fbpx

غفلت کی نیند اور زندگی کی بربادی تحریر : حلیمہ اعجاز ملک

کسی نادان شخص کی طرح ہم بھی اپنی زندگی کے قیمتی لمحات کو رضائے الٰہی کے حصول میں گزارنے کے بجائے غفلت یا گناہوں میں گزار دیتے ہیں اگر کبھی ضائع ہونے والے ان قیمتی لمحات کا حساب لگانا چاہیں تو شاید ہمارے لیے ممکن نہ ہو

البتہ کوشش ضرور کرتے رہنا چاہیے اس لیے کہ وقت ایسی نعمت ہے جو سب جو یکساں ملتی ہے

یہ نہیں کہا جا سکتا کہ غریب کے لیے دن رات میں 24 گھنٹے ہیں تو امیر کے لیے 27۔ بلکہ اللّٰه نے ہم میں سے ہر ایک کو دن رات کی صورت میں 24 گھنٹوں میں 1440 منٹ یا 86400 سیکنڈ عطا فرمائے ہیں- اب یہ ہم پر ہے کہ کون ان اوقات کی قدر کرتا ہے اور کون برباد کیونکہ ایک نہ ایک روز اس زندگی کا اختتام ہونے والا ہے

حضرت حسن بصری ؒ فرماتے تھے کہ :

"اے ابنِ آدم! تو مختلف مرحلوں کا مجموعہ ہے جب بھی تیرے پاس سے دن یا رات گزرتے ہیں تو تیرا ایک مرحلہ ختم ہو جاتا ہے اور جب تیرے تمام مراحل ختم یو جائیں گے تو تو اپنی منزل یعنی جنت یا جہنم تک پہنچ جائے گا”

خود کے ساتھ انصاف کیجیے اور غفلت کی نیند سے جاگ کر اپنی زندگی کا قیمتی وقت رائیگاں ہونے سے بچائیں کامیابی آپ کا مقدر ٹھہرے گی۔

@H___Malik