fbpx

گھر کے باہر احتجاج ، جمائما نے پولیس سے سیکورٹی مانگ لی

لندن:عمران خان پرحملے کےبعد سابقہ اہلیہ جمائما نےبرطانوی پولیس سےسیکورٹی مانگ لی ،اطلاعات کے مطابق سابق وزیراعظم عمران خان کی سابقہ اہلیہ جمائما خان نے پاکستان میں عمران خان پر ہونے والےحملے کےبعد اپنی سیکورٹی کےاسکاٹ لینڈ یارڈ کو خط لکھ دیا ہے

اس حوالے سے ڈیلی میل نے انکشاف کیا ہے کہ مظاہرین ان کے گھرکے سامنے نہ صرف احتجاج کررہے تھے بلکہ اس کے گھر میں گھسنے کی کوشش ہی نہیں کررہے تھے بلکہ اس کے بیڈ روم میں گھسنے کا دھمکیاں بھی دے رہے تھے ، جمائما خان کا کہنا تھا کہ اس دوران اسکاٹ لینڈ یارڈ کو چاہیے تھا کہ وہ ان کے خلاف ایکشن لیتے لیکن پولیس نے اس معاملے کو نظرانداز کردیا

یاد رہے کہ جنوبی مغربی لندن میں رچمنڈ پارک کے قریب جمائما خان کے بچپن کے گھر اورملی لاج کے باہر درجنوں مشتعل مظاہرین باقاعدگی سے اپنے سابق شوہر عمران خان کے خلاف احتجاج میں جمع ہوتے ہیں۔

دی میل آن سنڈے سے بات کرتے ہوئے جمائما خان نے انکشاف کیا کہ پچھلے آٹھ مہینوں کے دوران متعدد بار ہونے والے مظاہروں میں انہیں اور ان کے بچوں کے خلاف دی جانے والی پریشان کن دھمکیاں بھی شامل ہیں۔

میٹرو پولیٹن پولیس سے براہ راست اپیل میں 48 سالہ جمائما خان نے گزشتہ ہفتے پاکستان میں اپنے سابق شوہر کو قتل کرنے کی ناکام کوشش کے بعد اپنے خاندان کی حفاظت کے لیے مزید اقدامات کرنے کی اپیل کی۔

ڈیلی میل نے لکھا ہے کہ 70 سالہ سابق کرکٹ اسٹار اور پاکستان کے وزیر اعظم، کو جمعرات کو صوبہ پنجاب میں ایک ریلی کے دوران ایک بندوق بردار کی فائرنگ کے بعد اوپری ران اور نچلی ٹانگ میں گولی لگی۔

ڈیلی میل نے لکھا ہے کہ سن 2004 میں جوڑے کی طلاق کے باوجود جمائما خان اور ان کا خاندان لندن میں عمران خان کے سیاسی حریف نواز شریف کے حامیوں کے ناراض مظاہروں کا مرکز بن گئے ہیں۔اس پیغام میں خان کے دو بیٹوں، سلیمان اور قاسم، دونوں کی 20 سال کی عمر میں، اور خاندان کے ایک اور فرد کی سرخ کراس کے ساتھ ایک خوفناک تصویر شامل تھی۔