بھارتی مسلمانوں‌ ظلم اور ناانصافی کے خلاف اٹھ کھڑے ہوں‌ ، سجادہ نشین درگاہ اجمیر شریف نے ہندو انتہا پسند حکومت کے خلاف اعلان بغاوت بلند کردیا

نئی دلی: درگاہ اجمیر شریف کے خادم سید سرور چشتی نے مسلمانوں کے خلاف انہتاپسندوں کی طرف سے حملوں اور زیادتیوں کے بعد اعلان بغاوت بلند کرتے ہوئے میدان میں آگئے ، سید سرور چشتی نے اپنے ایک ویڈیو پیغام میں کہا ہے کہ بھارتی مسلمان ظلم اور ناانصافی کا شکار ہیں۔

سوشل میڈیا پر وائرل ہونے والے ایک ویڈیو پیغام میں درگاہ اجمیر شریف کے خادم سید سرور چشتی نے گائے کی اسمگلنگ کے الزام کے تحت مشتعل ہجوم کے ہاتھوں بہیمانہ تشدد سے قتل ہونے والے پہلو خان کے قاتلوں کی بھارتی عدالت سے رہائی کی شدید الفاظ میں مذمت کرتے ہوئے کہا کہ بھارت کے یوم آزادی پر مسلمانوں کے ساتھ کیسا سلوک روا رکھا جا رہا ہے؟

سوشل میڈیا پر وائرل ہونے والی ویڈیو‌میں درگاہ اجمیر شریف کے خادم نے مضطرب لہجے میں سوال اٹھایا کہ یہ کیسا بھارت ہے؟ جہاں قاتل آزاد اور مقتول کے غمزدہ لواحقین گرفتار ہو رہے ہیں، کیا پہلو خان کو آسمان سے بھوتوں نے آکر قتل کیا تھا؟ جو چھ کے چھ ملزمان کو بری کردیا گیا ؟ اور ستم بالائے ستم یہ ہے کہ مقتول کے دونوں بیٹوں کو گائے کی اسمگلنگ میں پابند سلاسل کردیا گیا۔

درگاہ اجمیر شریف کے خادم سید سرور چشتی اپنے ویڈیو پیغام میں کہتے ہیں‌کہ دو ماہ قبل بھارتی ریاست راجھستان میں گائے ماتا کی رکھوالی کے نام پر مشتعل ہجوم نے ایک مسلمان پہلو خان کو بہیمانہ تشدد کا نشانہ بناکر قتل کردیا تھا جس کی ویڈیو سوشل میڈیا پر وائرل ہونے کے پولیس کو ملزمان کو گرفتار کرنا پڑا تھا تاہم شواہد کے باوجود چھ کے چھ ملزمان کو بری کردیا گیا۔

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.