fbpx

ڈی جی خان آرٹ کونسل 4 سال سے فنکاروں کیلئے کوئی فلاحی کام نہ کیا.عرفان بزدار

ڈیرہ غازی خان – ڈی جی خان آرٹ کونسل 4 سال سے فنکاروں کیلئے کوئی فلاحی کام نہ کیا.عرفان بزدار
باغی ٹی وی رپورٹ. ڈی جی خان آرٹس کونسل میں فنکاروں شوبز سے وابستہ افراد کے کے لیے چار سال سے کوئی فلاحی کام نہیں کیا جارہا نہ ہی فنکاروں شاعروں ادیبوں کی رجسٹریشن کا عمل مکمل کیا جارہا ہے دوسری طرف غیر قانونی طور پر خالی آسامیوں پر بھرتی جاری ہے یاد رہے یہ بھرتیاں بغیر اخبار اشتہار کے جاری ہیں جسکا آج تک کوئی کسی اخبار میں اشتہار جاری نہیں کیا گیا اپنے عزیز واقارب کو بھاری کم رقم لے کر بھرتی کیا جارہا ہے جس پر کہکشاں پروفارمنگ آرٹس فلم پروڈکشن و ایڈورٹائزنگ ایجنسی کے صدر عرفان خان بزدار نے اعلی حکام سے غیر قانونی بھرتیوں اور شوبز سے وابستہ افراد کے ساتھ ناروا سلوک رکھنے پرآرٹ کونسل میں ڈراموں کی اجازت نہ دینے ڈائریکٹر آرٹس کونسل سیلم قیصر کے خلاف قانونی کارروائی اور چار سال کے آڈٹ کا مطالبہ کرتے ہیں جب باقی شہر میں ہر آرٹس کونسل اپنے طور پر ڈرامے کررہی ہے کہ یہاں پر اپنے من پسند شاعروں اور اپنے خاص سنگروں جن کا زیادہ تر تعلق ملتان سے ہے کو صرف اجازت دی جاتی ہے ڈویژن کے کسی قسم کے دوسرے لوگوں کو اجازت نہیں دی جاتی آرٹ کونسل کے ساتھ عرصہ تیس سال سے زیادہ خدمات سر انجام دینے والے لوگوں کے لیے کونسل کے دروازے بندکئیے ہوۓ ہے ہم کمشنر ڈپٹی کمشنر سیکرٹری انفارمیشن اور وزیر ثقافت سے مطالبہ کرتے ہیں کہ ڈی جی خان آرٹس کونسل میں غیر قانونی بھرتیوں اور فنکاروں کےساتھ ناروا سلوک اور ایک سال سے زیادہ ہونے کو ہے ہماری ٹیم کو ڈرامہ کرنے کی اجازت نہیں دی جارہی، اب دو ماہ سے ایوارڈ تقریب کے لیے اجازت طلب کی کہ ایوارڈ تقریب کرانی ہے کس تاریخ کی درخواست دیں ڈپٹی ڈائریکٹر نعیم اللہ طیفل جواب دیتے ہیں نہیں وہ نہیں ہوسکتا کہ آپ نے پنجاب ٹیلنٹ ہنٹ میں ہمارے خلاف احتجاج کیا اگر ہم سے غلطی ہوگئی کسی جج سے غلطی ہوگئی تو آپ خاموش ہوکر مان جاتے ہماری بہت بدنامی ہوئی اس لیے آپ کو کونسل میں کسی پروگرام کی اجازت نہیں دے سکتے جب کہ عرفان خان بزدار ڈائریکٹر پروڈیوسر کا کہنا ہے کہ اسیٹج ڈرامہ کے لیے ڈائریکٹر آرٹس کونسل سیلم قیصر نے تین دفعہ سکرپٹ لیا آج تک ڈرامے کی اجازت نہیں دی اب ایوارڈ تقریب کے سلسلے میں ڈائریکٹر ڈپٹی ڈائریکٹر کو درخواست دینے کا کہتا ہے ڈپٹی کے پاس جانے پر وہ ڈائریکٹر کو ملنے کا کہتا ہے آخرکار انکار کردیا کہ ہم آپ کے اس پروگرام کی اجازت نہیں دے سکتے یاد رہے ابھی تک پنجاب ٹیلنٹ ہنٹ کے سرٹیفکیٹ بھی کسی کو نہیں دیئے گئے وہ ویسے کے ویسے پڑے ہیں جس پر کافی رقم خرچ کی گئی تھی