fbpx

ننکانہ : قرآن محل کے نام پر کرپشن اور لوٹ مار،سٹور نما ایک کمرہ کی لاگت21 لاکھ روپے،انکوائری کاحکم

قرآن محل ننکانہ صاحب کی ناقص اور نامکمل تعمیر ,چہتے ٹھیکدار کو مکمل ادائیگی کر دی گئی
تقریبا21 لاکھ روپے کا ایک سٹور نما کمرہ, افسران ضلع کونسل آئی اینڈ ایس اور ٹھیکیدار کے چہرے بے نقاب ,ڈی سی ننکانہ صاحب نے تین روز میں انکوائری مکمل اور ایف آئی آر درج کروانے کا حکم دے
ننکانہ صاحب باغی ٹی وی (نامہ نگار احسان اللہ ایاز)قرآن محل ننکانہ صاحب کی ناقص اور نامکمل تعمیر چہیتے ٹھیکیدار کو مکمل ادائیگی کر دی گی تقریبا 21 لاکھ روپے کا ایک اسٹور نما کمرہ افسران ضلع کونسل آئی اینڈ ایس اور ٹھیکیدار کے چہرے بے نقاب ڈی سی ننکانہ نے تین روزہ میں انکوائری مکمل اور ایف آئی آر درج کروانے کا حکم دےدیا,ٹھیکدار اور اس کرپشن میں ملوٹ افسران ہاتھ پاٶں مارنے لگے
تفصیلات کے مطابق قرآن محل ننکانہ صاحب کے لیے 2021 میں ایک قراردار پاکستان پیپلز پارٹی کے ٹکٹ پر منتخب ہونے والے مونسپل کمیٹی ننکانہ صاحب کے کونسلر شہزاد جاوید نے پیش کی جس کو ہاؤس نے متفقہ طور پر پاس کیا کہ قرآن پاک کے شہید نسخوں اور مقدس اوراق کو بے حرمتی سے بچانے کے لیے ایک قرآن محل بچیانہ روڈ دھولر والے قبرستان کے قریب تعمیر کی جاۓ گا,جس کا سنگ بنیاد اس وقت کے چیئرمین بلدیہ چوہدی نعیم احمد نے 27 دسمبر 2021 کو رکھا ضلع کونسل کی برانچ آئی اینڈ ایس کے معتبر ذرائع کے مطابق یہ قرآن محل کا منصوبہ تقریبا21 لاکھ روپے سے مکمل ہونا تھا جو ایک سال گزر جانے کے باوجود مکمل نہ ہو سکا ہے اور اس کی جتنی بھی تعمیر ہوئی ہے وہ ورک آڈر کے بلکل بھی مطابق نہیں ہے لیکن اس کے باوجود ضلع کونسل کی برانچ آئی اینڈ ایس نے مکمل ادائیگی کر دی ہے اور اس کی ناقص تعمیر کے حوالے سے اسی وارڈ کے کونسلر اور قرارداد پیش کرنے والےجاوید شہزاد متعدد بار افسران کے علم میں لا چکے ہیں اور وہ بھی اب نہ معلوم وجوہات کی بنا پر متعلقہ افسران ضلع کونسل کی طرح خاموشی اختیار کر چکا ہے

ذرائع کا کہنا ہے کہ قرآن محل ننکانہ صاحب کے حوالےسے گزشتہ روز ایک میٹنگ ڈی سی ننکانہ صاحب احمر نائیک نے اپنے آفس میں چیف آفیسر میونسل کمیٹی راو انوار اور قائم مقام میونسپل آفیسر آئی اینڈ ایس مصدق گجر سے رپورٹ طلب کی تو دونوں افسران کی بات ایک نہ ہونے کی وجہ سے احمر نائیک نے سخت سرزنش کرتے ہوۓ تین روزمیں قرآن محمل کی ادھوری اور ناقص تعمیر کی انکوائری مکمل کر کے ٹھیکدار کے خلاف تین روز کے اندر اندر ایف آئی آر کے درج کروانے کا حکم دیا ہے ,ذرائع کا یہ بھی کہنا ہے کہ چیف آفیسر میونسپل کمیٹی راو انوار اورڈسٹرکٹ آفیسر آئی اینڈ ایس مصدق گجر کے درمیان میٹنگ کے بعد سخت جملوں کا بھی تبادلہ ہوا ہے جس میں راؤ انوار کا مؤقف تھا کہ اپ نے اپنے چہتے ٹھیکدار کونوازنے کی خاطرمکمل ادائیگی کرکےنا انصافی کی ہےجو سراسر غیر اخلاقی اور غیر قانونی عمل ہے ,ڈی سی ننکانہ صاحب کے احکامات کے بعد اس مبینہ کرپشن میں ملوٹ افسران اور ٹھیکیدار نے ہاتھ پاؤں مارنے شروع کر دیے ہیں
ویڈیو میں دیکھاجاسکتاہے کس طرح کاقرآن محل بنایا گیا ہے اور کتنی ہلکی کوالٹی کی اینٹیں و دیگر مٹیریل استعمال کیاگیا.