کراچی، گندے نالے بپھرنے سے پانی گھروں میں داخل، نکاسی آب اور صفائی کا فنڈ کہاں گیا؟ شہری پھٹ پڑے

کل ملک بھر میں عید الاضحیٰ منائی جارہی ہے اور کراچی میں‌ یہ صورتحال ہے کہ بارشوں سے نظام زندگی اس بری طرح معطل ہوا ہے کہ نصف شہر پانی میں‌ ڈوبا ہوا ہے، کراچی کی ہر سڑک، گلی اور محلہ بدانتظامی اور لاوارث ہونے کی داستان بنی ہوئی ہے،

باغی ٹی وی کی رپورٹ‌کے مطابق کراچی کی سڑکوں‌ پر لوگ کرنٹ لگنے سے مر رہے ہیں، نکاسی آب اور نالوں کی صفائی کے نام پر فنڈز کہاں گئے؟ صفائی نہ ہونے سے گندا نالوں‌ کا پانی اس زور سے نکلا ہے کہ علاقوں کے علاقے پانی میں‌ ڈوب گئے ہیں، گولیمار ندی اوور فلو ہو گئی اور اطراف کی بستیوں میں پانی داخل ہو گیا ہے، ایئرپورٹ کے اطراف میں بھی آبادیاں زیر آب ہیں،

کراچی میں لیاقت آباد نمبر چار میں ندی کا پانی گھروں میں داخل ہو گیا ہے، کراچی میں گلشن اقبال میں بھی صورتحال انتہائی خراب ہے، پی ٹی وی کی بلڈنگ بھی پانی میں‌‌ ڈوبی ہوئی ہے اور بلاول ہاؤس کے باہر بھی پانی کھڑا ہے،

کراچی میں شدید بارشوں اور ہر طرف پانی کی وجہ سے بیماریاں پھوٹنے کا اندیشہ ہے، اس صورتحال کو دیکھتے ہوئے محکمہ صحت نے اس حوالہ سے وارننگ جاری کی ہے اور کہا ہے کہ بارشوں کے سبب پانی کھڑا ہونے سے ڈینگی، گیسٹرو اور اسہال سمیت متعدد بیماریاں علاقوں کو اپنی لپیٹ میں لے سکتی ہیں اس لئے شہریوں‌ کو خاص طور پر احتیاط کرنی چاہیے،

ادھر کراچی میں شدید بارشوں‌ سے متاثرہ علاقوں میں پاک فوج، بحریہ کے جوان امدادی کاروائیوں میں مصروف ہیں اور پانی میں پھنسے ہوئے لوگوں کی مدد کی جارہی ہے، کراچی میں شدید بارشوں کے سبب ایمرجنسی نافذ کر دی گئی ہے، پانی لوگوں کے گھروں‌میں‌داخل ہو چکا ہے اور شہریوں‌ کو سخت مشکل پیش آرہی ہے، کرنٹ لگنے کے واقعات سے متعدد اموات بھی ہوئی ہیں، واضح رہے کہ کراچی کی اس صورتحال کے پیش نظر میئر کراچی وسیم اختر نے شہر کو آفت زدہ قرار دینے کا مطالبہ کیا ہے،

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.