ڈیٹا رازداری کیس:گوگل 39 کروڑ ڈالرز سے زائد ادائیگی پر رضا مند

0
47

گوگل نے ڈیٹا رازداری کیس میں 39 کروڑ ڈالرز سے زائد ادائیگی پر رضا مندی ظاہر کر دی۔

باغی ٹی وی : غیرملکی میڈیا رپورٹس کے مطابق ریاستی استغاثہ کے اتحاد نے پیر کو اعلان کیا کہ گوگل نے 40 ریاستوں کے ساتھ ایک تصفیہ میں تقریبا 392 ملین ڈالر ادا کرنے پر اتفاق کیا ہے جبکہ گوگل ٹریکنگ سے متعلق بہتر تفصیلی معلومات فراہم کرنے کا بھی پابند ہو گا۔

ٹیکساس مین گوگل کے خلاف بغیر اجازت بائیو میٹرک ڈیٹا استعمال کرنے پر مقدمہ درج

امریکی ریاستوں کا الزام تھاکہ گوگل نے صارفین کو گمراہ کیا کہ ان کے آلات پر لوکیشن ٹریکنگ بند کر دی گئی ہے،یہ امریکی تاریخ میں ریاستی حکام کی طرف سے سب سے بڑا تصفیہ ہے۔

حکام نے کہا، کم از کم 2014 سے، گوگل نے صارفین کو گمراہ کر کے صارفین کے تحفظ کے قوانین کو توڑا کہ اس نے خفیہ طور پر ان کی نقل و حرکت ریکارڈ کی تھی۔ اس کے بعد اس نے خفیہ طریقے سے کاٹے گئے ڈیٹا کو ڈیجیٹل مارکیٹرز کو اشتہارات بیچنے کے لیے پیش کیا، جو گوگل کی تقریباً تمام آمدنی کا ذریعہ ہے۔

بھارت میں گوگل پر ایک ہفتہ میں دوسری بار جرمانہ عائد

نیبراسکا کے ساتھ تحقیقات کی قیادت کرنے والے اوریگون کے اٹارنی جنرل نے ایلن روزن بلم کہا ہے کہ گوگل جیسا ڈیجیٹل پلیٹ فارم صارفین کو پرائیویسی کنٹرول فراہم کرنے کا دعویٰ نہیں کر سکتا جو بعد میں صارفین کی خواہشات کے خلاف ان کا ڈیٹا اکٹھا کر کے ایڈورٹائزرز کو فروخت کرنے کے لیے ان کنٹرولز کو نظر انداز کر دیتا ہے۔

اٹارنی جنرل نے کہا کہ برسوں سے گوگل نے اپنے صارفین کی رازداری پر منافع کو ترجیح دی ہے،وہ چالاک اور دھوکے باز رہے ہیں ادائیگی اب تک کی سب سے بڑی ملٹی اسٹیٹ پرائیویسی سیٹلمنٹ ہے۔

مواد کی خلاف ورزی،روس نے گوگل پر 98 ملین ڈالر جرمانہ عائد کردیا

مقام کا ڈیٹا، جو اکثر قانون نافذ کرنے والے اداروں کے ذریعے مجرمانہ تفتیش میں مشتبہ افراد کی شناخت کے لیے حاصل کیا جاتا ہے، گوگل کے اشتہاری کاروبار کا ایک اہم حصہ ہےریاستی تفتیش کاروں نے اسے گوگل کی طرف سے جمع کی جانے والی انتہائی حساس اور قیمتی ذاتی معلومات” قرار دیا، یہ نوٹ کرتے ہوئے کہ یہ لوگوں کو ان کے آس پاس کی بنیاد پر اشتہارات کے ذریعے نشانہ بنانے میں مدد کرتا ہے۔

گوگل کو بھاری جرمانہ عائد ، کیوں جرمانہ ہوا وجہ جان کر ہو گا ہر کوئی حیران

Leave a reply