fbpx

کورونا پرغلط حکمت عملی ،لاک ڈاون نے سری لنکا تباہ کردیا،صدرفرار،فوج میں بغآوت

کولمبو:کورونا پرغلط حکمت عملی ،لاک ڈاون نے سری لنکا تباہ کردیا،صدرفرار،فوج میں بغآوت جاری ہے اوراب تویہ خبریں بھی بڑی تیزی سے وائرل ہورہی ہیں کہ ملک کے وجود کوخطرات لاحق ہوگئے ہیں ،

 

 

اس حوالے سے سوشل میڈیا پروائرل ایک ویڈیو میں دیکھا جاسکتا ہے کہ صدراوردیگرعزیزواقارب کو نیوی کے جہازمیں بٹھا کرکسی نامعلوم منزل کی طرف لے جایا جارہاہے ،

 

 

کولمبوسے ذرائع کا کہنا ہے کہ فوج کے اندربغاوت پھیل چکی ہے اورکئی فوجی افسران توصدر کے ساتھ فرار ہونے کی کوشش کررہے تھے ، تاہم یہ پتہ نہیں چل سکا کہ یہ کون سے اعلیٰ فوجی افسران ہیں

 

سری لنکا میں حالیہ تباہی پرسری لنکن اوردیگرعالمی معاشی ماہرین کا کہنا ہے کہ سری لنکا کو جوآج دن دیکھنے پڑرہےہیں یہ اصل میں کورونا وبا کے دوران غلط حکمت عملی کا نتیجہ ہے جس کی وجہ آج ہرسری لنکن اپنی اوراپنے ملک کی بقا کی جنگ لڑرہا ہے ، یہ بھی کہا جارہا ہے کہ سری لنکا میں کورونا وبا کے دوران مکمل لاک ڈاون کی وجہ سے ملک معاشی تباہی کے دھانے پرپہنچ گیا اوراب سری لنکا عملی طور پردیوالیہ ہوچکا ہے اور دوسرے لفظوں میں سری لنکا کا دیوالیہ نکل چکا ہے

 

 

 

 

کولمبو: سری لنکا میں مشتعل مظاہرین نے صدارتی ہاؤس پر دھاوا بولا اور سوئمنگ پول میں تیراکی کرتے رہے اور صدر کے زیر استعمال لگژری آئٹمز دیکھتے رہے۔

غیرملکی خبررساں ادارے کی رپورٹ کے مطابق سری لنکا کے مظاہرین نے ہفتے کے روز کولمبو میں صدر گوٹا بایا راجا پکسے کی رہائش گاہ پر دھاوا بول دیا اور متعدد پولیس اور فوجی رکاوٹوں اور آنسو گیس کے گولے داغے جس کی ویڈیوز سوشل میڈیا پر وائرل ہو رہی ہیں اور کئی کلپس میں مقامی لوگوں کو پول میں تیراکی کرتے ہوئے دکھایا گیا ہے۔

 

دوسروں کو گھر میں گھستے ہوئے دیکھا گیا اور صدر کے ذاتی سامان کی تلاشی لی اس منظر نے سوشل میڈیا پر بہت سے لوگوں کو چونکا دیا ہے کیونکہ ملک میں ہنگامہ آرائی ختم ہونے سے انکاری ہے۔

 

ملک بھر میں بڑے پیمانے پر مظاہرے کیے جانے کے بعد بہت سے لوگوں نے سری لنکا کے بحران پر اپنا موقف بیان کیا۔

صدر کے سوئمنگ پول میں لوگوں کے اتفاق سے نہانے کی ویڈیو شیئر کرتے ہوئے لکھا کہ ’لوگوں نے مہنگائی کی وجہ سے ان کے گھر پر دھاوا بولا کیونکہ یہ خود عیش و آرام کی زندگی گزار رہے تھے۔

 

ملک میں اشیائے ضروریہ کے بحران پر تبصرہ کرتے ہوئے ایک اور ٹویٹر صارف نے لکھا، "شہریوں کے پاس کھانا، گیس نہیں ہے، لیکن، یہ عیش و آرام کی زندگی گزارنے کے لیے ہیں لیکن اب اس پر مظاہرین نے قبضہ کر لیا ہے۔”