fbpx

مچھلیاں انسانیت کے استعمال کے لئے قدرت کی طرف سے برکت ہے:وفاقی سیکرٹری بحری امور

اسلام آباد:مچھلیاں انسانیت کے استعمال کے لئے قدرت کی طرف سے برکت ہے:اطلاعات کے مطابق وفاقی سیکرٹری بحری امور رضوان احمد کی چیئرمین انفوفش کے ہمراہ ٹیکنیکل ایڈوائزری بورڈ (ٹی اے بی) کے 34 ویں ورچوئل اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے قدرت کی نعمتوں کی قدر کرنے کی نصیحت کی

وفاقی سیکرٹری کا کہنا تھا کہ مچھلیاں انسانیت کے استعمال کے لئے قدرت کی طرف سے برکت ہے،دونوں رہنماؤں نے مچھلیوں کے وافر وسائل کی اہمیت پر روشنی ڈالی

ان کا کہنا تھا کہ اقوام متحدہ کی خوراک اور زراعت کی تنظیم (ایف اے او) کے مطابق مچھلی کے عالمی ذخائر کا تقریبا 90 فیصد یا تو مکمل طور پر مچھلیوں سے لیس ہے یا زیادہ مچھلیاں پکڑی جاتی ہیں

1987 سے یہ ایک بین الحکومتی تنظیم ہے جو ایشیا ء بحرالکاہل کے خطے اور اس سے آگے کوالالمپور، ملائیشیا میں اپنے صدر دفتر سے ماہی گیری کی صنعت کو مارکیٹنگ معلومات اور تکنیکی مشاورتی خدمات فراہم کر رہی ہے۔ اس وقت بارہ ممالک انفوفش کے رکن ہیں جن میں بنگلہ دیش، کمبوڈیا، فجی، ایران، ملائیشیا، مالدیپ، پاکستان، پاپوا نیو گنی، فلپائن، جزائر سلیمان، سری لنکا اور تھائی لینڈ شامل ہیں۔ اس کی سرگرمیوں میں خریداروں اور فروخت کنندگان کو اکٹھا کرنا شامل ہے،

موجودہ اور طویل مدتی مارکیٹنگ معلومات کی اشاعت اور تکنیکی مشاورتی اور خصوصی خدمات کا آپریشن۔ نمائشوں، کانفرنسوں، ورکشاپس، سیمیناروں اور تربیتی پروگراموں کے انعقاد کے علاوہ انفوفش ماہی گیری کے تمام پہلوؤں یعنی فصل کی کٹائی سے پہلے، فصل کی کٹائی اور فصل کے بعد کے بارے میں مشاورت کا کام کرتا ہے۔

چیئرمین انفوفش نے انفوفش کے فورم سے ماہی گیری کے شعبے کی ترقی میں رکن ممالک کی مسلسل حمایت کی یقین دہانی کرائی اور امید ظاہر کی کہ خطے کو انفوفش سے زیادہ سے زیادہ فائدہ ملے گا جس کے نتیجے میں بالآخر خطے میں ماہی گیری کے شعبے کی ترقی ہوگی۔

ٹیکنیکل ایڈوائزری بورڈ کے اجلاس میں 11 ممالک (پاکستان، سری لنکا، تھائی لینڈ، فلپائن، بنگلہ دیش، فجی، ملائیشیا، مالدیپ، سالمن آئی لینڈ اور پاپوا نیو گنی) نے مبصرین (ورلڈ فش سینٹر، این اے سی اے اور ایف اے او) کے ہمراہ شرکت کی۔

Facebook Notice for EU! You need to login to view and post FB Comments!