fbpx

ڈائٹنگ کے دوران کی جانے والی غلطیاں

روزانہ دوپہر ہری سبزیاں کھانے اپنے من پسند ڈرنکس اور چپس اسنیکس وغیرہ چھوڑنے اور ورزش وغیرہ کرنے کے باوجود بھی اگر آپ کے وزن پر زکوئی خاص اثر نہیں پڑ رہا ہے اوروزن کم کرنے کے لیے ہر طرح کی کوشش کرنے کے بعد بھی اگر کوئی نتیجہ حاصل نہیں ہو رہا تو پھر یہ دیکھیں کہ غلطی کہاں ہو رہی ہے ننانوے فیصد غذائیں جسم کو ایک طرح کے فریب کے ذریعے قابو میں لا کر دبلا کرتی ہیں عام طور پر ایسا بہت زیادہ توانائی والی غذاوں یا کیلوریز پر پابندی لگا کر کیا جاتا ہے یہ چیز ہمیشہ نا امیدی کی طرف لے جاتی ہے لہذا آپ نہایت ہی تھوڑا عرصہ اس کی پابندی کر پاتے ہیں اور وزن میں مزید اضافے کے ساتھ دوبارہ اپنی پرانی عادت پر آجاتے ہیں اس لیے نہ سوچیں کہ کچھ زبردست ہونے والا ہے کیونکہ جب ایسے نتائج حاصل نہیں ہوتے تو اس کا مقصد ہی ختم ہو جاتا ہے وزن کم کرنے کا صحیح طریقہ سب سے پہلے اچھی صحت کی طرف توجہ دینا ہے جب آپ کہ توجہ جسم کو صحت مند بنانے کی طرف ہو گی تو وزن خود بخود ہی کم ہو جائے گا
ورزش زیادہ اور کیلوریز کا استعمال کم کرنا:
بہت زیادہ ورزش اور غذا یا کیلوریز کا کم استعمال آپ کے نظام۔ہضم کو نہایت سست کر دیتا ہے جب آپ مناسب مقدار میں کیلوریز نہیں لیتے تو آپ کے جسم کا درجہ حرارت کم ہونے لگتا ہے جس سے نظام۔ہضم ہلکا ہو جاتا ہے اور اس کی کارکردگی پر اثر پڑتا ہے اور دل کی دھڑکن کم ہونے لگتی ہے جس کی وجہ سے جسم کو زیادہ توانائی کی ضرورت ہوتی ہے ان سب باتوں سے پتہ چلتا ہے کہ آپ کے جسم کے لیے یہ کیلوریز ناکافی ہیں اور جسم کو۔زیادہ توانائی کی ضرورت ہے

مقبول غذاوں اور مشروبات کی زیادہ مقدار بھی جان لیوا ہو سکتی ہے


پروٹین کی کمی:
کم پروٹین والا ڈائٹ پلان وزن میں کمی کی رفتار ہلکی کر دیتا ہے اس کی وجہ یہ ہے کہ جسم میں جگر اور ڈیٹوکس کرنے کی صلاحیت کا دارومدار پروٹین پر ہوتا ہے اور مضبوط جگر اور گلوکوز ہی تھائرائڈ ہارمونز بنانے کے لیے ضروری ہے اگر آپ زیادہ عرصے تک صحت مند جسم اور وزن میں کمی چاہتے ہیں تو آپ کو اپنی غذا میں ہلکا پروٹین ضرور شامل کرنا ہوگی

نٹی اسپنچ سیلیڈ لذیذ اور منفرد ذائقہ دار ریسیپی


غذا سے شکر کا بالکل خاتمہ کر دینا:
غذا سے شکر کو بالکل ختم کر دینے سے ہاضمہ خراب ہو جاتا ہے ساتھ ہہ جسم میں گلائیکو جن جمع رکھنے کی صلاحیت بھی ختم ہو جاتی ہے جو تھائرائڈ گلینڈ میں تبدیلی کر کے نظام ہضم کو صحیح رکھتا ہے ڈائٹ پلان کے ساتھ ورزش بھی نہایت ضروری ہے خوب پسینہ لانے والی اورسانس کو پھلانے والی ورزش کے بغیر آپ جسم کو شیپ میں نہیں لا سکتیں ورزش کا مقصد یہ نہیں کہ آپ نے تھوڑے عرصے کے لیے ورزش کر کے وزن کم کیا اور پھر چھوڑ دی ورزش کی آپ کے وزن کو ہمیشہ ضرورت ہے صحت مند رہنے کے لیے پابندی کے ساتھ ورزش کریں اور اسے کبھی نہ چھوڑیں اگر یہ سمجھنا کہ کھان چھوڑ کر آپ اپنی کیلوریز کم۔کر سکتی ہیں تو یہ بات صحیح نہیں وزن کم کرنے کے لیے کھانا چھوڑنا بالکل بے کار بات ہے اگر آپ کھانا چھوڑیں گی تو آپ کے اندر کھانے کی خواہش بڑھتی جائے گی دوسرا یہ کہ دن میں تھوڑا تھوڑا کئی مرتبہ کھانے سے جسم زیادہ بہتر طریقے سے کام کرے گا بہ نسبت اس کے دن بھر میں ایک یا دو مرتبہ خوب پیٹ بھر کر کھانا کھائیں عام خیال ہے کہ فیٹس جسم کو موٹا کرتے ہیں قدرتی ذرائع سے حاصل ہونے والے فیٹس کا استعمال سالوں سے کیا جا رہا ہے جن سے وزن میں کوئی خاص اضافہ نہیں ہوتا جب آپ فیٹس کے بغیر یا کم فیٹس والی چیز کا انتخاب کرتے ہیں تو اصل میں آپ زیادہ شکر اور کم فیٹس والی چیز کا انتخاب کررہے ہوتے ہیں کیونکہ پروٹین کو فیٹس کے ساتھ ملا کر لیا جاتا ہے اگر آپ کم فیٹس والی غذا کا استعمال کریں گے تو آپ کو پیٹ کم بھرا ہوا محسوس ہوگا اور آپ کو مزید کھانے کی خواہش ہوگی جس کہ وجہ سے آپ صحیح مقدار میں فیٹس لینے والے کے مقابلے میں پیٹ بھرنے کے لیے زیادہ کھائیں

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.