عمران خان کی آئی ایم ایف سے خط و کتابت،حل یا دشمنی؟

0
189
pti imf

اڈیالہ جیل میں سائفر،توشہ خانہ اور دوران عدت نکاح کیس کی سزا کاٹنے والے سابق وزیراعظم عمران خان نے ایک بار پھر آئی ایم ایف سے رجوع کیا ہے ،ایسا تیسری بار ہوا ہے کہ عمران خان نے آئی ایم ایف سے رابطہ کیا،پہلے 2014 کے دھرنے کے دوران اور پھر 2022 میں عمران خان کی حکومت کی تبدیلی کے بعد آئی ایم ایف سے پی ٹی آئی نے رجوع کیا تھا،عمران خان خان بار بار آئی ایم ایف سے اس وقت رجوع کرتے ہیں جب وہ خود کو نقصان میں محسوس کرتے ہیں،اور وہ اپنے فائدے کے لئے قوم کے مفادات کو خطرے میں ڈالتے ہیں۔

نسیم زہرہ نے پی ٹی آئی کی جانب سے خط و کتابت پر ،پاکستان کی انتخابی سیاست میں آئی ایم ایف کو گھیرنے کی کوشش پر گہری تشویش کا اظہار کیا۔ اس کا دعویٰ ہے کہ ایسا اقدام نہ صرف بے بنیاد اور غیر پیشہ ورانہ ہے بلکہ آئی ایم ایف کے مینڈیٹ سے بھی باہر ہے مزید یہ کہ، یہ پاکستان کو نمایاں طور پر نقصان پہنچا سکتا ہے، ملک کی سنگین مالی اور اقتصادی حالت کے پیش نظر فوری طور پر درکار مالی امداد میں تاخیر ہو سکتی ہے

امریکی فرموں کے ساتھ تحریک انصاف کا کام 2001 سے چل رہا ہے جب ایک امریکی لابنگ فرم، ایل جی ایس ایل ایل سی جس کی قیادت اسٹیفن پینے کر رہی تھی، 2024 میں، فرینڈز آف ڈیموکریٹک پاکستان (FDP) کے فیاض قریشی نے واشنگٹن ڈی سی میں پی ٹی آئی کی ہدایت پر مبینہ طو ر پر اسی لابنگ فرم کی خدمات حاصل کیں، یہ اقدام پاکستان کو فنڈز کو "انسانی حقوق کے مسائل” سے جوڑنے کی کوششوں کے الزامات کے درمیان سامنے آیا ہے، جو انہیں بالواسطہ طور پر پی ٹی آئی کے ایجنڈے سے جوڑتے ہیں۔قابل ذکر بات یہ ہے کہ لابنگ فرم کے ساتھ حالیہ معاہد اس وقت ہوا جب عمران خان نے امریکی حکومت کے خلاف امریکی سفارت کار ڈونلڈ لو اور جنرل باجوہ کی مبینہ سازشوں کے ذریعے اپنی حکومت کو گرانے کے الزامات لگائے۔

پاکستان کے ممتاز ماہر سیاسیات اور تجزیہ کار فرخ سلیم نے 22 فروری 2024 کو اپنی ٹویٹ میں عمران خان کی آئی ایم ایف کے ساتھ خط و کتابت کے حوالے سے کئی اہم نکات پر روشنی ڈالی ہے۔ کرنسی، اور پاکستان کی بین الاقوامی ساکھ کو ممکنہ نقصان، اس نے عمران خان کے کسی بھی قیمت پر اقتدار کے حصول کے بارے میں بھی خطرے کی گھنٹی بجائی،

عمران خان کے اقدامات سے ان کی قیادت اور پاکستان کے استحکام اور بین الاقوامی تعلقات پر اس کے اثرات کے بارے میں تشویش پائی جاتی ہے۔ اگرچہ کسی کے حقوق کی وکالت کرنا قابل ستائش ہے، عمران خان کی ذاتی اور قومی مفادات میں فرق کرنے میں ناکامی ملک کی فلاح کے لیے ایک اہم خطرہ ہے۔عمران خان کے لیے ضروری ہے کہ وہ ذاتی عزائم اور محاذ آرائی سے بالاتر ہو کر پاکستان کی بھلائی کو ترجیح دیں۔

Leave a reply