fbpx

فلمیں اچھی بنی ہوں تو بائیکاٹ کلچر کچھ نہیں بگاڑ سکتا راکیش روشن

اداکار سے فلمساز بنے راکیش روشن نے بالی ووڈ کی حالیہ فلموں کی باکس آفس پر ناکامی کی وجہ پر بات کی ہے انہوں نے فلم سازوں کی طرف سے موضوعات کے انتخاب پر سوال اٹھانے کے علاوہ، اس بات پر بھی افسوس کا اظہار کیا کہ گانوں اور میوزک میں ہم کس طرح‌سے پیچھے رہ گئے ہیں. اگرچہ پورا بالی وڈ یہ سمجھتا ہے کہ بائیکاٹ کے کلچر نے بالی وڈ کو بہت نقصان پہنچایا ہے لیکن راکیش روشن زرا اس سے مختلف خیال رکھتے ہیں ان کا کہنا ہے کہ ” اگر فلم اچھی بنی ہو تو یقینا وہ چلے گی”. راکیش روشن نے اپنے ایک حالیہ انٹرویو میں کہا ہےکہ اس وقت جو فلمیں بن رہی ہیں ان کی کہانیوں میں لوگوں‌کو دلچسپی نہیں ہے. ایسی فلمیں نہیں بن رہیں جنہیں لوگ پسند کریں اور دیوانہ وار جا کر سینما گھروں میں

دیکھیں. راکیش روشن نے اس بات پر زور دیتے ہوئے کہا کہ ماضی میں کس طرح سے گانوں نے فلموں‌ کی کامیابی میں اہم کردار ادا کیا. یاد رہے کہ راکیش روشن نے اپنے بیٹے ہرتیک روشن کو اپنی ہی ڈائریکٹ کردہ فلم کہو نہ پیار سے ہے لائچ کیا یہ فلم بہت بڑی ہٹ ثابت ہوئی اور ہرتیک روشن راتوں رات سٹار بن گئے. راکیش روشن نے کرش جیسی فلمیں بھی بنائیں. راکیش روشن بالی وڈ کے ایک کامیاب فلمساز مانے جاتے ہیں.