی پابندی ختم،اطلاعات کےمطابق اسپین کے وزیر اعظم پیڈرو سانچیز نے اس سیزن کے وائرل فلو کی طرح COVID-19 کو ایک عام بیماری قرار دیتےہوئے اس کے حوالے سے یورپین برادری کی ایک متفقہ رائے لینے کے لیے رابطے شروع کردیئے ہیں‌

"صورتحال وہ نہیں ہے جس کا ہم نے ایک سال پہلے سامنا کیا تھا،” سانچیز نے اسپین کے کیڈینا ایس ای آر کے ساتھ ایک ریڈیو میٹنگ میں کہا۔ "میرے خیال میں ہمیں اب تک جس وبائی بیماری کا سامنا کرنا پڑا ہے اس سے ہمیں COVID کے ارتقاء کا ایک مقامی بیماری کی طرف جائزہ لینا ہوگا۔”

ان کا کہنا تھا کہ اس طرح کے اقدامات اٹھانے سے اس بات کو سمجھنے میں مدد ملے گی کہ کورونا اب وبائی مرض نہیں بلکہ موسمیاتی اور عارضی بیماری کے طور پردیکھا جائے گا، جیسا کہ یہ اس وقت موسمی انفلوئنزا کا سراغ لگاتا ہے،

اسپین کی طرف سے دباؤ اسی طرح یوروپی ممالک کی طرف سے سخت مزاحمت کا سامنا کرنا پڑسکتا ہے جو اس بیماری میں بُری طرح مبتلاہیں‌ ، جیسا کہ جرمنی جو ایک شدید حفاظتی ٹیکوں کا آرڈر پیش کرنے کی منصوبہ بندی کر رہا ہے ، اور فرانس ، جہاں صدر ایمانوئل میکرون نے کہا کہ انہیں غیر ویکسین شدہ افراد کو "پریشان” کرنے کی ضرورت ہے۔ تاکہ وہ ویکسین لگوا کر دوسروں کے لیے مسائل پیدا کرنے سے دور رہیں‌

اسپین کی اس تنظیم کی طرف سے کیے گئے اقدامات اس فریم ورک اس کی عکاسی کرتا ہے جو ملک میں انفلوئنزا کے بھڑک اٹھنے کے لئے استعمال ہوتا ہے۔ یہ بیماری کی لہروں کا اندازہ لگانے اور ان پر رد عمل ظاہر کرنے کے لیے منتخب ماہرین سے ٹیسٹ کی معلومات کا استعمال کرتا ہے

اسپینی حکام کا کہنا ہے کہ اس کو فلو کی حیثیت سے ڈیل کیا جائے گا اور ملک میں جو سخت پابندیاں ہیں ان کو ختم کردیا جائے گا تاکہ عوام الناس آزادانہ چل پھر سکیں اور اس سلسلے میں ماسک کی پابندی کو بالکل ختم کردیا جائے گا لیکن اس کےلیے پہلے یورپین ممالک کے ساتھ مشاورت ضروری ہے

Facebook Notice for EU! You need to login to view and post FB Comments!