ہم جنس پرستی کلب کے قیام کی درخواست پر ڈاکٹر فرید احمد پراچہ کا ردعمل

0
480
farid paracha

خیبر پختونخواہ کے شہر ایبٹ آباد میں ہم جنس پرستی کلب کے قیام کی درخواست پر جماعت اسلامی کے مرکزی رہنما ڈاکٹر فرید احمد پراچہ کا رد عمل سامنے آیا ہے

جماعت اسلامی کے مرکزی رہنما ڈاکٹر فرید احمد پراچہ نے باغی ٹی وی سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ یہ بہت ہی شرمناک ہے قوم کے لئے،انہی اعمال پر اللہ تعالیٰ نے بستیاں الٹ دی تھی، پتھروں کی بارش ہوئی تھی اور عذاب آیا تھا، اب ہم اس حد تک گر چکے ہیں کہ معاشرے میں ہم جنس پرستی کے کلب قائم کرنے کی اجازت مانگی جا رہی ہے،یہ معاملہ صرف اتنا ہی نہیں ہے کہ کچھ افراد کی حد تک بات ہے، جب ٹرانس جینڈر ایکٹ آیا اسوقت جماعت اسلامی کی جانب سے یہ کہا گیا تھا کہ یہ عالمی ایجنڈہ ہے اور تباہی ہمارے معاشرے کی طرف بڑھ رہی ہے ہم معیشت کو ٹھیک کرنے، سود ختم کرنے کی طرف قدم بڑھانے کی بجائے آئی ایم ایف سے بھیک مانگنے کا راستہ اختیار کر رہے ہیں تو یہ الحاد اور بے دینی اس کا حصہ ہے، وہ چاہتے ہیں ہم اسکو اپنا لیں اور اللہ کے غضب کو دعوت دیں،

ہم جنس پرستی کلب کے قیام کی درخواست ،ذمہ داروں کو عبرت کا نشان بنایا جائے، ڈاکٹر فرید احمد پراچہ
ڈاکٹر فرید احمد پراچہ کا کہنا تھا کہ ضروری تھا کہ جیسے ہی ڈی سی کے پاس درخواست آئی تھی تو ایسے لوگوں کی گرفتاری کی جاتی، ان پر دہشت گردی کا پرچہ کروایا جاتا اور انکو جیلوں میں ڈالا جاتا، حکومت کو چاہئے کہ مکمل چھان بین کرے، کسی طرح علماء کرام معاشرے میں اس طرح کے کام کرنے کی اجازت نہیں دیں گے، میڈیا بھی اس ضمن میں کردار ادا کرے، اس برائی کے خاتمے کے لئے سب کو کردار ادا کرنا ہو گا، کے پی میں پی ٹی آئی کی حکومت ہے، انہوں نے ریاست مدینہ کا نعرہ لگایا تھا اب انہیں اس سلسلے میں اپنا ایک کردار ادا کرنا چاہئے، جو بھی اسکے ذمہ دار ہیں انہیں عبرت کا نشان بنایا جائے.

واضح رہے کہ پاکستان کے صوبہ خیبر پختونخواہ کے شہر ایبٹ آباد میں "ہم جنس پرستی کلب” کے قیام کے لئے ڈی سی ایبٹ آباد کو درخواست دی گئی ہے،ہم جنس پرست کلب کے قیام کے لئے درخواست ڈی سی آفس میں 8 مئی 2024 کو دی گئی، درخواست LORENZO GAY CLUB کے لیے این او سی حاصل کرنے کے لیے جمع کروائی گئی ہے، ہم جنس پرست کلب کے قیام کے لئے درخواست پریٹم گیانی نامی ایک مقامی شہری کی جانب سے جمع کروائی گئی جو خود کو گلستان کالونی ایبٹ آباد کا رہائشی بتلاتا ہے،لورینزو گے کلب کے نام سے جمع کی جانے والی درخواست کے مندرجات میں یہ یقین دہانی کروائی جارہی ھے کہ کلب میں گے یا نان گے ممبرز کو بوس و کنار کے علاوہ سیکس نہ کرنے کی باقاعدہ وارننگ دیوار پر آویزاں کی جائینگی اور اس کلب کا قیام باقاعدہ طور پر بنیادی انسانی حقوق سے ہم آہنگ ہے،اراکین اور غیر اراکین دونوں کے لیے یہ کلب کھلا رہے گا جس میں اراکین کو قدرتی طور پر زیادہ سہولیات دستیاب ہونگی یہ کلب ایبٹ آباد اور ملک کے دیگر حصّوں میں رہنے والے کچھ ہم جنس پرست لوگوں کے لیے ایک بڑی عملی سہولت اور وسیلہ بنے گا۔

بحریہ ٹاؤن،چوری کا الزام،گھریلو ملازمین کو برہنہ کر کے تشدد،الٹا بھی لٹکایا گیا

بحریہ ٹاؤن کے ہسپتال میں شہریوں کو اغوا کر کے گردے نکالے جانے لگے

تجوری ہائٹس کا پلاٹ گورنر سندھ کی اہلیہ کے نام پر تھا،سپریم کورٹ میں انکشاف

چیف جسٹس کا نسلہ ٹاور کی زمین بیچ کر الاٹیز کو معاوضے کی ادائیگی کا حکم

امجد بخاری کی "شادی شدہ” افراد کی صف میں شمولیت

ضمنی انتخابات میں مریم نواز کا جادو کیسے چلا؟ اہم انکشافات

مریم نواز نے پولیس وردی پہنی،عثمان انور نے ساڑھی کیوں نہیں پہنی؟ مبشر لقمان کا تجزیہ

Leave a reply