fbpx

ڈاکٹر کا اجتماعی عصمت دری کا شکار لڑکی کے علاج سے انکار

ڈاکٹر کا اجتماعی عصمت دری کا شکار لڑکی کے علاج سے انکار
میگھالیہ کے جنوبی گارو پہاڑی ضلع میں پولیس اجتماعی عصمت دری کی شکار ایک نابالغ خاتون کے علاج کرنے سے انکار کرنے پر ایک ڈاکٹر کے خلاف عدالت میں کارروائی کررہی ہے۔

ساوتھ ایشین وائر کے مطابق ڈاکٹر کے اس غیر انسانی عمل سے 14 سالہ لڑکی کو دوسرے اسپتال میں علاج کے لئے 75 کلومیٹر سفر کرنے پر مجبور ہونا پڑا۔ پولیس حکام نے ساوتھ ایشین وائر کو بتایا کہ وہ یہ معاملہ حکومت کے ساتھ ساتھ عدالت میں بھی اٹھا رہے ہیں۔اس کے دو پہلو ہیں۔ ایک انتظامی جس پر ہم اس معاملے کو حکومت کے سامنے اٹھا رہے ہیں۔ دوسرا قانونی پہلو ہے۔ جس کے لئے ہم عدالت جا رہے ہیں۔ اگر عدالت یہ کہتی ہے کہ ڈاکٹر کی کارروائی قابل فہم جرم ہے تو ہم اس کے خلاف مقدمہ درج کریں گے۔

ساتھ گارو ہلز کے سپرنٹنڈنٹ پولیس ، ریتوراج روی ایس نے ساوتھ ایشین وائر کو بتایاکہ بچی جسمانی طور پر ٹھیک ہونے کے باوجود صدمے میں تھی۔ انہوں نے مزید بتایا کہ پولیس نے چارافراد کو گرفتار کیا ہے۔ جنوبی گارو پہاڑیوں کے نونگلبیرا میں پیش آنے والے واقعے کے بعد ، متاثرہ لڑکی کو پولیس نے اسے مشرقی گارو ہلز ضلع کے ولیم نگر کے سرکاری زیر انتظام سول اسپتال پہنچایا جہاں کے ڈاکٹر نے اس بنیاد پر علاج کرنے سے انکار کردیا کہ یہ جرم کسی دوسرے ضلع میں ہوا ہے۔