fbpx

دلیپ کمار اور اردو زبان .تحریر : ندا ابرار

"یہ کون ہنس رہا ہے پھولوں میں چھپا ہوا
بہار کس کی دھن پر بے چین ہے۔

یہ الفاظ کانوں میں پڑتے ہی، ایک خوش شکل خوبصورت  چہرہ  ذہن میں آتا ہے وہ دلیپ کمار صاحب کا چہرہ ہے۔  دلیپ صاحب ہندی سنیما میں ‘ٹریجڈی کنگ’ کے نام سے مشہور ہیں ۔ انہوں نے ہندوستانی سنیما کو اپنی اداکاری سے اس طرح نوازا کہ ان کی فلمیں آج تک تقریبا  تمام عمر کے لوگوں کو خوش کرتی ہیں۔  دلیپ کمار صاحب جن کے ہونٹوں پر ہمیشہ مسکراہٹ رہتی تھی ، 11 دسمبر 1922 کو اِس وقت  کے پاکستانی شہر پشاور میں پیدا ہوئے۔  ان کا اصل نام محمد یوسف خان تھا اور انہوں نے اپنے کیریئر کا آغاز 1944 میں فلم جوار بھاٹا سے کیا تھا۔  انہیں اس فلم سے زیادہ شناخت نہیں ملی ، لیکن ایسا ہوا کہ بطور اداکار ان کا سفر شروع ہوا۔  تاہم ، "جواربھاٹا” کے تقریبا  تین سال بعد ، فلم ‘جگنو’ ایک کامیاب فلم تھی ، جس میں وہ اور نور جہاں ایک ساتھ کام کر رہے تھے۔  اس کے بعد ، ‘شہید’ ، ‘میلہ’ ، اور ‘اداز’ جیسی فلموں کے بعد ، وہ ایک کامیاب اداکار کے طور پر مشہور ہوئے۔  بہت سارے فلمی نقادوں کا خیال ہے کہ دلیپ صاحب  کی اداکاری حقیقت پر مبنی اداکاری تھی، جس کے ذریعے انہوں نے ہندوستانی سنیما کی اداکاری میں ‘حقیقت پسندی’ قائم کی۔

ایک انٹرویو میں دلیپ کمار کہتے ہیں کہ ان کے والد فلموں کے سخت خلاف تھے۔ ان کے دوست ‘لالہ بیسشور ناتھ جن کو دنیا  ‘پرتھویراج کپور’ کے نام سے جانتی ہے سے دلیپ صاحب کے والد اکثر  شکایت کرتے تھے کہ ان کے صاحب زادے کیا کام کررہے ہیں؟  یعنی یہ کوئی کام کیوں نہیں کرتا فارغ رہتا ہے ۔
کام نا کرنے کا لیکچر سن سن کر دلیپ صاحب  نے فلموں میں کام کرنا شروع کیا ، لہذا اس دوران انہوں نے اپنے والد کے غصے سے بچنے کے لئے اپنے نام "یوسف خان” کو اسکرین پر استعمال نہ کرنے کی بات کی تھی۔  تقریبا تین مہینوں کے بعد انھے ایک  کمرشل سے معلوم ہوا کہ ان کا نام اسکرین پر دلیپ کمار کے نام سے ڈالا گیا ہے۔
دلیپ صاحب  کو اردو سے بہت گہرا پیار تھا۔ انہے  شعر و شاعری میں بہت دلچسپی تھی۔
ٹام الٹر کہتا ہیں کہ جب وہ دلیپ صاحب سے  سے اپنی اداکاری کی ڈگری مکمل کرنے کے بعد ملا تو انہوں نے دلیپ صاحب سے پوچھا ، "دلیپ صاحب اچھی اداکاری کا راز کیا ہے؟”  دلیپ صاحب نے انہیں بہت آسان جواب دیا ، شعر و شاعری”۔  ٹام الٹر کے بقول ، اس نے اس جواب کے پس پردہ راز کی تلاش کی ، ایک لمبے عرصے تک کھوج لگائ جس سے ایک بات سمجھ میں آگئی کہ ہر مذاق والا اپنے مذاق کے ذریعہ کچھ کہنا چاہتا ہے۔  وہ جو کہنا چاہتا ہے وہ ایک چیز ہے اور وہ کس طرح کہنا چاہتا ہے وہ ایک بات ہے۔  شعر و شاعری ہمارے دماغ کو مستحکم کرنے کا سب سے آسان اور موثر طریقہ ہے۔  ایک شاعر چار مختلف حالتوں میں چار مختلف طریقوں سے ایک ہی بات کہہ سکتا ہے۔  تو کیا یہ ممکن نہیں ہے کہ ایک اداکار بھی چار مختلف ‘اظہار’ کے ساتھ اپنے آپ کو بیان کر سکے؟  ادیب اور شاعری ہماری سوچنے کے انداز میں ایک مختلف قسم کی گہرائی کا اضافہ کرتے ہیں ۔
دلیپ صاحب کے گھرانےمیں اداکاری سیکھنے کی بات بھی نہیں ہوسکتی تھی  ایسی صورتحال میں ، انہوں نے ادب اور شاعری سے اپنا رشتہ قائم کیا اور بہت سی کتابیں پڑھیں۔  فلموں میں کامیاب اداکار بننے کے بعد بھی وہ مشاعرے میں حصہ لیا کرتے تھے۔  جب انہیں مشاعرہ میں اسٹیج پر بلایا جاتا تھا ، اور وہ شعر بولنا شروع کرتے تھے تو ایسا لگتا تھا جیسے اس کی زبان سے پھول گر رہے ہوں۔  ایک مشاعرہ میں دلیپ صاحب  نے علامہ اقبال کی نظم "طلوع اسلام” کا ایک شعر پڑھا ،

جہاں میں اہل ایماں صورت خورشید جیتے ہیں
ادھر ڈوبے ادھر نکلے ادھر ڈوبے ادھر نکلے

اور کہا ، "وہ کیفیت جو اہل ایمان کی ہے وہ بھی اسی (اردو) زبان کی ہے۔”  ایسی بہت ساری کہانیاں ہوں گی جو اردو کے لئے دلیپ صاحب  کی محبت کو بیان کرتی ہیں۔
وہ ہم میں نہیں لیکن اپنی اداکاری اور خوبصورت زبان کی وجہ سے وہ تاریخ کے لیجنڈ تھے اور لیجنڈ رہے گے