fbpx

گولڈن رنگ اقتصادی فورم:پاکستان کی سلامتی ، خوشحالی اوراسٹریٹجک کا منصوبہ جوامریکہ کوپریشان کرنے لگا

لاہور: گولڈن رنگ اقتصادی فورم:پاکستان کی سلامتی ، خوشحالی اوراسٹریٹجک کا منصوبہ جوامریکہ کوکھٹکٹنے لگا ،اطلاعات کے مطابق گولڈن رنگ اقتصادی فورم (جی آر ای ایف) ایشیائی ممالک کے درمیان ایسا اقتصادی نیٹ ورک ہے جو2015 میں قائم کیا گیا تھا ، گولڈن رنگ اقتصادی فورم (جی آر ای ایف) کے وجود میں آنے سے پہلے 2010 میں مذکورہ ممالک کے ایک اجلاس میں اس اقتصادی بلاک کا تصورپیش کیا گیا تھا ، ابتداء‌میں اس کی نیٹ ورکنگ میں جغرافیائی اورعلاقائی عوامل کو پیش نظررکھا گیا تھا

گولڈن رنگ اقتصادی فورم (جی آر ای ایف) میں پہل کرنےوالوں میں چین اورایران ، پاکستان ،روس اورترکی سے تعلق رکھنے والے تاجروں ، سفارتکاروں ، اسکالروں اوراعلیٰ سرکاری ملازمین سمیت کئی طبقات کے افراد نے اس میں دلچسپی ظاہرکی اوراس کا حصہ بنے

پھربعدازاں یہ بھی فیصلہ کیا گیا کہ اس میں وسطی ایشیائی ریاستوں کےدیگرممالک اس فورم کا مستقل نمائندہ بن سکتی ہیں اوران ممالک سے تعلق رکھنےوالے لوگ بھی شامل ہوسکتے ہیں ،

چونکہ عالمی وسائل کا تقریبا تیس فیصد ان ممالک کے زیر اقتدار آتا ہے ، لہذا انھیں "گولڈن رنگ” کہا جاتا ہے۔

اس فورم کا مقصد:
a: قومی معاشی تحفظ کےلیے ایک نئی اسٹریٹجک معاشی گروہ بندی کے لئے لابنگ کرنا
b :دوسرے چار ممالک کے مشترکہ ، طویل مدتی مشترکہ اسٹریٹجک معاشی مفادات کوپاکستان میں فروغ دینا
c: پالیسی بنانے والوں اور اسٹیک ہولڈرز کے مابین ایک پُل کی حیثیت سے کام کرنا۔
d: پالیسی فریم ورک ، طریقہ کار ، قواعد و ضوابط کی ترقی میں حکومت کی مدد کرنا اور کثیرالجہتی اسٹریٹجک معاشی تعاون کے ضوابط۔ ڈیزائن کرکے اس پرعمل درآمد کروانا
e. ممبر ممالک کی جوائنٹ کسٹم یونین کے قیام کے لئے کام کرنا۔
f. پاکستان میں جدید مشترکہ صنعتی گروہوں کی ترقی میں مدد کرنا۔
g: مشترکہ پیشگی تحقیق کو باہمی تعاون ، تعاون ، ہم آہنگی اور ابتدا کے لیے پروگرام / پراجیکٹس برائے اطلاق اور معاشرتی علوم اور ٹکنالوجی

اس فورم کے قیام اورپھراس کے وجود میں‌جو مزید ممالک شامل ہوئے وہ تاریخی طور پر ان ممبر ممالک نے دنیا کی سب سے اہم تہذیبوں واسطہ رہا ہے۔

 

اگراس فورم میں پاکستان کی شمولیت کا جائزہ لیا جائے تو مثال کے طور پر پاکستان جو اپنے جیو اسٹریٹجک سنٹرنگ کے لئے اہم ہے ،ایک طرف خلیج فارس کے منہ پرتودوسری طرف آبنائے ہرمز اور جنوب میں بحر ہند کے قریب ہے۔

بحر ہند دنیا کا تیسرا سب سے بڑا آبی ادارہ ہے جو تینوں سے لیکچرار ریاستوں میں گھرا ہوا ہےجس کے اطراف اس کے اہم 11 گلاوٹ پوائنٹس کے ساتھ ، اس نے جیو اقتصادی مرکز کی پوزیشن حاصل کی ہے

اکیسویں صدی. فی الحال ، اس میں عالمی تجارت کا 40٪ اور دنیا کے تیل تجارت کا 80٪ حصہ ہے،آبنائے ہرمز آبنائے ملاکا میں سالانہ تقریبا 50،000 جہاز ہوتے ہیں جو تقریبا 50 50٪ ہے

یہ اتحاد اس لیے بھی اہمیت کا حامل ہے کہ بحرہند میں اس وقت امریکہ اوراس کے اتحادی بھارت کے ساتھ ملکرعلاقے کی معاشی ناکہ بندی کرنے کی پوزیشن میں ہیں ان حالات میں گولڈن رنگ اقتصادی فورم پاکستان ، ترکی ، ایران ، چین اورروس کے لیے بہت زیادہ متبادل ذرائع آمدورفت کی حیثیت سے کافی اہمیت کا حامل ہے

پاکستان کے شمالی حصے چین ، افغانستان اور وسطی ایشیاء سے جڑتے ہیں‌،۔ جبکہ مغرب افغانستان اور ایران کے ساتھ پاکستان کی سرحدیں ملتی ہیں

گولڈن رنگ اکنامک فورم میں پاکستان کی اہمیت اس وجہ سے بھی بہت زیادہ ہے کہ پاکستان طویل کی مشرقی سرحدیں روایتی حریف بھارت سے جا ملتی ہیں‌

دیگرہمسائے ممالک کی طرف بعض اطراف میں پاکستان کی جغرافیائی سرحدیں چین ، روس ، وسطی ایشیاء اور مشرق وسطی کے لئےبہت زیادہ فائدہ مند ہیں اور دفاعی ، اقتصادی اورمعاشرتی لحاظ سے بہت زیادہ اثررکھتی ہیں ۔

مختصریہ کہ گولڈن رنگ اکنامک فورم میں اگرپاکستان کواس قدراہمیت حاصل ہے تو ایسے ہے اس فورم میں دیگرممالک بھی خصوصی اہمیت رکھتے ہیں ، ان حالات میں پاکستان کوخطے میں معاشی ترقی کا ایک بہت بڑا مرکزبھی سمجھا جارہا ہے ،

اس فورم میں‌شامل ممالک کی اہمیت اس حوالے سے بھی بہت اہم ہےکہ اس میں شامل کئی ممالک کی سرحدیں یورپی ممالک سے جاملتی ہیں اوریوں یہ ایک ایسی معاشی پٹی ہے جس میں شامل ہرملک دوسرے کے لیے لازم وملزوم کی حیثیت رکھتا ہے ،

انہی حالات کے تناظرمیں یہ فورم وجود میں جس کے متعلق اس وقت مختلف عالمی فورمز پراہم بحث ومباحثہ جاری ہے

اس گولڈن رنگ میں‌ پاکستان کی اسٹریٹجک اہمیت بہت ہی زیادہ ہے وہ کیوں اس حوالے سے کچھ ملاحظہ کریں

پاکستان نے اس خطے میں بدلتے ہوئے جغرافیہاتی اور جغرافیائی اقتصادی ارتقاء میں اسٹریٹجک اہم پوزیشن حاصل کی ہے اور اس کے ساتھ ساتھ خلیج فارس ، بحیرہ عرب اور بحرین کو بھی شامل کیا ہے۔

اس کی اہمیت اس حوالے سے بھی ہے کہ اگراسرائیل عرب امارات کے ساتھ مل کردبئی بندرگاہ کوآپریٹ کرتا ہے تویقینا اس کا مطلب واضح ہے کہ وہ گوادرکوفعال ہوتے نہیں دیکھنا چاہتے

چین اور ایران کے مابین بھی پاکستان کے لئے مشترکہ طور پر چاہابہار کی ترقی کے بہت زیادہ مواقع ملیں گے

امریکی انڈو پیسیفک پالیسی اور ابراہم ایکارڈز کے لاحق ہونے کی دھمکی کا مطلب یہ ہے کہ چین ، ایران ، پاکستان ، روس اورترکی کے اس اتحاد کی امریکہ اوراتحادیوں کو بہت تکلیف ہے

اس کے بعد چین کی پوزیشن کچھ اس طرح ہے کہ :
چین:
چین یقینی طور پر عالمی سیاست کا سب سے بڑا اداکار ہے جو اس وقت یک قطبی تسلط کو ہلا رہا ہےسرد جنگ کے بعد کی دنیا میں امریکہ کا چین کے لئے ، بی آر آئی اس کے عروج کا سب سے بڑا ہونا ہے

معیشت اور دنیا کی سب سے بڑی طاقت۔ بی آر آئی کے چھ منصوبہ بند راہداری قابل عمل اور قابل عمل پیش کرتے ہیں،چین کے متبادل تجارتی راستے بحر ہند میں امریکی خطرہ کو روکنے کے لئے لیکن وہ بھی لاحق ہیں

میانمار ، بنگلہ دیش اور ہندوستان کے معاملات میں مختلف چیلنجز۔ سی پی ای سی اسٹریٹجک ہے،انتہائی قابل عمل راستہ اور سنکیانگ کو کھولنے کی صلاحیت کے ساتھ زیادہ سے زیادہ عمل درآمد فراہم کرتا ہے

یہ خطہ وسطی ایشیا ، روس ، ترکی اور اس کے بعد مزید وسط سے منسلک معاشی مرکز میں یورپ امریکہ کی انڈو پیسیفک پالیسی کے تحت ہندوستان کا بہت زیادہ اضافہ اور بلند کردار بھی شامل ہوتا ہے
پاکستان اور چین اس منصوبے کی سیکیورٹی کے حوالے سے مضبوط رشتے چین کے مفاد میں‌ہیں‌

ایران:
امریکی پابندیوں کے تحت ایران کی حیرت زدہ اور گرتی معیشت نے اسے چین کے قریب تر کردیااس کی تاریخ میں 400 ارب ڈالر کی سب سے بڑی سرمایہ کاری کی شکل ہے۔ یہ معاہدہ ایک بہت بڑا کھل جاتا ہے

ایران مشترکہ طور پر زمین اور ریلوے کے مختلف راستوں کو شروع کرسکتا ہے جو چین کو تیل اور گیس کی فراہمی کرسکتے ہیں

محفوظ لینڈ روٹس اور پائپ لائنوں کے ذریعے۔ چاہابہار پورٹس پاکستان کو ممکنہ خطرہ ہونے کی صورت میں گوادر اور جیوانی کی شکل میں متبادل بندرگاہیں بھی پیش کر سکتے ہیں۔ پاکستان اپنی سیکیورٹی کے ذریعےایران کو ان تیار ہوتے چیلینجز میں سے کسی کو خطرہ بھی مفادات کو اکٹھا کرنے کی صلاحیت رکھتا ہے

روس:

روس ہمیشہ سمندری راستوں تک محفوظ رسائی کی تلاش میں رہتا تھا جو اس کی سب سے بڑی رکاوٹ ہے، روس کے مخالف ممالک کی جانب سے روس کو لینڈ لاک کیا جارہا ہے۔ بحر ہند تک رسائی روس کو افغانستان میں راغب کرنے کے عوامل میں سے ایک ہے

روشن امکان ہے کہ اگر پاکستان ، چین اور روس ایک دوسرے تک پہنچ جاتے ہیں ،روس کو گوادر پورٹ کے ذریعے بھی رسائی حاصل ہوسکتی ہے۔ پاکستان اور روس کے پاس بھی ہے

مشترکہ طور پر جیوانی بندرگاہ تیار کرنے کا موقع جو دونوں کے لئے ایک اور قابل عمل اور قابل عمل آپشن ہے

جس کا مطلب واضح ہے کہ روس،چین ، ایران اورترکی کے ساتھ ملک کرپاکستان خطے کی ایک بہت بڑی معاشی طاقت بن سکتا ہے اورجس سے پاکستان کی سیکورٹی بھی بہت زیادہ مضبوط ہوسکتی ہے

اس ساری رپورٹ کےبعد کہا جاسکتا ہےکہ گولڈن رنگ فورم ایک ایسا فورم ہے کہ جس کا بہت زیادہ فائدہ پاکستان کو ہوگا اورساتھی دیگراتحادی ممالک کو بھی گوادر کی بندرگاہ تک رسائی کا موقع مل جائے گا یوں یہ خطہ خوشحالی کا ضامن ہوگا جسے امریکہ اوراتحادی گوارا نہیں کرتے یہی وجہ ہے کہ امریکہ اوراس کےاتحادی جن میں بھارت ، اسرائیل اوردیگر ملک گولڈن رنگ کے مقابلے میں اپنا الگ منصوبہ رکھتے ہیں‌اوریہی وجہ ہےکہ کچھ ماہرین تو یہ کہتے ہیں کہ کواڈ ممالک کا اتحاد ایک طرف چین کے ون بیلٹ ون روڈ کے مقابلے میں ہے اوردوسرا وہ پاکستان کے گولڈن رنگ اکنامک فورم کے توڑ کےلیے ہے

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.