fbpx

الیکٹرانک ووٹنگ:الیکشن کمیشن کا حکومت کوخط:اپوزیشن پریشان ہوگئی

اسلام آباد:الیکٹرانک ووٹنگ:الیکشن کمیشن کا حکومت کوخط:اپوزیشن پریشان ہوگئی ،اطلاعات کے مطابق آئندہ عام انتخابات میں جدید ٹیکنالوجی کے استعمال کے معاملے پر الیکشن کمیشن نے حکومت کو فنڈز جاری کرنے سے متعلق خط لکھ دیا ہے ، دوسری طرف ٹیکنالوجی کے ذریعے الیکشن کروانے کے حوالے سے الیکشن کمیشن کی رضامندی کی خبرسُن کراپوزیشن پریشان ہوگئی ہے

ذرائع کے مطابق ٹیکنالوجی کے ذریعے الیکشن کروانے کے خواہشمند الیکشن کمیشن کی جانب سے حکومت کو لکھے گئے خط میں کہا گیا کہ انتخابات کیلئے الیکشن کمیشن 8 لاکھ سے زائد ای وی ایم خریدے گا، الیکشن کمیشن کو ای وی ایم کی اسٹوریج کیلئے 3 ایکڑ زمین درکار ہوگی، الیکشن کمیشن نے ٹیکنالوجی کے استعمال سے متعلق اقدامات کرنے ہیں، الیکشن کمیشن کو ڈیٹا سینٹر، کنٹرول سینٹر، جدید لیب، پرنٹنگ اور ٹریننگ سیشنز کیلئے عمارت درکار ہے۔

خط میں مزید کہا گیا کہ وزارت پارلیمانی امور پلاننگ کمیشن نے عمارت کی تعمیر کیلئے فنڈز جاری نہیں کیے، ضروری انفراسٹرکچر کی تعمیر کے لئے فنڈز میں تاخیر سے پہلے ہی وقت کا ضیاع ہوچکا ہے، پلاننگ کمیشن سیکٹر ایچ 11 میں عمارت کی تعمیر کیلئے فنڈز جاری کرے، وزارت ہاؤسنگ اینڈ ورکس عمارت کی تعمیر کے لئے ترجیحی بنیادوں پر اقدامات کرے، ویئر ہاؤس بر وقت تعمیر نہ ہونے کے خدشہ کے پیش نظر حکومت کسی سرکاری عمارت میں جگہ مختص کرے۔

الیکشن کمیشن نے وزارت پارلیمانی امور سے معاملہ متعلقہ حکام تک پہنچانے کا مطالبہ کر دیا۔ الیکشن کمیشن نے ای وی ایم سٹوریج کے لئے حکومت کو کوہسار بلاک میں 2 فلور مختص کرنے کی تجویز دے دی۔

ادھر معتبرذرائع کا کہنا ہے کہ اپوزیشن خصوصا پی ڈی ایم اتحاد اس وقت اس فیصلے کو سن کر بہت پریشان ہے اور وہ پی ڈی ایم کا خیال ہے کہ اگرالیکشن کمیشن ہی ہتھیار ڈال دے گا توپھران کا اس طریقہ انتخاب کے خلاف جدوجہد بھی بے کار چلی جائے گی جس سے مطلوبہ مقاصد حاصل نہیں ہوسکیں گے