fbpx

نیپال کرکٹ ٹیم کے سابق کپتان جنسی زیادتی کیس میں گرفتار

کھٹمنڈو: کھٹمنڈو پولیس نے نیپالی قومی کرکٹ ٹیم کے سابق کپتان سندیپ لامیچھانے کو نابالغ کے ساتھ جنسی کرنے کے الزام گرفتار کر لیا۔ پولیس نے سندیپ کو جمعرات کے روز کھٹمنڈو کے تریبھون بین الاقوامی ہوائی اڈے گرفتار کر کیا۔

 

واضح رہے کہ سابق کرکٹر نے جمعرات کی علی الصبح ایک فیس بک پوسٹ میں کہا کہ "اپنے آپ کو نیپال اتھارٹی کے حوالے کرنے کے عہد کے مطابق وہ صبح 10:00 بجے قطر ایئرویز کے ذرئعے کھٹمنڈو کے تریبھون بین الاقوامی ہوائی اڈے پر اتر رہے ہیں۔”25 سالہ قومی ٹیم کے سابق کپتان نے اپنے اوپر لگے الزامات کی تردید کرتے ہوئے استغاثہ اور الزامات کے خلاف قانونی لڑائی لڑنے کرنے کا اعلان کیا۔

پچھلے 24 گھنٹوں میں کیا ہوا اوراگلے 24 گھنٹوں میں کیا ہونے والا ہے:خبرآگئی

انہوں نے کہاکہ انہیں یقین ہے کہ انصاف ملے گا اور اپنے پیارے ملک کا نام اور شہرت بنانے کے لیے جلد کرکٹ گراؤنڈ میں واپسی کریں گے اور میں جلد ٹرائل کے لیے دعا گو ہوں۔ وہ تحقیقات کے تمام مراحل میں مکمل تعاون کرنے اور قانونی جنگ لڑنے کا اعلان کیا ہے۔ انہوں نے اپنی بے گناہی ثابت کرنے کے لیے عدلت کا دروازہ کھٹکھٹایا ہے۔

عالمی ادارہ صحت نے پاکستان کیلئے ہیلتھ ایمرجنسی کی اپیل کردی

قابل ذکر ہے کہ ایک 17 سالہ لڑکی نے مقدمہ درج کراتے ہوئے الزام لگایا کہ 21 اگست کو لامیچھانے اسے کھٹمنڈو اور بھکتا پور کے مختلف مقامات لے گئے اور کھٹمنڈو کے سینامنگل کے ایک ہوٹل میں اسی رات ان کے ساتھ جنسی زیادتی کی۔کھٹمنڈو ڈسٹرکٹ کورٹ نے نیپال کے امیگریشن ڈپارٹمنٹ کے ساتھ ایک 17 سالہ نابالغ کی جنسی زیادتی کے معاملے میں اس کے خلاف گرفتاری کا وارنٹ بھی جاری کیا ہے۔ گرفتاری کے وارنٹ جاری کیے جانے کے بعد پولیس نے پہلے ہی سندیپ لامیچھا کی گرفتاری مہم شروع کردی۔

بھارتی پولیس اہلکاروں کا مسلمان نوجوانوں کو کھمبے سے باندھ کر بدترین تشدد