fbpx

حرف آخر تحریر وقاص چشتی

آج سے تقریباً بیس سال قبل امریکہ نے طالبان حکومت کا تختہ الٹ دیا تھا طالبان کے سینئر راہنماوں کو گرفتار کیا گیا سینکڑوں شہید ہوئے آہستہ آہستہ امریکہ نیٹو فورسز نے افغانستان میں قدم جما لیےاور طالبان نے بھی قدیمی جھنگ لڑی اور آخری بال تک ہار نہیں مانی. جھکے نہیں بکے نہیں کیوں کہ عاشق رسول تھے جھکتے بھی کیسے بہت قربانیوں کے بعد آخر کار عالمی دنیا کو حیران کرتے ہوئے سپر پاور کو شکست دی اور سجدہ شکر ادا کرنے کے لیے سجدہ ریز ہوئے میں نے دیکھا جب مجاہدین کابل کو فتح کر کے باہر نکلے تو آنسوؤں سے شرابور تھے ان کو دیکھ کر ہمیں بھی رونا آتا تھا کے اللہ تعالیٰ نے مدد کی اور اسلام کی فتح و نصرت نصیب ہوئی وہ آنسو ڈر اور خوف کی وجہ سے نہیں آ رہے تھے بلکہ خوشی کے آنسو تھے کیوں کے سوکھی روٹیاں کھا کر ٹوٹے ہوئے جھوتے دیکھے میں نے افغان مجاہدین کے ان کے جسم بھی جو لباس تھا شاید ایسا ہمارے ہاں جو لنڈہ بازار لگتا ہے اس میں بھی ایسے نہ ہوں کپڑے سویٹر پٹھے پرانے کپڑے پہنے مگر ان کے پاس دو دو لکھ کی گن ہر بوڑھے نوجوان اور بچوں کے پاس بھی تھیں. ایسے ہی فتح نہیں ملتی امتحان سے گزرنا پڑھتا ہے امریکہ اور افغان فورسز کے پاس اسلحہ نہیں تھا کیا.؟ تھا مگر ان کے پاس وہ دل نہیں تھا وہ جگر نہیں تھا میں سن رہا تھا بھارتی میڈیا پہ ایک اینکر فرما رہی تھی کہ طالبان سو سال بھی لڑتے رہے افغانستان پہ قابض نہیں ہو سکتے. ساتھ یہ بھی بتا رہی تھی کہ افغان فورسز تین لاکھ ہیں اور طالبان مجاہدین صرف پہچھتر ہزار. اس پاگل کو کیا پتہ تھا ایک طرف ہزاروں کا لشکر دوسری طرف صرف تین سو تیرا مگر فتح کس کی ہوتی ہے جن کا ایمان مضبوط ہو جن کے ساتھ اللہ کی مدد ہو اس اینکر کے اس پروگرام کے 24 گھنٹے بعد کابل پہ قبضہ ہو گیا اشرف غنی ملک سے فرار ہو گیا طالبان نے فتح کے ساتھ ساتھ عام معافی کا اعلان کر دیا چودہ سو سال کی تاریخ کو دھورا دیا جب مکہ مکرمہ فتح ہوا تو نبی کریم صل اللہ علیہ وسلم نے عام معافی کا اعلان کیا ہمارا جیسا بھی دشمن ہے ہم اسے معاف کرتے ہیں افغان طالبان نے بھی ٹھیک ایسا ہی کیا. مگر اس کے باوجود بھی لوگ افغانستان چھوڑ کر امریکہ جانے کی کوشش کر رہے ہیں کچھ تو بھاگنے میں کامیاب ہو گئے چند بد قسمت طیارے کے ساتھ چپک گئے جب طیارے نے پروان بھری تو ان کی قسمت ساتھ چھوڑ گئی اور طیارے سے گر کر جان کی بازی ہار بیٹھے ان میں ایک شخص ڈاکٹر تھا اور ایک افغانستان قومی فٹبال ٹیم کا ممبر بھی شامل تھا. اب بھی ہزاروں کی تعداد میں افغانی کابل ائرپورٹ کے باہر جمع ہیں مگر دوسری طرف ایئر پورٹ کی سیکورٹی امریکہ کی فورسز کے ہاتھ میں ہے وہ اپنے امریکیوں کو نکال رہے ہیں اوردوسری جانب پنج شیر میں بھی طالبان کی پیش قدمی ہو رہی ہے دنیا دیکھ رہی ہے کہ آیا طالبان حکومت کر سکے گے یا نہیں چند ممالک نے ساتھ دینے کا فیصلہ کیا ہے اور دیگر ممالک ابھی سوچ بیچار میں ہیں کہ اب کیا کیا جائے. مجھے طالبان کی نیت پر کوئی شک نہیں. میں انہیں سو فیصد فیس ویلیو پر رکھنے کو تیار ہوں میں یقین کرنے پر آمادہ ہوں کہ وہ جو بھی کہہ رہے ہیں پوری ذمہ داری سے کہہ رہے ہیں مجھے یہ تسلیم کرنے میں بھی باک نہیں کہ وہ بھی اس تباہ حال کھنڈر کی تعمیر و ترقی کے اتنے ہی خواہش مند ہیں جتنا کوئی اور. چند بنیادی باتیں پچھلے چند دنوں سے لگا تار دھرائی جا رہی ہیں کہ ہم عورتوں کو دروازے کے پیچھے نہیں رکھے گے بلکہ شریعت کے دائرے میں رہتےہوئے تعلیم و روزگارکی اجازت دیں گے ہم اگرچہ مغربی طرزِ جمہوریت کو درست نہیں سمجھتے مگر مقامی ثقافتی دائرے میں مثبت تنقید کا خیر مقدم کریں گے اور بنیادی آزادیوں کا احترام کریں گے ہماری سرزمین آئندہ کسی بیرونی ملک کے خلاف کے خلاف استعمال نہیں ہو گی ایسی صورت میں امریکہ اور مغربی ممالک طالبان کو اپنی معاشی بقا کے لئے ان راستوں پر دھکیل دیں گے جن کے بارے میں مغرب سمیت کوئی بھی نہیں چاہتا کہ طالبان ان پہ چلیں اگر نئی حکومت اپنی سرزمین کو باقی دنیا کے خلاف استعمال نہ ہونے کا اگلے چند ماہ میں ٹھوس ثبوت فراہم کر دیتی ہے اور منشیات کی کاشت کی بیخ کنی کا وعدہ بھی ایفا کرتی ہے تو پھر معاشی ناکہ بندی کا کوئی اخلاقی جواز نہیں رہے گا ایک اچھی بات یہ ہے کہ پہلے کے برعکس انہوں نے تنظیمی سطح پر اپنا نظریاتی اور سیاسی بازو الگ الگ رکھنے کی کوشش کی ہے وہ نوے کی دہائی کا پٹھان قوم پرست مزہبی گرو نہیں رہے بلکہ اس بار ان کی درجہ اول و دوم کی قیادت میں تاجک. ازبک حتی کہ ہزارہ بھی شامل ہے اب طالبان پوری دنیا میں اسلام کا جھنڈا گاڑھے گے پورے عالم کی نظریں طالبان پہ لگی ہیں اور ترکی کو بھی 2023 میں بڑا فائدہ ہو گا اگر رجب طیب ایردوان نے مجاہدین کو کال کی تو. پاکستان میں ایک عالم دین کے الفاظ سونے کے حروف سے لکھنے چائیے کہ انہوں نے کہاں بندے کے اندر غیرت زندہ ہو تو اسلام کنڈ نہیں لگن دیندار اسلام اپنی پاور رکھتا ہے اور امریکہ سپرپاور کا ورد کر نے والوں سپر پاور میرے اللہ کی ذات ہے جس نے ہمیشہ رہنا ہے تا صبح قیامت. اللہ کی مدد ہو تو ہاتھی والوں کا حال دیکھ لو. قرآن بیان کر رہا ہے. اللہ مجاہدین کی مدد فرمائے اگلے چند دن طالبان کے اہم ہیں. جب تک اقتدار منتقل نہیں ہوتا. اپنے پاوں پہ کھڑے ہو جائیں پوری دنیا میں اسلام کا نفاز کرے گے