fbpx

گوگل کا سماجی کارکن پروین رحمان کوخراج تحسین پیش

سرچ انجن گوگل نے معروف سماجی کارکن مرحومہ پروین رحمان کی 65 ویں سالگرہ پر ڈوڈل کے ذریعے انہیں خراج تحسین پیش کیا ہے۔

باغی ٹی وی : گوگل نے آج کا ڈوڈل ایک پاکستانی سماجی کارکن، ماہر تعمیرات، اور شہری منصوبہ ساز پروین رحمان کے نام کیا ہے جنہوں نے اپنی زندگی کمزور لوگوں کی زندگیوں کو بہتر بنانے کے لیے وقف کر دی۔

پروین رحمان مشرقی پاکستان (موجودہ بنگلہ دیش) کے دارالحکومت ڈھاکا میں 22 جنوری سنہ 1957 میں پیدا ہوئیں 1971 میں پاکستان کی تقسیم کے بعد وہ اپنے خاندان کے ساتھ کراچی منتقل ہوگئیں پروین رحمان ایک پاکستانی سماجی کارکن اور اورنگی پائلٹ پروجیکٹ ریسرچ اینڈ ٹریننگ انسٹی ٹیوٹ کی ڈائریکٹر تھیں۔

رحمان نے فن تعمیر کی تعلیم حاصل کی اور پھر ہاؤسنگ، تعمیرات اور شہری منصوبہ بندی میں ماسٹر کی ڈگری حاصل کرنے کے لیے ہالینڈ کے روٹرڈیم کے انسٹی ٹیوٹ آف ہاؤسنگ اسٹڈیز میں چلے گئے بے گھر ہونے کے ساتھ رحمان کے ذاتی تجربات نے انہیں گھر کی حفاظت کے لیے مہم چلانے کی تحریک دی، اور انہوں نے اورنگی پائلٹ پروجیکٹ کے ساتھ 1982 میں ایک بلا معاوضہ انٹرن کے طور پر کام کرنا شروع کیا۔

کوک سٹوڈیو کی چوری پکڑی گئی،مبشر لقمان نے بھانڈا پھوڑ دیا

اورنگی ٹاؤن کے 1.5 ملین شہریوں کو ان کے زمینی حقوق کے تحفظ میں مدد کرنے کے عزم کی وجہ سے رحمان کو OPP کے ہاؤسنگ اور صفائی پروگرام کا سربراہ نامزد کیا گیا۔ او پی پی نے رحمن کی قیادت میں 650 نجی اسکول، 700 میڈیکل کلینک، اور 40,000 چھوٹی کمپنیاں قائم کرنے کے لیے حکومت کے ساتھ تعاون کیا۔ وہ اپنے کارناموں کے لیے مختلف ایوارڈز حاصل کر چکی ہیں، جن میں ستارہ شجاعت (بہادری کا آرڈر) بھی شامل ہے، اور ان کے کام نے اس بات کو متاثر کیا ہے کہ آج پاکستانی شہر کیسے قائم ہیں۔

سری لنکن اداکارہ رمشا خان کی خوبصورتی کی فین ہوگئیں

13 مارچ 2013 کو پروین رحمان کو دفتر جاتے ہوئے فائرنگ کر کے موت کے گھاٹ اتار دیا گیا تھا۔ یہ واقع کراچی کی مین منگھو پیر روڈ پر پیش آیا تھا ملزمان موقع سے فرار ہونے میں کامیاب ہو گئے تھے۔ جب کہ پروین رحمان کو ان کے ڈرائیور نے شدید زخمی حالت میں عباسی شہید اسپتال پہنچایا تھا، جہاں وہ علاج کے دوران دم توڑ گئی تھیں، انھیں گردن میں گولیاں لگی تھیں۔

دلیر مہندی بھی نصیبو لال کی تعریف کیے بغیر نہ رہ سکے

گزشتہ برس 17 دسمبر کو کراچی کی ایک انسداد دہشتگردی کی عدالت نے سماجی کارکن پروین رحمان کے قتل کے مقدمے میں چار ملزمان کو دو، دو مرتبہ عمر قید کی سزا سنائی تھی۔ ان چاروں ملزمان رحیم سواتی، احمد خان، امجد اور ایاز سواتی پر دو، دو لاکھ روپے جرمانہ بھی عائد کیا گیا تھا۔ پانچویں مجرم عمران سواتی کو قتل میں دیگر مجرموں کی معاونت کرنے پر سات سال قید اور دولاکھ روپے جرمانے کی سزا سنائی گئی۔

گلوکارہ آئمہ بیگ کے بینک اکاؤنٹس منجمد

کراچی میں اورنگی ٹاؤن پائلٹ پروجیکٹ کی ڈائریکٹرپروین رحمان کے قتل کی تحقیقات میں سامنے آنے والے انکشافات میں یہ بات سامنے آئی تھی کہ انہیں اجرتی قاتلوں نے 40 لاکھ روپے کے عوض قتل کیا تھا۔

ماہرہ خان کی وجہ سے سوشل میڈیا پر بہت زیادہ گالیاں پڑی تھیں،علی عباس کا انکشاف