حکومتی اتحاد نے عمران خان کی تقریر کی مشترکہ مذمت کردی

0
122

حکومتی اتحاد میں شامل جماعتوں نے ایک مشترکہ بیان میں اسلام آباد میں عمران خان کےخطاب کی شدید مذمت کی ہے۔

حکومتی اتحاد کی جانب سے مشترکہ بیان میں کہا گیا ہے کہ ایف نائن پارک اسلام آباد میں عمران خان کےخطاب کی شدید میں مذمت کرتے ہیں،چیئرمین تحریک انصاف نے ایک خاتون مجسٹریٹ کا نام لے کر اسے دھمکی دی، آئی جی اور ڈی جی آئی پولیس اسلام آباد کو مخاطب کرکے ڈرانے کی کوشش کی۔حکومتی اتحاد کا کہنا ہےکہ یہ دھمکیاں کھلی غنڈہ گردی اور لاقانونیت ہے، غدار فارن ایڈڈ جماعت اور فارن فنڈنگ لینے والا اس کا چیئرمین ہے، انہوں نے پاک فوج میں بغاوت کی سازش کی ہے۔

غداری کے مقدمہ میں گرفتار شہبازگل کے حق میں ریلی مسترد،عمران کی سرعام دھمکیاں

حکومتی اتحاد نے مطالبہ کیا ہےکہ وفاقی وزیرداخلہ دھمکیاں دینے پر عمران اور ان کے ساتھیوں کے خلاف قانونی کارروائی کریں، عمران خان کو آئین اور قانون کا پابند بنایا جائے۔

 

دھمکیاں،اسلام آباد پولیس کا عمران خان کی سیکیورٹی ڈیوٹی دینے سے انکار

 

امیر جمعیت علمائے اسلام (ف) اور پاکستان ڈیمو کریٹک موومنٹ (پی ڈی ایم) کے سربراہ مولانا فضل الرحمان نے کہا ہے کہ طاقتور قوتیں سمجھتی ہیں نظام ہمارے ہاتھ میں ہونا چاہیے۔ مرکزی مجلس عمومی اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ 1973سے لے کر آج تک ایک بھی اسلامی قانون سازی نہیں ہوئی۔ ایسی جماعتوں کو مسلط کردیا جاتا ہے جنہیں قرآن وسنت سے کوئی دلچسپی نہیں ہوتی، ایک وقت تھا جب پاکستان نے چین کو قرضہ دیا آج ہم کہاں کھڑے ہیں۔

پی ڈی ایم سربراہ کا کہنا تھا کہ طاقتور قوتیں سمجھتی ہیں نظام ہمارے ہاتھ میں ہونا چاہیے۔ ہماری تنقید خیر خواہی کی بنیاد پر ہے۔ آئی ایم ایف نے گلے سے پکڑا ہوا ہے اپنی شرائط منوانا رہا ہے ۔اس حد تک آزاد قوم ہیں 14 اگست تک جشن آزادی منا لیتے ہیں۔ جشن آزادی میں منعقدہ تقریبات میں اسلامی چہرہ نہیں دکھایا جاتا۔ بیرونی ایجنٹے پر کمپرومائز نہیں کیا۔

 

شہباز گل پر قانو ن کی خلاف ورزی کرتے ہوئے تشدد کیا گیا، عمران خان

 

مولانا فضل الرحمان نے کہا کہ عوام کو ریلیف دینے کے لئے قلیل المدت منصوبہ بندی پر نظر رکھنی ہوگی۔ پارلیمنٹ میں فیصلے موجود طاقت کی بنیاد پر ہوتے ہیں۔ عمران کہتا ہے مجھے قتل کرنا چاہتے ہیں، صبح ایک بیان شام کو دوسرا بیان دے دیتا ہے، پنجاب ضمنی الیکشن میں کامیابی نیازی بیانیے کی مقبولیت کی دلیل نہیں۔

فاقی وزیر اطلاعات و نشریات مریم اورنگزیب نے کہا ہے کہ عمران خان پہلے بھی اپنے بیانات سے لاتعلقی ظاہر کرچکے، اُن کا موقف کل پھر بدل جائے گا،نجی ٹی وی کے پروگرام نیا پاکستان میں گفتگو کے دوران مریم اورنگزیب نے کہا کہ عمران خان کو الزام لگاتے 22 سال ہوگئے، یہ ہر بار نئی پلاننگ کے ساتھ جھوٹ بولتے ہیں۔انہوں نے کہا کہ عمران خان جس ویڈیو کی بات کر رہے ہیں، وہ چکوال کی ہے، جس میں موجود شخص شہباز گل نہیں۔

وفاقی وزیر اطلاعات نے مزید کہا کہ پولیس نے بھی کہ دیا کہ شہباز گل پر کسی قسم کا تشدد نہیں کیا گیا، سوال تو یہ ہے کہ عمران خان نے ویڈیو دینے والوں سے پوچھا کہ کس کی ویڈیو ہے؟اُن کا کہنا تھا کہ ن لیگ کی قیادت سے ملنے وکلاء کورٹ آرڈر لے کر آتے تھے، عمران خان بھی کورٹ سے آرڈر لیں اور شہباز گل سے مل لیں۔

مریم اورنگزیب نے یہ بھی کہا کہ آپ کہو دروازے کھل جائیں تو ایسا نہیں ہو سکتا، عمران خان پروپیگنڈا شہباز گل کے بیان سے توجہ ہٹانے کے لیے کر رہے ہیں۔انہوں نے کہا کہ پنجاب پولیس عمران خان کے ماتحت ہے، ڈاکٹرز نے شہباز گل کو فٹ قرار دیا ہے۔

وزیر توانائی سندھ امتیاز شیخ نے چیئرمین پی ٹی آئی عمران خان کو جھوٹا اور ناقابل اعتبار قرار دیا ہے۔جیکب آباد میں میڈیا سے گفتگو میں امتیاز شیخ نے کہا کہ سندھ کے عوام سمیت کوئی بھی عمران خان پر اعتبار کرنے کے لیے تیار نہیں کیونکہ وہ یوٹرن کے ماہر ہیں۔انہوں نے کہا کہ دراصل عمران خان ایک جھوٹا آدمی ہے، ان پر کسی کو اعتبار نہیں ہے۔

خیال رہے کہ اسلام آباد میں جلسہ عام سے خطاب کرتے ہوئے عمران خان کا کہنا تھا کہ آئی جی اور ڈی آئی جی اسلام آباد ہم تم کو نہیں چھوڑیں گے، تم پر کیس کریں گے۔

عمران خان کا مزید کہنا تھا کہ مجسٹریٹ زیبا چوہدری آپ کو بھی ہم نے نہیں چھوڑنا، کیس کرنا ہے تم پر بھی، مجسٹریٹ کو پتہ تھا کہ شہباز پر تشدد ہوا پھر بھی ریمانڈ دے دیا، بڑے ادب سے سپریم کورٹ کوکہتا ہوں قانون کی حکمرانی پر عمل درآمد آپ کا کام ہے۔

Leave a reply