fbpx

دفتر میں ایک ایسا قانون نافذ جس پر بہت سے لوگوں نے تنقید کی ۔

دفتر میں ایک ایسا قانون نافذ جس پر بہت سے لوگوں نے تنقید کی ۔

باغی ٹی وی: یہ ہر ممالک کی بات یکساں ہے کہ ہرملک میں موجود دفاتر کا ایک ہی قانون ہوتا ہے۔ کہ دفاتر میں اگر کوئی ملازم اپنے مقررہ وقت سے تھوڑا سا لیٹ ہو جاۓ تو مالک اس کو کوئی نہ کوئی سزا یا غصے اور ناراضگی کا اظہار کرتا ہے ۔
مزید تفصیلات سے آگاہ کرتے ہوئے بتایا جاتا ہے کہ لیکن برطانوی شہر برمنگھم کے دفتر نے تو اس حوالے سے بڑا سخت نوٹس پیش کیا ہے ۔جس پر سوشل میڈیا پر اس حوالے سے کافی بحث ہو رہی ہے ۔

مزید یہ کہ اس دفتر میں کچھ دیر تو کیا اگر ایک منٹ بھی دیر ہو جاۓ تو اس پر سزا دی جاۓ گی۔اسی دفتر کے ایک شخص نے اپنے نام کو خفیہ رکھتے ہوۓ دفتر کے نوٹس بورڈ پر لگا تازہ حکمنامہ پوسٹ کیا ہے جس میں ایک منٹ کی تاخیر پر بھی سزا دینے کا کہا گیا ہے ۔
اس دفتر میں ایک نیا قانون نافذ کیا گیا ہے جس میں ایک منٹ بھی لیٹ ہونے پر چھے بجے کے بعد آپ کو 10 منٹ مزید کام کرنا ہو گا۔مثال کے طور پر یوں اگر آپ 10 بج کر 2 منٹ پر آتے ہیں تو آپ کو مزید اور 20 منٹ کام کرنا ہو گا ۔اور آپ کو پھر یہ کام کرنے کے بعد 6 بج کر 20 منٹ پر چٹھی ملے گی۔
مزید براں یہ کہ ملازم شخص جس نے یہ پوسٹ لگائی اس نے اس پوسٹ میں افسردگی کا اظہار کیا اور کہا کہ یہ کام کرنے کی جگہ اچھی نہیں ہیں ۔جہاں پر صرف 1 منٹ کی سزا کے بدلے اتنا زیادہ کام کرنا پر سکتا ہے ۔اور یہاں پر تنخواہ بھی کم دی جاتی ہے ۔

اس دفتر کے اس قانون پر بہت سے لوگوں نے تنقید کر کے اس کو غیر قانونی بھی قرار دیا ہے ۔کیونکہ صرف ایک منٹ کے پیچھے اتنا زیادہ کام ملازمین سے لیا جاتا ہے ۔اور بدلے میں نہ تو حوصلہ افزائی کی جاتی ہی اور نہ ہی تنخواہ زیادہ دی جاتی ہے ۔
کچھ افراد نے دفتر کے اس قانون پر تنقید کی ہی اور کچھ کا یہ بھی کہنا ہے کہ اگر ملازمین کو ڈھیل دے دی جاۓ تو یہ اس بات کا فائدہ اٹھا کر کام ٹھیک طرح سے نہیں کرتے ۔