fbpx

ای وی ایم کا استعمال ایک اچھا قدم ہے، لیکن اپوزیشن کے اطمینان کے بغیر نہیں۔ تحریر: محمد اسعد لعل

یہ ایک ناقابل تردید حقیقت ہے کہ پاکستان میں ماضی میں ہونے والے تمام انتخابات کی شفافیت کو ہارنے والی جماعتوں نے متنازعہ بنایا تھا۔ یہاں تک کہ 2018 کے انتخابات ،جنہوں نے پی ٹی آئی کو اقتدار میں لایا، متنازعہ رہے کیونکہ بڑی اپوزیشن جماعتوں کا الزام ہے کہ نتائج میں ہیرا پھیری کی گئی تاکہ عمران خان کے بطور وزیر اعظم راستہ صاف ہو سکے۔

ایسی صورت حال میں ایک ایسے نظام کو متعارف کرانے کی اشد ضرورت ہے جو قابل اعتماد نتائج دے سکے، جس میں کسی کے لیے اس کی سچائی کو چیلنج کرنے کی کوئی گنجائش نہیں ہے۔ اس طرح انتخابی عمل میں ٹیکنالوجی کا استعمال صحیح قدم ہوگا، بشرطیکہ اپوزیشن کے تحفظات/ خدشات کو ان کے مکمل اطمینان سے حل کیا جائے۔

دوسرے لفظوں میں، اگر ٹیکنالوجی کا استعمال اہم ہے، تو اپوزیشن جماعتوں کی طرف سے جن خدشات کا اظہار کیا جا رہا ہے ان کا ازالہ بھی ضروری ہے۔

اور یہ دونوں فریقوں کے درمیان کھلے ذہن کے مذاکرات کے ذریعے ہی ممکن ہوگا۔ اگر اب کوئی اتفاق رائے کا طریقہ کار نہیں بنایا گیا تو 2023 کے انتخابات کے نتائج بھی ماضی کی طرح غیر واضح ہوں گے۔

پارلیمنٹیرین کا فرض ہے کہ وہ ملک کو درپیش تمام مسائل کا حل تلاش کریں۔ ایسے انتخابات کا انعقادہو جس کے نتائج تمام جماعتوں کے لیے قابل قبول ہوں۔

الیکٹرانک ووٹنگ مشینوں میں کسی خاص پارٹی کو فائدہ پہنچانے کے لیے ممکنہ ہیرا پھیری کے بارے میں الیکشن کمیشن آف پاکستان کی جانب سے اٹھائے گئے اعتراضات کو آسانی سے دور نہیں کیا جا سکتا۔حکومت کو چاہیئے کہ وہ ای سی پی کے اعلیٰ عہدیداروں سے منسوب کیے بغیر ان سب کا جواب دے۔

محض یہ الزام ہے کہ الیکشن کمیشن اپوزیشن کا ہیڈ کوارٹر بن گیا ہے یا الیکشن کمیشن نے رشوت قبول کی ہے ، یا دھمکی ہے کہ ای سی پی کی عمارتوں کو جلا دیا جائے گا ، اپوزیشن کے خدشات کو کمزور نہیں کر سکتا۔

اسی طرح، ایک وفاقی وزیر کا یہ مطالبہ ہے کہ چیف الیکشن کمشنر کو استعفیٰ دینا چاہیے، ای وی ایم کے انتظام کے بارے میں خوف کا جواب نہیں ہے۔ اگر حکومت سی ای سی کو ہٹانا چاہتی ہے تو اسے آئینی طریقہ اختیار کرنا چاہیے۔

وزیر سائنس شبلی فراز کی رپورٹ کردہ پیشکش ہے کہ اگر مقامی ای وی ایم قابل اعتماد نہیں ہیں تو انہیں کسی دوسرے ملک سے درآمد کیا جا سکتا ہے، اور یہ ایک معقول دلیل ہے۔ ان کا اصرار ہے کہ مقامی ای وی ایم کو ہیک نہیں کیا جا سکتا اور جو دعوے کو جھٹلاتا ہے اسے انعام کے طور پر 10 لاکھ روپے ادا کیے جائیں گے تاکہ ان کی وزارت کی تیار کردہ مشینوں کے مخالفین کو چیلنج کیا جا سکے۔

قوم نے گلیارے کے دونوں اطراف اپنے نمائندوں کو ووٹ دیا تھا تاکہ تمام مسائل حل ہوں۔ اس طرح منتخب نمائندوں کا فرض ہے کہ وہ تمام مسائل کا حل تلاش کریں۔ صرف کیچڑ اچھالنے سے کوئی فائدہ نہیں ہوگا۔ گلیارے کے دونوں اطراف کے عوامی نمائندوں کو یہ نہیں بھولنا چاہیے کہ ملک کو درپیش تمام مسائل کا حل تلاش کرنا ان کی اجتماعی ذمہ داری ہے۔ اگر وہ کسی ایسے طریقہ کار سے اتفاق کرنے میں ناکام رہے جو مستقبل کے انتخابات کے نتائج کو ناقابل تسخیر بنا سکتا ہے تو وہ ووٹروں کی توقعات پر پورا نہیں اتریں گے۔

پی ٹی آئی کے وزراء یہ اشارے دے رہے ہیں کہ حکومت ای وی ایم قانون پارلیمنٹ کے مشترکہ اجلاس سے منظور کرائے گی۔ اس میں کوئی شک نہیں کہ حکمران جماعت دونوں ایوانوں میں اپنی عددی طاقت کی وجہ سے ایسا کر سکتی ہے۔ لیکن اس طرح کا اقدام اپوزیشن جماعتوں کے موقف کو تبدیل نہیں کر سکتا۔

لہذا، انتخابی نتائج ای وی ایم کے استعمال کے بعد بھی متنازعہ رہیں گے۔ اور ان پر اربوں روپے کی سرمایہ کاری کا کوئی فائدہ حاصل نہیں ہو گا۔سمجھداری کا تقاضا ہے کہ دونوں فریق مل بیٹھ کر اپنے چھوٹے سیاسی مفادات سے بالاتر ہو کر کوئی حل تلاش کریں۔ اور اس مسئلے سے نمٹنے کے دوران، دونوں فریقوں کو یہ نہیں بھولنا چاہیے کہ اگلے انتخابات میں صرف دو سال باقی ہیں اور اس آئینی ذمہ داری کو پورا کرنے سے پہلے بہت کچھ کرنا باقی ہے۔

وفاقی وزیر اسد عمر کا کہنا ہے کہ اگلے انتخابات نئی مردم شماری اور حلقہ بندیوں کی نئی حد بندی کی بنیاد پر ہوں گے۔ یہ دونوں وقت لینے والی مشقیں ہیں۔ ہر کوئی جانتا ہے کہ 20 سال کے وقفے کے بعد منعقد ہونے والی 2017 کی مردم شماری کے نتائج ابھی تک کچھ جماعتوں نے قبول نہیں کیے۔

سندھی رہنماؤں کا الزام ہے کہ سندھ کی آبادی کو کم اور پنجاب کی آبادی کو دس ملین سے زیادہ سمجھا گیا ہے۔ یہ وسائل کی تقسیم میں فیڈریٹنگ یونٹ کے حصہ کو متاثر کرتا ہے۔

مختلف موضوعات پر مختلف جماعتوں کی پوزیشنوں کے درمیان پھنسے ہوئے فرق کو دیکھتے ہوئے، اگلے انتخابات کے لیے انتظامات کرنا وقت کے خلاف دوڑ ہوگی۔ اور مسئلہ کی سنگینی اس وقت بڑھ جاتی ہے جب کچھ رپورٹوں کے مطابق حکومت اگلے انتخابات شیڈول سے ایک سال قبل جولائی، اگست 2022 میں کرانے کے بارے میں سوچ رہی ہے۔

Facebook Notice for EU! You need to login to view and post FB Comments!