fbpx

حضرت مولانا قاسم ناناتوی رحمہ اللہ کی حالات تحریر:تعریف اللہ

حضرت مولانا قاسم نانوتوی رح کا اصل نام حورشید حسن تھا۰اپ رح ۱۲۴۸ میں ضلع سہارنپور کے قصبے نانوتہ میں پیدا ہوئے۰اپ رح کے والد اسدعلی بن غلام شاہ رح نہایت پرہیزگار اور صوم وصلوۃ کے پابند تھے۰اپ رح بچپن ہی سے سعادت مند ،ذہین اور محنتی تھے۰ابتدائی تعلیم قصبہ دیوبند میں حاصل کی پھر ۱۲۶۰ میں مولانا مملوک علی رح کے ہمراہ دہلی تشریف لے گئے اور حضرت شاہ ولی اللہ محدث دہلوی رح کے چھوٹے صاحبزادے حضرت مولانا شاہ عبدالغنی سے علوم حدیث کی تکمیل کی۰بعد ازاں اپ رح شیخ المشائخ حضرت مولانا حاجی امداداللہ مہاجر مکی رح سے بیعت کی اور تصوف وسلوک کی منازل طے کرتے ہوئے خلعت خلافت حاصل کی۰اس روحانی نسبت نے اپ رح کے باطنی جوہروں کو خوب نکھاردیا۰اپ رح خوش مزاج اور عمدہ اخلاق کے مالک تھے۰

حد درجہ منکسرالمزاج ،شہرت سے گریزاں،ریاء سے کوسوں دور تھے۰علم وعمل،زاہد وتقوی کے پہاڑ تھے اور بڑے مناظر تھے۰باطل قوتوں سے متعدد مناظرے کیے اور ہمیشہ کامیاب رہے۰اپ رح اپنے اور کے ایک عظیم محدث اور سچے عاشق رسولرسولﷺ تھے۰اپ رح نے حاجی امداداللہ مہاجر مکی رح کی قیادت میں اپنے رفقائےکار مولانا رشید احمد گنگوہی ،مولانا محمد یعقوب نانوتوی رح مولانا شیخ محمد تھانوی رح اور حافظ ضامن شہید رح سے مل کر انگریزوں کے خلاف جہاد میں بھی حصہ لیا۰انجام کار اپ رح کے کئ ساتھی شہید ہوئے اور کئ گرفتار ہوگئے۰

جنگ آزادی کی شکست کے بعد اپ رح نے احیائے دین کا کام دوسرے انداز میں شروع کیا اور دارلعلوم دیوبند کی بنیاد رکھی جہاں سے بے شمار تشنگان علم نے فیض پایا ۰دارالعلوم دیوبند کا قیام تاریخ کا ایک ایسا روشن باب ہے جو علم وعمل کی دنیا میں ہمیشہ جگماتا رہے گا۰اس دارالعلوم کے فضلاء میں حضرت شیخ الہند مولانا محمودالحسن رح،علامہ انورشاہ کشمیری رح،علامہ شبیر احمد عثمانی ،مولانا حسین احمد مدنی،مفتی عزیزالرحمن عثمانی ،مفتی محمد شفیع ،مولانا عبیداللہ سندھی،اور مولانا محمد ادریس کاندھلوی رحمتہ اللہ علیھم جیسی ہزاروں مشاہیر شخصیات نکلیں جنہوں نے ایک عالم کو اپنے فیض چے منور کیا ۰بالاخر علم وعمل کا یہ افتاب ۴ جمادی الاول ۱۲۹۷ بروز جمعرات ہمیشہ کیلئے غروب ہوگیا۰

حضرت مولانا پیر ذوالفقار احمد صاحب نقشبندی حفظہ اللہ فرماتے ہیں کہ مجھے حضرت مولانا قاسم نانوتوی رح سے اتنی زیادہ محبت وعقیدت ہے کہ بہت زیادہ۰حالاں کہ دارالعلوم دیوبند کے دوسرے اکابرین سے بھی عقیدت ہے مگر حضرت نانوتوی رح کی طرف دل زیادہ کھنچتا ہے، ان کے ساتھ قدرتی محبت قلبی ہے جیسے صحابہ کرام رضی اللہ عنھم میں صدیق اکبر رضی اللہ عنہ کے ساتھ ائمہ اربعہ میں امام اعظم رح کے ساتھ اور مشائخ عظام میں سے حضرت نقشبندی بخاری رح کے ساتھ محبت بہت زیادہ ہے۰اسی طرح حضرت نانوتوی رح کیساتھ محبت بہت زیادہ ہے۰حتی کہ ان کا نام آجائے تو پتہ نہیں مجھے کیا ہوجاتا ہے۰میں اس وقت مسجد میں بیٹھا ہوں ،باوضو بیٹھا ہوں،منبر پر بیٹھا ہوں اگر میں قسم کھا کر کہوں کہ مجھے حضرت مولانا قاسم نانوتوی رح کیساتھ اپنے باپ سے بھی زیادہ محبت ہے تو میں حانث نہ بنوں گا۰

ایک مرتبہ اپ رح قطب عالم حضرت گنگوہی رح کے ہمراہ حج کیلئےجارہے تھے۰قافلے میں کوئی حافظ نہ تھا۰رمضان المبارک کا مہینہ اگیا ۰اپ رح روزانہ ایک پارہ حفظ کرکے رات کو تراویح میں سنادیتے تھے ۰کسی کو پتہ بھی نہ چلا اور صرف ایک ماہ کی محتصر مدت میں پورا قران پاک حفظ بھی کرلیا۰

استاد کا ادب:ادب کی کیفیت یہ تھی کہ مولانا ذوالفقار علی رح جب بیماری میں اپ کے پاس اتے تو اپ رح اٹھ کر بیٹھ جاتے تھے۰ایک مرتبہ مولوی صاحب نے دریافت کیا،حضرت !اپ ایسا کیوکرتے ہیں؟تو فرمایا،حضرت!اس لیے کہ اپ میرے استاد ہیں ۰انہوں نے کہا :میں کہاں استاد ہوں؟فرمایا ایک مرتبہ مولانا مملوک علی رح کسی کسی کام میں مصروف تھے تو اپ سے فرمایا تھاکہ ان کو ذرا کافیہ کا سبق پڑھادو  اس لیے اپ میرے استاذ ہوئے۰

پیر کے ہم وطن ادمی کا احترام:تھانہ بھون کے ایک شحص کو اہل علم سے محبت تھی۰اس نے حضرت مولانا اشرف علی تھانوی رح کو بتایا کہ ایک دفعہ میں دیوبند میں مولانا قاسم نانوتوی رح کی مجلس میں حاضر ہوا۰مولانا نے فارغ ہوکر پوچھا ،کہاں سے ائے ہو؟میں نے کہا ،تھانہ بھون سے ایا ہوں ۰یہ سن کر گھبرا کر فرمایا کہ بے ادبی ہوئی،وہ میرے پیر کا وطن ہے۰اپ ائے اور میں بیٹھا رہا اپ مجھے معاف کیجئے۰

شان مسکنت:ایک طالب علم نے حضرت نانوتوی رح کی دعوت کی ۰اپ رح نے فرمایا کہ ایک شرط پر منظور ہے کہ خود کچھ مت پکانا ،گھر میں جوءتمھاری روٹیاں مقرر ہیں وہی ہمیں بھی کھلا دینا۰اس نے منظور کرلیا۰یہ ہے شان مسکنت اور غربت وانکساری اور عاجزی  کہ اتنا بڑا شحص اور اس طرح اپنے کو مٹائے ہوئے تھا۰

@Tareef1234