fbpx

کراچی میں آج سےطوفانی بارش کی پیشگوئی کا سُن کرہرشہری خوف میں مبتلا،وارننگ بھی جاری

کراچی :کراچی میں آج سےطوفانی بارش کی پیشگوئی کا سُن کرہرشہری خوف میں مبتلا،وارننگ بھی جاری ،اطلاعات کے مطابق کراچی والے ایک بارپھربارش کی اطلاعات سن کرخوف کے مارے حکومتوں کی طرف سے ہنگامی اقدامات کے منتظرہونے لگے،

ادھر محکمہ موسمیات کا کہنا ہے کہ بارش کا طاقتور سسٹم سندھ ميں پہنچ گيا، جس سے کراچی میں طوفانی بارشیں ہونگی۔ میٹ آفاس کے مطابق گلاب سمندری طوفان سندھ اور بلوچستان کی ساحلی پٹی کیلئے خطرناک ثابت ہو سکتا ہے۔

محکمہ موسمیات کا کہنا ہے کہ میٹ آفس کے مطابق ہوا کا کم دباؤ 30 ستمبر تک طوفان کی شکل اختیار کرے گا۔ ڈائريکٹرميٹ آفس سردار سرفراز کا کہنا ہے کہ طوفان میں شدت آنے کے باعث سندھ اور بلوچستان کی ساحلی پٹی میں شدید بارشیں ہوں گی۔

کراچی کے نشیبی علاقوں میں اربن فلڈنگ اور تیز ہواؤں سے اسٹرکچر کو نقصان پہنچنے کا اندیشہ ہے۔ ڈائريکٹرميٹ آفس سردار سرفراز کا کہنا ہے کہ مون سون ہوائيں زيادہ شدت سے داخل ہوں گی۔ تيز ہوائيں چليں گی۔ آندھی اور جھکڑ چل سکتے ہيں۔

ڈائريکٹرميٹ آفس سردار سرفراز کا کہنا ہے کہ بارشوں کا سلسلہ آج بروز جمعرات 30 ستمبر کی شام یا رات سے 2 اکتوبر تک جاری رہے گا۔ رپورٹ کے مطابق بھارتی گجرات میں موجود ہوا کا کم دباؤ آج تک بحیرہ عرب پہنچے گا اور شدت اختیار کرتے ہوئے ڈپریشن میں تبدیل ہونے کا امکان ہے۔

ڈائريکٹرميٹ آفس سردار سرفراز کا کہنا تھا کہ اس سسٹم کے نتیجے میں جمعرات سے ہفتے تک کراچی، حیدرآباد، ٹھٹھہ اور دیگر اضلاع میں موسلادھار بارش متوقع ہے۔ تیز بارش کی پیشگوئی کے پیش نظرکراچی، حیدرآباد، بدین ،ٹھٹھہ، میرپور خاص، ٹنڈو محمد خان، دادو اور ٹنڈو الہ یار میں اربن فلڈنگ کا خطرہ ظاہر کیا جا رہا ہے۔ پی ڈی ايم اے سندھ نےالرٹ جاری کرتے ہوئے متعلقہ اداروں کو تيار رہنے کی ہدايت کردی ہے۔ساتھ ہی موسلا دھار بارشوں سے کمزور اسٹرکچر کو نقصان پہنچ سکتا ہے۔

طوفانی بارشوں کے خطرات اورنقصانات کے پیش نظرجامعہ کراچی کی جانب سے یکم اکتوبر کو ہونے والی کلاسز ملتوی کردی گئی ہیں۔ سندھ بورڈ آف ٹیکنیکل ایجوکشن نے آج ہونے والے امتحانات ملتوی کر ديئے۔ ایسوسی ایٹ انجینیرنگ ڈپلومہ کےآج سے لے کر 2 اکتوبر تک تمام امتحانات ملتوی کیے گئے ہیں۔ امتحانات کا نیا شیڈول جاری کردیا گیا، جس کے تحت ملتوی کیے گئے امتحانات 9 ، 11 اور 12 اکتوبر کو ہونگے۔

جبکہ دوسری طرف ماہی گیروں کو بھی خبردار کردیا گیا ہےمحکمہ موسمیات نے یہ بھی خبردار کیا ہے کہ سمندری حالات خراب رہیں گے اور بہت زیادہ خراب بھی ہوسکتے ہیں۔ ماہی گیروں کو تجویز دی گئی ہے کہ 30 ستمبر سے 3 اکتوبر تک سمندر میں نہ جائیں۔ یہاں یہ بات بھی قابل ذکر ہے کہ طوفان گلاب 2021 کا تیسرا طوفان ہے جس کا نام پاکستان نے تجویز کیا تھا۔

کراچی میں طوفانی بارشوں کے امکان کے پیش نظر سندھ سالڈ ویسٹ مینجمنٹ بورڈ میں ایمرجنسی نافذ کردی گئی، عملے کو متحرک رہنے اور سڑکوں کے تمام پوائنٹس پر سینیٹری ورکرز تعینات کرنے کیلئے ٹیمیں تشکیل دینے کی بھی ہدایت کی گئی ہے۔

ادھر کراچی میں طوفانی بارشوں کے خطرات سے محفوظ رہنے کےلیے ایم ڈی زبیر چنہ کا کہنا ہے کہ بارش کے پانی اور کچرے سے متعلق شکایات کا فوری ازالہ یقینی بنایا جائے۔

انہوں نے کہا کہ شہریوں کو ریلیف فراہم کرنے کیلئے ٹیمیں متحرک رہیں گی، عوام سے اپیل ہے کہ شکایات درج کرانے کیلئے شکایتی مراکز ہیڈ آفس کے واٹس ایپ نمبر:03181030851 پر رابطہ کریں۔ اس کے علاوہ شہری اپنی شکایات (ایس ایس ڈبلیو ایم بی کمپلینٹس کراچی) اپلیکیشن ڈاؤن لوڈ کرکے بھی درج کراسکتے ہیں۔

کراچی میں ممکنہ طوفانی بارشوں کے پیشِ نظر سول ایوی ایشن اتھارٹی (سی اے اے) نے کراچی ایئر پورٹ پر الرٹ جاری کر دیا ہے۔ سول ایوی ایشن اتھارٹی کی جانب سے جاری کیئے گئے الرٹ میں کہا گیا ہے کہ چھوٹے طیاروں کو محفوظ جگہ پارک کیا جائے، کسی حادثے سے بچنے کے لیے طیاروں کے ونگز کو بھاری وزن باندھ کر پارک کیا جائے

کے علاوہ الرٹ میں یہ بھی کہا گیا ہے کہ بارش میں کیڑے مکوڑے ہونے سے پرندوں کی آمد سے جہازوں کو نقصان کا اندیشہ ہے، ایئر پورٹ پر اسپرے کرنے والا عملہ اور برڈ شوٹرز تعینات رکھے جائیں۔

واضح رہے کہ اس سے قبل کراچی میں اگست اور ستمبر میں ہونے والی بارشوں سے جمع ہونے والا پانی تاحال علاقوں سے نہ نکالا جا سکتا۔ شہر کے کئی علاقوں میں اب بھی متعدد سڑکیں کئی کئی فٹ پانی میں ڈوبی ہوئی ہیں۔

Facebook Notice for EU! You need to login to view and post FB Comments!