fbpx

پرویز خٹک کے حلقہ کے ایک اسکول کے سارے طلبہ امتحان میں فیل

ایک ٹوئیٹر صارف عارف علی اعوان نے ایک عدد لیسٹ شیئر کرتے ہوئے دعوی کیا کہ گورنمنٹ ہائیر سکنڈری سکول مانکی شریف کے تمام طلبہ امتحان میں فیل ہوگئے ہیں. انہوں نے مزید وضاحت کی یہ سابق وزیر اعلی اور وزیر دفاع پرویز خٹک کا خلقہ ہے اور یہاں‌خیبر ہختونخواہ حکومت کی تعلیمی ایمرجنسی کی حالت یہ ہے.


اس بارے مقامی صحافی علی خان یوسفزئی نے خیبر پختونخواہ حکومت پر تنقید کرتے ہوئے کہا کہ: نو سال سے خیبر پختوانخواہ میں قابض تحریک انصاف کی تعلیمی ایمرجنسی کا یہ نتیجہ نتیجہ ہے جس میں ایک اسکول کے سارے طلبہ امتحانی پرچہ جات میں مکمل طور پر ناکام ہوگئے ہیں.

اس حوالے سے باغی ٹی وی کے نمائندہ خصومی، اسلام آباد ملک رمضان اسراٰء نے سابق وزیر دفاع اور وزیر اعلی خیبر پختونخواہ پرویز خٹک سے رابطہ کیا تاہم انہوں نے اس بارے میں تاحال کوئی جواب نہیں دیا ہے.

اس امتحان میں ناکام ہونے والے طلبہ کے علاقہ مانکی کے رہائشی نے نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پر بتایا کہ: ہمارے علاقوں میں تعلیمی سطح پر کوئی توجہ نہیں دی جاتی ہے انہوں دعوی کیا کہ میں نے کئی مرتبہ تعلیم بارے ناقص کارکردگی پر شکایت کیلئے پرویز خٹک سے رابطہ کیا مگر انہوں نے جواب نہ دیا جبکہ کئی بار ملنے کی کوشش کی تھی جب وہ وفاقی وزیر تھے تو انہوں نے ملاقات تک کا وقت نہیں دیا تھا.

ایک ٹوئیٹر صارف زبیر زرگر نے کہا کہ: مانکی شریف سابق وفاقی وزیر دفاع، وزیر اعلی اور رہنماء‌تحریک انصاف پرویزخٹک کا حلقہ ہے اور ان دس سالوں میںان کی جماعت تحریکانصاف نے اس صوبہ میں لوٹ مار کے علاوہ کوئی کام نہیں کیا ہے.

انہوں نے مزید کہا کہ: نہ ہی کوئی نئی یونیورسٹی تعمیر کی گئی اور نہ کوئی نیا کالج اور اسکول بنایا گیا حتکہ موجودہ بلڈنگ میں موجود عملہ کو ٹھیک کرنے کی کوشش بھی نہیں کی گئی۔ انہوں‌ نے الزامعائد کیا کہ اس صوبہ کی کابینہ کے کئی وزیر خود پرائیویٹ سکولوں اور کالجوں کے مالک ہیں اور اُن کو مارکس اچھے ملتے ہیں جبکہ عام آدمی کیلئے کچھ بھی نہیں کیا گیا ہے.